پانی کی قلت سے بچنے کیلئے فوری طورپر ڈیم تعمیر کئے جائیں‘ابراہیم مغل

پانی کی قلت سے بچنے کیلئے فوری طورپر ڈیم تعمیر کئے جائیں‘ابراہیم مغل

  

لاہور(کامرس رپورٹر)ایگری فورم پاکستان نے مطالبہ کیا ہے کہ پاکستان پانی کی قلت سے بچنے کےلئے کالا باغ، داسو اور بونجی ڈیم فوری تعمیر کرے، صوبے فضول اعتراضات اور مخالفت بند کریں نئے ڈیم بنانا پاکستان کی اس وقت اہم ترین ضرورت ہے نئے ڈیموں سے جہاں سستی بجلی ملے گی وہاں لوڈشیڈنگ سے بھی مکمل نجات مل سکے گی ۔ایگری فورم کے چیئرمین ڈاکٹر ابراہیم مغل نے کہا کہ اس وقت فی پاکستانی کو جو 1000کیوبک میٹر پانی بھی نہیں مل رہا وہ بڑھ کر 3000کیوبک میٹر پر چلا جائیگا اس کے ساتھ ساتھ سالانہ 100 ارب روپے کی سیلابوں سے ہونے والی تباہی سے بھی بچا جاسکے گا اگر ایسانہ کیا گیا تو ہماری قوم پیاسی مر جائیگی اور ملک کی زراعت، صنعت و دیگر ادارے مکمل تباہ ہوسکتے ہیںڈاکٹر ابراہیم مغل کا کہنا تھا کہ ہمارا دشمن بھارت اپنے پانی کا 40%سالانہ بچاکر ڈیموں میں ذخیرہ کرلیتا ہے جبکہ ہم اپنے پانی کا صرف 12%ڈیموںمیں جمع کرتے ہیں یوں پانی کی قلت پاکستان کو تباہ کررہی ہے ہمیں بھی فوری طور پر نئے ڈیم بناکر 30سے40فیصد پانی محفوظ کرنا ہوگا جس کےلئے کالاباغ، داسو، بونجی ، اکھوڑی و دیگر ڈیم بنانا از حد ضروری ہیںاور ان کی تعمیرکےلئے پاکستانی جو دوسرے ممالک میں رہتے ہیں وہ 30 ارب ڈالر پاکستان میں انویسٹ کرسکتے ہیں حکومت نئے ڈیموں کی تعمیر فوری شروع کرے اور ملک کو خوراک کے قحط اور پانی و بجلی کی قلت سے بچائے۔

پانی کی قلت سے بچنے کیلئے فوری طورپر ڈیم تعمیر کئے جائیں‘ابراہیم مغل

لاہور(کامرس رپورٹر)ایگری فورم پاکستان نے مطالبہ کیا ہے کہ پاکستان پانی کی قلت سے بچنے کےلئے کالا باغ، داسو اور بونجی ڈیم فوری تعمیر کرے، صوبے فضول اعتراضات اور مخالفت بند کریں نئے ڈیم بنانا پاکستان کی اس وقت اہم ترین ضرورت ہے نئے ڈیموں سے جہاں سستی بجلی ملے گی وہاں لوڈشیڈنگ سے بھی مکمل نجات مل سکے گی ۔ایگری فورم کے چیئرمین ڈاکٹر ابراہیم مغل نے کہا کہ اس وقت فی پاکستانی کو جو 1000کیوبک میٹر پانی بھی نہیں مل رہا وہ بڑھ کر 3000کیوبک میٹر پر چلا جائیگا اس کے ساتھ ساتھ سالانہ 100 ارب روپے کی سیلابوں سے ہونے والی تباہی سے بھی بچا جاسکے گا اگر ایسانہ کیا گیا تو ہماری قوم پیاسی مر جائیگی اور ملک کی زراعت، صنعت و دیگر ادارے مکمل تباہ ہوسکتے ہیںڈاکٹر ابراہیم مغل کا کہنا تھا کہ ہمارا دشمن بھارت اپنے پانی کا 40%سالانہ بچاکر ڈیموں میں ذخیرہ کرلیتا ہے جبکہ ہم اپنے پانی کا صرف 12%ڈیموںمیں جمع کرتے ہیں یوں پانی کی قلت پاکستان کو تباہ کررہی ہے ہمیں بھی فوری طور پر نئے ڈیم بناکر 30سے40فیصد پانی محفوظ کرنا ہوگا جس کےلئے کالاباغ، داسو، بونجی ، اکھوڑی و دیگر ڈیم بنانا از حد ضروری ہیںاور ان کی تعمیرکےلئے پاکستانی جو دوسرے ممالک میں رہتے ہیں وہ 30 ارب ڈالر پاکستان میں انویسٹ کرسکتے ہیں حکومت نئے ڈیموں کی تعمیر فوری شروع کرے اور ملک کو خوراک کے قحط اور پانی و بجلی کی قلت سے بچائے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -