لندن ویران ہو گیا، کورونا کی نئی اقسام کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ سے لوگوں میں خوف و ہراس، پابندیوں سے بچنے کیلئے بڑے پیمانے پر نقل مکانی، تمام یورپی ممالک کے برطانیہ سے فضائی رابطے منقطع

لندن ویران ہو گیا، کورونا کی نئی اقسام کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ سے لوگوں میں ...

  

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)برطانیہ میں کورونا کی 23 نئی اقسام زیادہ تیزی سے پھیلنے لگیں جس کے باعث اموات کی تعداد ساڑھے 67 ہزار کے قریب پہنچ گئیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق برطانیہ میں ایک ہی دن میں کورونا کے مزید 36 ہزار نئے مریض سامنے آئے جس کے بعد پچھلے اتوار کے مقابلے میں اس بار 95 فیصد زیادہ کیسز ریکارڈ کیے گئے۔کورونا کے خوف کے باعث نئی پابندیوں سے بچنے کے لیے بڑے پیمانے پر لوگ لندن چھوڑکر جارہے ہیں، پابندیوں اور کورونا کے ڈر سے لندن کی سڑکین ویران ہو گئیں لوگون کی برے پیمانے پرنقل مکانی کے باعث  ریلوے اسٹیشنوں پر مسافروں کا ہجوم لگ گیا جب کہ سڑکوں پر بھی ٹریفک جام ہوگیا۔برطانیہ کے وزیرصحت میٹ ہینکوک نے کورونا کے باعث پابندیاں مزید اگلے چند ماہ برقرار رہنے کاخدشہ ظاہر کیا۔دوسری جانب میٹ ہینکوک نیلندن سے بھاگنے والوں کو غیر ذمے دار قرار دے دیا۔دوسری طرف کورونا وائرس کی زیادہ خطرناک اور تیزی سے پھیلنے والی نئی قسم سامنے آنے کے بعد تمام یورپی ممالک ایک ایک کر کے برطانیہ پر سفری پابندیاں عائد کرتے جا رہے ہیں۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق برطانیہ کیلئے سفری پابندیاں لگانے والے ملکوں میں پولینڈ کولمبیا  اور کینیڈا اور سعودی عرب بھی شامل ہو گئے ہیں۔ارجنٹینا اور چلی، فرانس اور جرمنی پہلے ہی  برطانیہ کیلئے پروازوں کی آمدورفت معطل کرنے کا اعلان کرچکے ہیں۔ نیدرلینڈز، بیلجیم اور اٹلی کے بعد آسٹریا اور جرمنی نے برطانیہ پر سفری پابندیاں عائد کیں اور تمام پروازیں روک دیں۔دوسری طرف سعودی عرب نے کورونا وائرس کی نئی قسم کے پھیلاؤ کے ردِ عمل میں تمام بین الاقوامی مسافر پروازوں کو ایک ہفتے کے لیے معطل کردیا ہے۔مملکت میں زمینی اور سمندری راستوں سے داخلہ بھی اس عرصے کے دوران معطل رہے گا جسے مزید ایک ہفتے تک توسیع دی جاسکتی ہے۔ میڈیا  رپورٹ کے مطابق یہ فیصلے متعدد ممالک میں کورونا وائرس کی نئی قسم کے پھیلاؤ کے باعث کیے گئے جب تک وائرس کی نوعیت واضح نہ ہوجائے اور اس وقت تک شہریوں، تارکین وطن کی صحت عامہ کے تحفظ کے لیے فوری اقدامات کرتے ہوئے پابندیاں لگائی گئی ہیں۔۔نئے فیصلوں کے تحت جو فرد بھی کسی یورپی ملک سے 8 دسمبر کے بعد سعودی عرب پہنچا اسے آمد کی تاریخ سے 2 ہفتوں تک قرنطینہ میں رہنا ہوگا، اس کے علاوہ سیلف آئیسولیشن کے عرصے کے دوران ان کا کورونا ٹیسٹ کیا جائے گا جو ہر 5 روز بعد دوبارہ ہوگا۔علاوہ ازیں جو کوئی بھی گزشتہ 3 ماہ کے عرصے میں کسی زیادہ خطرے والے یا یورپی سے گزر کر سعودی عرب پہنچا اسے بھی لازماً ٹیسٹ کروانا ہوگادوسری جانب عالمی سطح عالمی وبا کے حاصل کردہ ڈیٹا کے مطابق ترکی میں عالمی وبا سے مزید 246 اموات ہونے کے بعد مرنے والوں کی مجموعی تعداد تعداد 18 ہزار 97 ہو گئی ہے۔اعدادشومار کے مطابق جرمنی میں 123، روس میں 511، ایران میں 177، برطانیہ میں 326، اٹلی میں 352، میکسیکو میں 627، بھارت میں 330، برازیل میں 11، امریکا میں مزید 712 افراد کی اموات سامنے ا? چکی ہے۔برطانیہ میں کروونا وائرس کی دوسری لہر کے پیش نظر عارضی پابندیوں کا فیصلہ عارضی پابندیاں بائیس دسمبر کی رات سے انتیس دسمبر تک ہونگی،براہ راست اور بلواسطہ برطانیہ سے آنے مسافروں تمام مسافروں پر پابندی کا اطلاق ہو گابرطانیہ میں کروونا وائرس کی دوسری لہر کے پیش نظر  پاکستان نے بھی عارضی پابندیوں کا فیصلہ کرلیا گیا۔ این سی اوسی کے مطابق عارضی پابندیاں بائیس دسمبر کی رات سے انتیس دسمبر تک ہونگی،براہ راست اور بلواسطہ برطانیہ سے آنے مسافروں تمام مسافروں پر پابندی کا اطلاق ہو گا۔ نوٹیفکیشن کے مطابق وہ مسافر جو دس روز سے برطانیہ میں ہیں ان پر بھی پابندی کا اطلاق ہو گا،پاکستان نے برطانیہ سے آنیوالی تمام پروازوں پرپابندی عائدکردی، برطانیہ سے ٹرانزٹ فلائیٹ کے زریعے آنے والے مسافروں پر پابندی کا اطلاق نہیں ہو گا،پاکستانی مسافروں جو وزٹ ویزہ پر برطانیہ میں ہیں انکو سفر سے 72 گھنٹے قبل کروونا کا ٹیسٹ کروانا لازمی ہو گا،

 لاہور، اسلام آ باد (جنرل رپورٹر،سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) کورونا وائرس سے مزید 62 افراد جاں بحق ہو نے  کے بعد اموات کی تعداد 9 ہزار 392 ہوگئی۔ پاکستان میں کورونا کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 4 لاکھ 58 ہزار 968 ہوگئی، کورونا مثبت کیسز میں کراچی پہلے نمبر پر جہاں مثبت کیسز کی شرح 13.01 فیصد ہوگئی، لاہور میں مثبت کیسز کی شرح 9.49 فیصد جبکہ میرپور میں 8.47 فیصد ہے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر کے مطابق مثبت کورونا کیسز کی آزاد کشمیر میں شرح 8.25 فیصد، بلوچستان میں 4.78 فیصد ہے۔ گلگت بلتستان میں مثبت کورونا کیسز کی شرح 1.22 فیصد ہے۔ اسلام آباد میں مثبت کورونا کیسز کی شرح 3.58 فیصد، خیبرپختونخوا میں 6.41 فیصد ریکارڈ کی گئی۔ پنجاب میں کورونا کیسز کی شرح 3.40 فیصد، سندھ میں 7.91 فیصد ہے۔ دوسری طرف نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ایک ہزار 792 نئے کیسز رپورٹ ہوئے،۔ ملک بھر میں اب تک 63 لاکھ 36 ہزار 113 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 33 ہزار 772 نئے ٹیسٹ کئے گئے، اب تک 4 لاکھ 9 ہزار 85 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ 2 ہزار 403 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ پاکستان میں کورونا سے ایک دن میں 62 افراد جاں بحق ہوئے جس کے بعد وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 9 ہزار 392 ہوگئی۔ پنجاب میں 3 ہزار 638، سندھ میں 3 ہزار 333، خیبر پختونخوا میں ایک ہزار 546، اسلام آباد میں 391، بلوچستان میں 179، گلگت بلتستان میں 99 اور آزاد کشمیر میں 206 مریض جان سے ہاتھ دھو بیٹھے۔کورونا کے حملوں سے لاہورمیں مزید 21 افراد جاں بحق ہوگئے حملوں میں بھی تیزی آگئی۔پنجاب میں کورونا وائرس کے 505نئے کیسزسامنے آئے۔ترجمان پرائمری اینڈسیکنڈری ہیلتھ کیئر لاہور309،راولپنڈی38،ڈیرہ غازی خان 2،اٹک 1،جھنگ 8،بہاولپور11اورملتان میں 4کیسزرپورٹ ہوئے۔تفصیلات کے مطابق کورونا کی دوسری لہر یں خطر ناک ثابت ہونے لگیں۔بھکر 16، ساہیوال6،وہاڑی 2،سیالکوٹ3،خوشاب 13،لیہ 3،شیخوپورہ 1اور فیصل آباد میں 18کیسز رپورٹ ہوئے۔ گجرات 24، ٹوبہ 2،حافظ ا?باد1، گوجرانوالہ8،نارووال 1،پاکپتن1اوررحیم یار خان میں 7کیسز سامنے آئے۔ لودھراں 7،خانیوال1،قصور6، جہلم 1،بہاولنگر 4،میانوالی1اور مظفرگڑھ میں 6کیسز رپورٹ ہوئے۔کورونا وائرس سے مزید 34ہلاکتیں جبکہ ابھی تک اموات کی کل تعداد3,638ہو چکی ہے۔اب تک2,299,887ٹیسٹ کیے جا چکے ہیں۔ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کورونا وائرس کو شکست دینے والوں کی تعداد119,998ہو چکی ہے دوسری طرف پاکستان مسلم لیگ(ن)کی بلوچستان سے تعلق رکھنے والی سینیٹر کلثوم پروین کورونا کے باعث انتقال کر گئیں۔ وہ گزشتہ کئی ہفتوں سے زیر علاج تھیں۔ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے مرحومہ کے اہلخانہ سے ٹیلی فون پر رابطہ کر کے اظہار تعزیت اور ان کے درجات کی بلندی کے لئے دعا کی۔ انہوں نے کہا کہ سینیٹر کلثوم پروین کے انتقال سے ایوان بالا ایک انتہائی فعال رکن اور ملک تعمیری سوچ رکھنے والی مدبر، مخلص اور محنتی سیاستدان سے محروم ہوگیا، ایوان بالا میں ان کے مثبت کردار اور عوام کے لئے ان کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا.دوسری طرف  وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کورونا وائرس کا شکار ہو گئے ہیں، ٹیسٹ پازیٹو آنے کے بعد انہوں نے خود کو گھر میں قرنطینہ کر لیا ہے۔خیال رہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کی کچھ دنوں سے طبعیت ناساز تھی۔ انہوں نے وبائی مرض کی علامات ظاہر ہونے کے بعد خود کو قرنطینہ کر لیا تھا۔ ذرائع کے مطابق اب ان کا ٹیسٹ پازیٹو آ گیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈاکٹروں نے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو مکمل آرام کا مشورہ دیا ہے۔ انھیں فلو اور بخار کی بھی شکایت ہے۔ جس کے بعد ان کا باقاعدہ کورونا ٹیسٹ بھی کروایا گیا تھا۔ طبیعت ناسازی کی وجہ سے سردار عثمان بزدار نے اپنی تمام مصروفیات ترک کر دی ہیں۔

کورونا ہلاکتیں 

مزید :

صفحہ اول -