بی جے پی کا شہریت ترمیمی قانون مسلمانوں کیلئے خطرناک

  بی جے پی کا شہریت ترمیمی قانون مسلمانوں کیلئے خطرناک

  



نئی دہلی (این این آئی) امریکی کمیشن برائے بین الاقوامی مذاہب آزادی(یو ایس سی آئی آر ایف)نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ بھارتیہ جنتاپارٹی حکومت کی طرف سے پاس کیا جانے والے شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی مسلمانوں کیلئے خطرناک ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ شہریت ترمیمی قانون بی جے پی کے ہندو توا نظریے پرمبنی ہے جو بھارتی مسلمانوں کو بے وطن کرنے کیلئے ہے۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق نئی دہلی سے شائع ہونے والے اخبار ”ہندوستان ایکسپریس“ کی ایک خبر میں کہا گیا کہ امریکی کمیشن برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی نے صدر ٹرمپ کے دورہ بھارت سے قبل اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ بی جے پی نے بھارت کو مسلمانوں سے خالی کرانے کے اپنے خواب کو پورا کرنے کیلئے سخت قوانین وضع کیے ہیں جن کے تحت مسلمانوں کو انکے گھروں سے بے دخل کیا جائے گا۔ رپورٹ میں تشویش ظاہر کی گئی ہے کہ بی جے پی کا ہندو توا نظریہ پوری شدت سے ایک فرقے کے خلاف مسلط کیا جا رہا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ شہریت ترمیمی قانون ایک ایسا ہتھیار ہے جس کے ذریعے مسلمانوں کو ابتداء میں این آر سی سے ہٹا دیا جائے گا اور پھر سی اے اے کے جال میں میں پھانس کر انہیں بے یار و مدد گار چھوڑکر ملک سے نکال باہر کر دیا جائے گا۔ یو ایس سی آئی آر ایف کی طر ف تیار کر دہ رپورٹ میں بی جے پی رہنماؤں کے اشتعال انگیز بیانات کی نقول بھی شامل ہیں۔ یہ رپورٹ اس لیے بھی غیر معمولی اہمیت کی حامل ہے کیونکہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ چند روز بعدبھارت کے دورے پر جا رہے ہیں۔

امریکی کمیشن کی رپورٹ

مزید : صفحہ آخر