توہین آمیز خاکے مسلمانوں کے جذبات بھڑکانے کی سازش ہے، آل پارٹیز کانفرنس

توہین آمیز خاکے مسلمانوں کے جذبات بھڑکانے کی سازش ہے، آل پارٹیز کانفرنس

لاہور(پ ر) جماعت اسلامی لاہور کے زیراہتمام 25جنوری کو شان مصطفی ؐ ملین مارچ کے حوالے سے آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد زیرصدارت امیر جماعت اسلامی لاہور میاں مقصود ہوا جس میں سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی لیاقت بلوچ، نوید چوہدری ، پرویز ملک ، محمود الرشید ، مولانا امجد خان ، علامہ کاظم شاہ ، مولانا عبدالمالک ، مولانا عبد لرؤف فاروقی ، حافظ عبدالغفار روپڑی، مرزا ایوب بیگ ، سید محفوظ مشہدی ، سید فرحت حسین شاہ،سبٹن پشب علامہ زبیر احمد ظہیر ، امیر حمزہ ، جاویدسہوترا، منظورگیلانی، پیر محمد عثمان نوری ، مولانا مخدوم منظور،اشتیاق ایڈووکیٹ، مولانا سیف الدین سیف، ڈاکٹر منوحر چاند اور و دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔لیاقت بلوچ نے اپنے خطاب میں کہا کہ گستاخانہ خاکے بدترین دہشت گردی ہے۔ غیرمسلم عناصرتوہین رسالتؐ کے مرتکب ہوکر مسلمانوں کو بھڑکانے کی سازش کررہے ہیں۔ آقا دو جہاںؐ کی شان میں ذرہ برابر توہین برداشت نہیں کریں گے۔25جنوری بروز اتوار کو مغربی کفریہ قوتوں اور فرانس کی مذمت کی جائے گی ۔انھوں نے کہا کہ ایک مرتبہ پھر ملت کفر متحد ہوکر ناموس رسالتؐ پر حملہ آور ہوئی ہے۔ فرانس کے ’’جریدے‘‘ چارلی ایبڈو‘‘ نے ناپاک جسارت کرتے ہوئے گستاخانہ خاکے شائع کرکے مسلمانان عالم کے جذبات کو مجروح کیا ہے۔ آقائے نامدار شافع محشر کی حرمت کے خلاف اس جسارت کی جرات اس لئے ہوئی ہے کہ شاید عالم اسلام کی طرف سے انہیں کسی شدید ردعمل کی توقع نہیں تھی۔ میاں مقصود احمد نے کہا کہ ضرورت اس امر کی ہے کہ سارے مسلکی وسیاسی اختلافات بھلاکر یک جان ہوکر ناموس رسالتؐ پر مرمٹنے اور ان گستاخان رسولؐ کو سبق سکھانے کے لیے پوری امت مسلمہ سراپا احتجاج بن جائے۔ نبی مہربان سے محبت اور عقیدت کا نعرہ اس قدر بلند ہوکہ’’ورفعنا لک ذکرک‘‘ کی باز گشت بن جائے،انھوں نے کہا کہ حکومت کو توہین آمیز خاکے شائع کرنے والے ملک کے سفارت کاروں کو ملک بدر کرکے سفارت خانہ بند کردینا چاہیے۔ آزادی اظہار رائے کی آڑ میں مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کیاگیا،مسلم ممالک کے حکمرانوں نے مسلمانوں کی ترجمانی کا حق ادا نہیں کیا۔ دیگر مقررین نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ اس اہم نوعیت کے مسئلہ پر اپنا کردار ادا کرتے ہوئے فرانس کی مصنوعات کا سرکاری سطح پر بائیکاٹ کااعلان کرے اور مسلم امہ کو بھی بائیکاٹ پر قائل کریں۔انھوں نے کہا کہ اس قسم کی حرکتیں قوموں اور تہذیبوں کو تقسیم کرنے کی کوشش ہے ۔ او آئی سی اسلام فوبیا کے مجرمانہ فعل میں ملوث عناصر کے خلاف قانونی کاروائی سمیت ودیگر اقدامات کرے۔ آل پارٹیز کانفرنس میں ایک متفقہ ا علامیہ بھی منظور کیا گیا ۔ O.I.C کا اجلاس بلا کر اسلامی اتحاد کا ثبوت دیتے ہوئے جریدے کی اس قبیج حرکت کی مذمت کے ساتھ ساتھ فرانس کی حکومت پر دباؤ ڈالا جائے کہ وہ امت مسلمہ کی دل آزاری پر تمام مسلمانوں سے معافی مانگے ۔اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا جائے کہ وہ آزادی رائے کے حق کو مسلمہ اخلاقی حدود کے اندر رہتے ہوئے استعمال کا قانون بنائے اور تمام انبیائے کرام کے احترام کو لازمی قرار دے اور ان مقدس ہستیوں کی عزت و ناموس کے خلاف کسی بھی قسم کی ناپاک جسارت کو جرم قراد دیا جائے۔وزیراعظم پاکستان اس معاملے میں پہل کریں اور O.I.Cکا اجلاس طلب کر کے امت مسلمہ کی قیادت کر کے اپنی دنیا اور آخرت سنوارلیں۔ کا نفرنس نے طے کیا کہ ہم 25جنوری بروزاتوار1بجے دوپہر ناصر باغ تا اسمبلی ہال شان مصطفے ؐ ملین مارچ میں بھرپور شرکت کریں ۔

مزید : صفحہ آخر


loading...