سندھ حکومت کا منافع خوروں کے خلاف کریک ڈاؤن

سندھ حکومت کا منافع خوروں کے خلاف کریک ڈاؤن

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر)سندھ حکومت نے صوبے میں منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کردیا ہے۔اس ضمن میں وزیر زراعت سندھ اسماعیل راہو نے کہا ہے کہ سندھ حکومت روزانہ کے بنیاد پر منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کارروائیاں کررہی ہے۔ صوبے میں 1589 منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزری کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی گئی۔ گزشتہ ماہ جنوری اور رواں ماہ فروری میں صوبے میں 18 لاکھ 44 ہزار دو سو روپے منافع خوروں پرجرمانہ کیا گیا۔صوبائی وزیر نے کہا کہ کراچی کے تمام اضلاع میں 94 دکانداروں پر 7 لاکھ 35 ہزارروپے جرمانہ کیا گیا۔ حیدرآباد میں ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کرکے 2 ہزار, کوٹری میں 5 ہزار اور میرپورماتھیلو میں 170 چینی اور گندم کی ذخیرہ کی گئی بوریا ں برآمد کرکے ضبط کی گئیں اور گودام سیل کیے گئے۔ جبکہ لاکھوں روپے جرمانہ اور گودام سیل کیے گئے۔ سکھر، لاڑکانہ، نوابشاہ، سانگھڑ، عمرکوٹ،تھرپارکر، ٹھٹھہ سمیت دیگر اضلاع میں بھی کارروائیاں کی گئیں۔اسماعیل راہو نے کہا کہ سندھ حکومت ہمیشہ ناجائز منافع خوروں اورذخیرہ اندوزی کے خلاف رہی ہے۔ سندھ حکومت کی طرف سے یہ کارروائیاں چلتی رہتی ہیں۔ ملک میں مہنگا ئی کرنے والے بنی گالا میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں مہنگائی کی قیامت برپا کرنے والے صوبوں کو کہتے ہیں کہ کنٹرول کریں۔سندھ حکومت نے پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کو منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کے لیے متحرک کردیا ہے۔ملک میں مہنگائی کی ذمہ دار وفاق ہے صوبائی حکو متیں نہیں,وزیراعظم کو مہنگائی کے ذمہ داروں کے خلاف ملنے والی رپورٹ میڈیا پر لانی چاہیے اور عوام کو آگاہ کرنا چاہیے کہ کون کون اس میں ملوث ہیں۔

مزید : صفحہ آخر