معیشت میں بہتری انڈے اور مرغی تقسیم کرنے سے نہیں بلکہ ۔۔۔مولانا عبد الغفور حیدری نے بھی فارمولہ دے دیا

معیشت میں بہتری انڈے اور مرغی تقسیم کرنے سے نہیں بلکہ ۔۔۔مولانا عبد الغفور ...
معیشت میں بہتری انڈے اور مرغی تقسیم کرنے سے نہیں بلکہ ۔۔۔مولانا عبد الغفور حیدری نے بھی فارمولہ دے دیا

  



سوراب (ڈیلی پاکستان آن لائن) جمعیت علمائے اسلام ف کے مرکزی سیکرٹری جنرل سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری نے کہا ہے کہ ملک پر حکمران نہیں بلکہ عجلت میں لایا گیا ناتجربہ کاروں کا ایک ٹولہ مسلط ہے، جن کی نااہلی کا خمیازہ ملک اور قوم بھگت رہی ہے،معیشت کا جنازہ نکالنے والے اب انڈے اور مرغی کے ذریعے اپنی کوتاہیوں کا ازالہ کریں گے،عوام تاریخ کی بدترین مہنگائی کا سامنا کررہی ہے جبکہ حکمران طبقہ کوحماقتوں سے فرصت نہیں، ناموس رسالتﷺ کے تحفظ اور ملک کے مفاد کے لئے میدان میں نکلے ہیں، کسی صورت پیچھے ہٹنے والے نہیں، ہماری تحریک رائیگاں نہیں جائے گی آزادی مارچ کے ثمرات بہت جلد سامنے آئیں گے، آج بھی اعلانیہ کہتے ہیں کہ اس ناجائز حکومت کو تسلیم نہیں کرتے، آرٹیکل 6 لاگو کرنے والے شوق پورا تو کرلیں پھر قوم دیکھے گی کہ آئین کو روندنے والے کون ہیں؟۔

پریس کلب سوراب کے صدرشبیراحمدلہڑی سے ٹیلیفونک گفتگو کرتے ہوئےمولانا عبدالغفور حیدری کا کہنا تھا کہ ملک پر موجودہ مسلط ٹولے سے متعلق جن خدشات کا اظہارہم نےپہلےدن کیا تھاوہ اب پوری قوم کا بیانیہ بن چکا ہے، ان کی نااہلی کی وجہ سے معیشت تباہ جبکہ ہوش ربا مہنگائی کے ہاتھوں لوگ خودکشی پر مجبور ہیں، جن کے دور میں حج جیسے مقدس فریضے کی ادائیگی ساڑھے پانچ لاکھ میں ہو جائے تو وہ کس منہ سے ملک کو ریاست مدینہ بنانے کے دعویدار ہیں؟ملک کی بدحال معیشت میں بہتری اب انڈے اور مرغی تقسیم کرنے سے نہیں بلکہ مستحکم اور سنجیدہ پالیسیوں سے آئے گی جو ان غیر سنجیدہ حکمرانوں کی بس کی بات نہیں، معاشی اعتبار سے ملک تاریخ کے بدترین دور سے گزر رہاہے، جس کی ذمہ دار موجودہ نالائق حکمرانوں کی غلط پالیسیاں ہیں،ہم پہلے دن سے یہ مطالبہ کرتے آئے ہیں کہ آئی ایم ایف کے ساتھ ہونے والے تمام معاہدے پارلیمنٹ میں لانے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ عوام کو طفل تسلی دینے والوں کے دعوؤں اور ان کی کارکردگی کی حقیقت یہ ہے کہ ناقص پالیسیوں کی بدولت صرف پچھلے سال میں 10کروڑ افراد سطح غربت سے نیچے جا چکے ہیں اور ان کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہوتا جا رہا ہے،حکومت کے غیر دانشمندانہ اور ڈنگ ٹپاؤ اقدامات کی بدولت عام آدمی کی زندگی اجیرن ہو چکی ہے، اس صورتحال میں انہیں مزید برداشت کرنا تباہی کو دعوت دینے کے مترادف ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری تحریک نہ صرف مضبوط بلکہ موثر حکمت عملی کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے، آزادی مارچ سے سلیکٹڈ حکمرانوں کی بنیادیں ہل چکی ہیں ،اب صرف گرتی ہوئی دیواروں کو ایک دھکے کی ضرورت ہے جس کا لائحہ عمل بھی طے ہوچکا ہے، قوم کواس نالائق طبقے سے نجات دلاکر دم لیں گے۔

مزید : علاقائی /بلوچستان /کوئٹہ