وفاقی حکومت کا قانون پر یقین نہیں، کئی سالوں سے آئین کی پامالی جاری: مرتضی وہاب 

  وفاقی حکومت کا قانون پر یقین نہیں، کئی سالوں سے آئین کی پامالی جاری: مرتضی ...

  

 کراچی(آئی این پی)مشیر سندھ حکومت مرتضی وہاب نے الزام عائد کیا ہے کہ وفاقی حکومت آئین کی پامالی کی مرتکب ہوررہی ہے اور اپنا کام نہیں کر پارہی تو صوبائی معاملات میں مداخلت کررہی ہے۔کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آئین کی دفعہ 158کے مطابق جس صوبے میں گیس دریافت ہوتی ہے اس کی ضروریات کو ترجیح دیتے ہوئے دیگر مقاصد کیلئے استعمال کیا جانا چاہیے اور کئی سالوں سے وفاقی حکومت آئینی شق کو پامال کررہی ہے۔وفاقی حکومت قانون پریقین نہیں رکھتی اور گزشتہ کئی سالوں سے آئین کی پامالی کررہی ہے۔ اس وقت سندھ کے گھریلو، صنعتی صارفین اور ٹرانسپورٹر گیس بحران کا سامنا کررہے ہیں اور صوبہ سندھ میں اس وقت گیس ناپید ہوچکی ہے۔رہنما پیپلز پارٹی نے کہا کہ پاکستان میں گیس کی یومیہ پیداوار میں سندھ کا حصہ 24سے 25سو ایم ایم سی ایف ڈی ہے اور آج کل سندھ کی ضرورت 14سے 15سو ایم ایم سی ایف ڈی ہے۔انہوں نے بتایا کہ افسوس کے ساتھ کہنا پڑ رہا ہے کہ اس وقت صوبہ سندھ کو صرف 800سے 900ایم ایم سی ایف ڈی گیس مل رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ سندھ گیس کے معاملے میں خود کفیل ہے ہم اپنی ضرورت سے کئی گنا زیادہ گیس پیدا کررہے ہیں اس کے باوجود ہمیں اپنی ضرورت کے مطابق گیس نہیں مل رہی۔مرتضی وہاب نے کہا کہ یہ اتنے نا اہل ہیں کہ موسم سرما کے دوران پورے پاکستان میں گیس کا بحران ہے کیوں کہ انہوں نے پاکستان کی 22 کروڑ عوام کو کبھی ترجیح نہیں دی، ہمیشہ اپنی حکومت اور حکومت کی اے ٹی ایمز، کابینہ میں بیٹھے مفاد پرست ٹولے کے مفادات کو ترجیح دی ہے جس کی وجہ سے آج گیس کا شدید بحران درپیش ہے،انہوں نے کہا وفاقی حکومت اپنا کام نہیں کر پارہی، گزشتہ 2 سال میں ایف بی آر کی کارکردگی مایوس کن رہی۔

مرتضٰی وہاب

مزید :

صفحہ اول -