بھارتی کسان پھر بپھر گئے،پنجاب ہریانہ سرحد پر حالات کشید ہ،دہلی چلو مارچ دوبارہ شروع، آنسو گیس کی شیلنگ

بھارتی کسان پھر بپھر گئے،پنجاب ہریانہ سرحد پر حالات کشید ہ،دہلی چلو مارچ ...
بھارتی کسان پھر بپھر گئے،پنجاب ہریانہ سرحد پر حالات کشید ہ،دہلی چلو مارچ دوبارہ شروع، آنسو گیس کی شیلنگ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

نئی دہلی(ڈیلی پاکستان آن لائن ) بھارتی حکومت کے ساتھ معاہدہ نہ ہونے کے بعد کسان یونین کا ’دہلی چلو‘ احتجاجی مارچ آج سے دوبارہ شروع ہوگیا۔
امت نیوز کے مطابق بھارتی میڈیا رپورٹس میں بتایاگیا ہے کہ کسانوں کا احتجاجی مارچ نویں دن میں داخل ہوچکا ہے، کسان اپنے مطالبات کے لئے پنجاب ہریانہ سرحد پر ڈٹے ہوئے ہیں۔
ہریانہ پنجاب کی سرحد پر احتجاجی مظاہرہ کرنے والے کسانوں کو منتشر کرنے کی خاطر بھارتی حکومت نے ان پر آنسو گیس کے شیل فائر کئے۔کسان یونین کا کہنا ہے کہ ہم خالی ہاتھ ہیں اور خالی ہاتھ ہی مقابلہ کریں گے۔ وزیراعظم نریندر مودی کو خود اس معاملے کو حل کرنا چاہئے۔
انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت مزدوروں اور کسانوں کے خون کی پیاسی نہ بنے، اگر ہمیں مارنا ہے تو مار دیجیے لیکن کسانوں اور مزدوروں پر ظلم نہ کریں۔ ہمیں پرامن طور پر دلی مارچ کی اجازت دی جائے،کسان یونین نے اعلان کیا ہے کہ کسان اپنے ٹریکٹر اور ٹرالیوں کے ساتھ آگے بڑھیں گے۔ ہمارے کسانوں اور مزدوروں پر ظلم نہ کیا جائے۔
کسانوں کے دہلی مارچ کے پیش نظر پنجاب، ہریانہ اور ہریانہ دہلی سرحدوں پرسکیورٹی انتظامات سخت کر دیے گئے ہیں۔ کسان احتجاج کے پیش نظر ہریانہ پنجاب کی سرحد سیل کر دی گئی ہے جبکہ ہریانہ کے سات اضلاع میں انٹرنیٹ سروس پر بھی پابندی عائد کر دی گئی ہے۔