ٹرمپ کا ہار ماننے سے انکار،انتخابی نتائج کیخلاف پھر سپریم کورٹ پہنچ گئے

    ٹرمپ کا ہار ماننے سے انکار،انتخابی نتائج کیخلاف پھر سپریم کورٹ پہنچ گئے

  

  واشنگٹن (بیورو چیف) صدرٹرمپ کی ٹیم نے پنسلوینیا ریاست میں صدارتی انتخابات کے نتائج کو تبدیل کرنے کیلئے وفاقی سپریم کورٹ میں ایک نئی اپیل دائر کردی ہے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ صدر ٹرمپ منتخب صدر جوبائیڈن کی جیت کو تسلیم کرنے کیلئے ابھی تیار نہیں ہیں۔ نئی پٹیشن میں صدر ٹرمپ کی لیگل ٹیم نے وفاقی سپریم کورٹ سے استدعا کی ہے کہ وہ پنسلوینیا کی سپریم کورٹ کے تین فیصلوں کو کالعدم قرار دے جن کے نتیجے میں قانونی ضابطوں میں لچک پیدا کی گئی ہے۔ اس طرح مخالف امیدوار کو اس کے فائدہ پہنچا ہے۔ تفصیلات کے مطابق صدر ٹرمپ نے پینسلوینیا کے انتخابی نتائج کے خلاف سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کی ہے جس میں استدعا کی گئی ہے کہ ڈاک کے ذریعے ڈالے گئے ووٹوں میں بے ضابطگیاں ہیں اس لیے عدالت پینسلوینیا کی جنرل اسمبلی کو از خود ریاست کے الیکٹرز کا انتخاب کرنے کی اجازت دے۔صدر ٹرمپ کے وکیل روڈی جولیانی نے میڈیا کو بتایا کہ پٹیشن میں جو بائیڈن کے حامی الیکٹرز کی تقرری روکنے کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے علاوہ ازیں درخواست گزار نے پٹیشن کی اہمیت کو دیکھتے ہوئے 6 جنوری سے قبل سماعت کی درخواست کی ہے۔اس دوران محکمہ انصاف کے سربراہ اٹارنی جنرل ولیم بر نے ٹرمپ ٹیم کے اس مطالبے کو مسترد کردیا ہے کہ مبینہ الیکشن فراڈ یا منتخب صدر جوبائیڈن کے بیٹے ہنٹر بائیڈن کے خلاف ٹیکسوں کی ادئایگی کے حوالے سے تحقیقات کیلئے خصوصی تفتیش کار مقرر کیا جائے۔ ولیم بار نے اپنی الوداعی پریس کانفرنس میں واضح کیا ہے کہ ایسا تفتیش کار مقرر کرنے کا کوئی سبب موجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ خصوصی تفتیش کار مقرر کئے بغیر بھی اس سلسلے میں ضابطے کے مطابق صحیح تفتیش ہو رہی ہے۔

ٹرمپ پھر عدالت میں 

مزید :

صفحہ اول -