خصوصی کنٹرول روم سے پٹرول پمپوں کی مانیٹرنگ جاری ،اوور چارجنگ پر 28گرفتار

خصوصی کنٹرول روم سے پٹرول پمپوں کی مانیٹرنگ جاری ،اوور چارجنگ پر 28گرفتار

 لاہور ( جنرل رپورٹر)ڈی سی او لاہور کیپٹن(ر) محمد عثمان نے کہا ہے کہ ضلعی انتظامیہ شہر کے تمام پٹرول پمپس پر پٹرول کی سپلائی اور فروخت کو ڈی سی او آفس میں بنائے گئے کنٹرول روم سے مانیٹر کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کسی شہری کو شہر کے کسی بھی پٹرول پمپ پر اوورچارجنگ کا سامنا کرنا پڑے تو وہ ضلعی انتظامیہ کے بنائے گئے کنٹرول روم کے فون نمبر042-99214191پر اطلاع دے ضلعی انتظامیہ کا کنٹرول روم مسلسل 24گھنٹے کام کر رہا ہے انہوں نے ان خیالات کا اظہار کنٹرول روم میں مانیٹر کرنے کے طریقہ کاراور پٹرول کی سپلائی و فروخت کے حوالے سے میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کیااس موقع پر اے ڈی سی(آر) عرفان نواز میمن،ایم پی اے میاں نصیر اور دیگر افسران بھی موجود تھے ڈی سی او نے بتایا کہ کنٹرول روم میں مختلف تیل کمپنیوں کے نمائندگان 24گھنٹے موجود رہتے ہیں جو کہ ماچھیکے آئل ڈپو سے رابطہ کر کے شہر کے پٹرول پمپس پر سپلائی کو یقینی بنا رہے ہیں اسی طرح سرکاری ملازمین کو پٹرول پمپس پر تعینات کیا گیا ہے جو کہ سپلائی ہوینوالے پٹرول کی فروخت کو یقینی بنارہے ہیں۔ڈی سی او نے مزید بتایا کہ ضلعی انتظامیہ نے شہر میں کھلا پٹرول فروخت کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن کے لئے 4 سکواڈز تشکیل دئیے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ ایدھی،ریسکیو1122اور دیگر ہسپتالوں کی ایمبولینسیز کو تیل کی مسلسل فراہمی کے لیے ضلعی انتظامیہ نے شہر کے مختلف حصوں میں11پٹرول پمپس مختص کیے ہیں جہاں پر ان کو ترجیحی بنیادوں پر تیل فراہم کیا جائے گا۔دریں اثناء ڈی سی او لاہور کیپٹن (ر) محمد عثمان کی ہدایت پر گزشتہ روز پرائس کنٹرول مجسٹریٹس اور ضلعی انتظامیہ کی چھاپہ مار ٹیموں نے شہر کے مختلف علا قوں میں کھلا اور مہنگے داموں پٹرول فروخت کر نے والوں کے خلاف بھرپور کارروائی کر تے ہوئے28افراد کو گرفتار کروا دیا ۔ تفصیل کے مطابق کھلا اور مہنگے داموں پٹرول فروخت کرنے پرتحصیل (سٹی) میں10افراد،تحصیل ( کینٹ ) میں 02افراد، تحصیل (رائے ونڈمیں09افراد،تحصیل (شالیمار)میں 0 3 افراد ، تحصیل(ماڈل ٹا ؤن)میں 01شخص اور ڈی او(سول ڈیفنس )نے 03افراد کو گرفتار کروایا۔ڈی سی او لاہور کیپٹن(ر)محمد عثمان نے کہا ہے کہ شہر میں پٹرول کو بلیک کر کے گرانفروشی کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...