گدو پاور سٹیشن کے ٹرانسفارمر میں آتشزدگی رواں ماہ بجلی کا دوسرا بڑا بریک ڈاؤن ،متعدد شہروں کی بجلی بند

گدو پاور سٹیشن کے ٹرانسفارمر میں آتشزدگی رواں ماہ بجلی کا دوسرا بڑا بریک ...

  

لاہور (کامرس رپورٹر)گدو پاور سٹیشن کے ٹرانسفارمرمیں آتشزدگی سے رواں ماہ بجلی کا دوسرا بڑا بریک ڈاؤن ، ٹرانسمیشن سسٹم مکمل بیٹھ گیا ۔ پنجا ب ، اسلام آباد اور کشمیر سمیت ملک کا 80 فیصد حصہ دوپہر کے وقت سے رات گئے تک اندھیرے میں ڈوبا رہا ،لاہور سمیت دیگر شہروں میں بجلی کی طویل بندش کے باعث معمو لات زندگی بری طرح متاثر ہوئے ۔بریک ڈاؤن کے پانچ گھنٹے کے بعد منگلا اور تربیلا کو 220کے وی کی ٹرانسمیشن لائن سے منسلک کئے جانے کے باعثرات گئے صرف چند بڑے شہروں کی بجلی بحال ہو سکی۔دوسری جانب وفاقی وزیر خواجہ آصف کی جانب سے بھی گدو میں آگ کے واقع کی انکوائری کا حکم جاری کیا گیا۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز سخت سردی کے باعث لوگوں کی جانب سے بڑے پیمانے پر بجلی کے ہیٹر کا استعمال کئے جانے سے بجلی کی پیداوار اور شارٹ فال کا فرق ایک ہزار میگا واٹ تک رہ گیا جس کے باعث این ٹی ڈی سی کی لوڈ مینجمنٹ فریکونسی آوٹ ہو گئی اور اوور لوڈنگ کے باعث دوپہر تین بجکر بیس منٹ پر گدو پاور جنریشن یونٹوں سے پیدا ہونے والے بجلی کو نیشنل سسٹم میں ڈسپیج کرنے والے گرڈ کا ٹرانسفارمر پی تھری میں آگ بھڑ ک اٹھی جس سے گدو کے تمام پاور جنریشن یونٹس بند ہو گئے ۔ گدو پاور جنریشن یونٹس بند ہونے سے تمام لوڈ دیگر پاور جنریشن یونٹوں پر آ گیا جس کے باعث چند منٹوں میں منگلا ، تربیلا ، مظفر گڑھ غازی بھروتھا ،گیسگو، چشمہ اور ائی پی پی لال پیر ٹرپ کر گئے۔ٹرانسمیشن بیٹھ جانے سے این ٹی ڈی سی حکام نے ہنگامی اجلاس طلب کر لیا ۔ گدو پاور سٹیشن میں آگ بجھانے کا کوئی انتظام نہ ہونے کے باعث جیک آباد سے فائر بریگیڈکی گاڑیاں بھیجی گئی جو ڈیڑھ گھنٹے کے بعد جائے وقوعہ پر پہنچی ۔ بریک ڈاؤن سے ملک بھر میں معمولات زندگی تقریبا ٹھپ ہو گئے ۔ صنعتی پہیہ مکمل بند ہو گیا ۔ ائیر پورٹس پر پروازوں کے شیڈول متاثر ہوئے جبکہ ہسپتالوں میں جاری آپریشن کو متبادل ذرائع سے مکمل کیا گیا،بجلی کی بندش کے باعث بیشتر مارکیٹیں سر شام ہی بند ہو گئیں ۔ بریک ڈاؤن پر وفاقی وزیر خواجہ آصف نے گدو میں لگنے والی آگ کوممکنہ دہشت گردی قراردیتے ہوئے دعوی کیا کہ آگ پر قابو پا لیا گیا ہے اور بحالی کا کام شروع کر دیا گیا ہے اور تین چار گھنٹے میں بجلی بحال کر دی جائے گی ۔این ٹی ڈی سی کے ایک عہدیدار کے مطابق حکومت نے فرنس آئل سے بجلی کی پیداوار میں سخت پالیسی اختیار کرنے کا حکم دیا ہوا ہے جس کے باعث ملک میں فرنس آئل سے بجلی کی پیداوار گنجائش کے مقابلہ میں 25 فیصد بھی نہیں ہو رہی ہے دوسری جانب گیس پر چلنے والے پاورجنریشن پلانٹس بھی بند پڑے ہیں ایل این جی کی درآمد میں تاخیر کے باعث ان پاور پلانٹس سے بھی انتہائی کم پیداوار حاصل ہو رہی ہے ۔ارسا کی جانب سے ڈیموں سے پانی کے اخراج میں کمی کے باعث ہائیڈل کی پیداوار کم ہو کر صرف سات سو میگاواٹ رہ گئی ہے ۔این ٹی ڈی سی کے ترجمان کے مطابق رات اٹھ بجے کے قریب تربیلا اور منگلا کو 220 کے وی ٹرانسمیشن لائن سے منسلک کئے جانے کے بعد اسلام آباد میں بجلی کی بحالی کا عمل شروع کردیا گیا ۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ دو دن قبل شارٹ فال میں اضافہ کے باعث نیشنل پاور کنٹرول سنٹر نے لوڈ مینجمنٹ کا کنٹرول ڈسکوز سے لے کر اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا اور براہ راست گرڈز کی لوڈ شیڈنگ کر دی تھی لیکن شارٹ فال بڑھنے سے پاور کنٹرول سنٹر کا لوڈ مینجمنٹ شیڈول بھی بریک ڈاؤن کو نہ روک سکا ۔واضح رہے 15 جنوری بروز جمعہ کو بھی ملک میں بجلی کا بڑا بریک ڈاؤن ہوا جس میں پنجاب ، خیبر پخونخواہ اور کشمیر سمیت ملک کا 70 فیصد حصہ اندھیرے میں ڈوب گیا تھا در حقیقت میں بریک ڈاؤن شارٹ فال اور پیداوار کا فرق کم رہ جانے کے باعث ہوا تھا ۔

مزید :

صفحہ اول -