پاکستان برائے انسانی حقوق کی جانب سے سانحہ چار سدہ کی مذمت

پاکستان برائے انسانی حقوق کی جانب سے سانحہ چار سدہ کی مذمت

  

لاہور(پ ر)پاکستان کمیشن برائے انسانی حقوق (ایچ آر سی پی) نے چارسدہ میں دہشت گردوں کے حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ دہشت گردوں کے خلاف جاری آپریشن پر نظرثانی کی جائے اور نیشنل ایکشن پلان، خاص طور پر دہشت گرد گروہوں کو تربیت اور معاونت فراہم کرنے والے مراکز اور تنظیموں کے خلاف کاروائی سے متعلق ایجنڈے پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے۔کمیشن کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم چارسدہ میں باچا خان یونیورسٹی پر دہشت گردوں کے حملے پر قوم کے غم میں برابر کے شریک ہیں اورجاں بحق ہونے والے 20 معصوم افراد کے خاندانوں سے تعزیت کا اظہار کرتے ہیں۔ اس واقعے کی کئی وجوہات کی بنا پرشدید مذمت کی جانی چاہئے پہلی یہ کہ پشاور میں آرمی پبلک اسکول پر حملے کی طرح دہشت گردوں نے ایک مرتبہ پھر طلباء کو نشانہ بنایا جو پاکستان کا مستقبل ہیں، اور اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ پاکستان کے کتنے بڑے دشمن ہیں۔ دوسری یہ کہ چند ہفتوں کے دوران یہ دہشت گردی کا تیسر ابڑا واقعہ ہے اور اس سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے کہ دہشت گرد اب بھی جہاں چاہیں آزادانہ طور پر حملہ کرسکتے ہیں اور تیسری یہ کہ اس بات کو سمجھنا چاہئے کہ یہ واقعہ اس جنگ کا تسلسل ہے جو دہشت گرد ایک جماعت کے خلاف ان کی قوم پرست، سیکولر اور انتہا پسندی مخالف پالیسیوں کی بنا پر جاری رکھے ہوئے ہیں، جس کے نتیجے میں یہ اپنے سینکڑوں کارکنوں اور حامیوں سے محروم ہوچکی ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -