’پاکستانی مردوں کو اب اس کام کی عادت پڑگئی ہے، وہ 200 روپے کے کام کے لئے اب ہزاروں خرچتے ہیں کیونکہ۔۔۔‘ عرب اخبار نے ایسا راز بے نقاب کردیا جو بہت سے پاکستانیوں سے بھی پوشیدہ ہے

’پاکستانی مردوں کو اب اس کام کی عادت پڑگئی ہے، وہ 200 روپے کے کام کے لئے اب ...
’پاکستانی مردوں کو اب اس کام کی عادت پڑگئی ہے، وہ 200 روپے کے کام کے لئے اب ہزاروں خرچتے ہیں کیونکہ۔۔۔‘ عرب اخبار نے ایسا راز بے نقاب کردیا جو بہت سے پاکستانیوں سے بھی پوشیدہ ہے

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان جیسا روایتی معاشرہ جہاں مرد ڈیڑھ، دو سو روپے میں بال کٹوا کر گھر آ جاتے تھے وہاں یہ بات یقیناً حیرت کا باعث ہے کہ آج کے نوجوان اپنی آرائش و زیبائش کے لئے خصوصی مردانہ بیوٹی سیلون کا رخ کر رہے ہیں اور ایک نشست کی فیس ڈیڑھ ہزار روپے دینے میں بھی انہیں کوئی عار نہیں۔

یہ دلچسپ انکشاف عرب اخبار ’گلف نیوز‘ کی رپورٹ میں کیا گیا ہے، جس کے مطابق وفاقی دارالحکومت کے ایک مردانہ سیلون میں تو افتتاح ہوتے ہی اپنے حسن کو نکھارنے کے خواہشمند مردوں کا تانتا بندھ گیا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ صرف اسلام آباد ہی نہیں بلکہ دیگر بڑے شہروں میں بھی مردانہ آرائش و زیبائش کے مراکز خوب پھل پھول رہے ہیں۔ ان مراکز میں مردوں کو اسی طرح کی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں جس طرح کی خواتین کے روایتی بیوٹی پارلروں میں فراہم کی جاتی ہیں، حتیٰ کہ مینی کیور او رپیڈی کیور کی سہولت بھی فراہم کی جا رہی ہے۔

ماضی قریب تک تو مرد عام حجام کے پاس جاتے اور ڈیڑھ سو روپے میں بال کٹوا کر واپس آجاتے تھے مگر توثیق حیدر مینز سیلون جیسے جدید مردانہ پارلروں پر جانے والے مرد 1500روپیہ دینے میں کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہیں کرتے۔ اس سیلون کے مالک توثیق حیدر نے بتایا کہ ان کے بیوٹی سیلون پر عام نوجوان ہی نہیں بلکہ سینئر سٹیزن اور بیوروکریٹ بھی آتے ہیں، جو فیشل، مساج، مینی کیور اور پیڈی کیور جیسی خدمات حاصل کرتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /علاقائی /اسلام آباد