چارسدہ حملے کا ایک اور زخمی چل بسا ،ملک بھر میں سوگ ،قومی پرچم سرنگوں،شہداء آبائی علاقوں میں سپرد خاک

چارسدہ حملے کا ایک اور زخمی چل بسا ،ملک بھر میں سوگ ،قومی پرچم سرنگوں،شہداء ...

  

چارسدہ /پشاور/اسلام آباد(بیورورپورٹ228 مانیٹرنگ ڈیسک 228ایجنسیاں) باچا خان یونیورسٹی پشاور پر حملے کا ایک اور زخمی دم توڑ گیا، شہداء آبائی علاقوں میں سپرد خاک،ملک بھر میں سرکاری سطح پر سوگ،قومی پرچم سرنگوں رہا، چارسدہ کے تعلیمی ادارے 31جنوری تک بند رکھنے کا اعلان ،صوبے کے باقی اضلاع میں سکول کالج کھلے رہے ،مردان اور صوابی کی یونیورسٹیاں غیر معینہ مدت کے لئے بند،پشاور میں تعلیمی اداروں کی سکیورٹی بڑھا دی گئی ،ملک بھر کے تعلیمی اداروں میں دعائیہ، تقاریب کا انعقاد،مختلف مقامات پر شہداء کی یاد میں شمعیں روش کی گئیں، سانحہ کا مقدمہ دہشتگردی کی دفعات کے تحت نامعلوم افراد کے خلاف درج ،قانون نافذ کرنے والے ادراروں کا ایک بار پھر یونیورسٹی کا دورہ مزید شواہد اکٹھے کر لئے گئے،تحقیقات شروع کر دی گئیں۔تفصیلات کے مطابق چارسدہ میں باچا خان یونیورسٹی پر حملے کا ایک اور زخمی دوم توڑ گیا جس کے بعد شہداء کی تعداد21ہوگئی ہے۔مرنے واللے محمد ایاز کا تعلق مہمند ایجنسی سے تھا جسے گزشتہ روز حملے میں زخمی ہونے کے بعد لیڈی ریڈنگ ہسپتال پشاور منتقل کیا گیا تھا۔ دوسری جانب یونیورسٹی پر حملے کی ایف آئی آر ایس ایچ او تھانہ سرڈھیری کی مدعیت میں محکمہ انسداد دہشت گردی مردان میں نامعلوم حملہ آوروں کے خلاف درج کی گئی ہے۔ایف آئی آر میں دہشت گردی، قتل، اقدام قتل، پولیس پر حملے، املاک کو نقصان پہنچانے اور اسلحہ رکھنے کی دفعات شامل کی گئی ہیں۔ ایف آئی آر میں دہشتگردوں کے یونیورسٹی میں داخلے کا وقت ساڑھے آٹھ بجے بتایا گیا ہے ۔ ادھر سانحہ کے خلاف ملک بھر میں سرکاری سطح پر سوگ منایا گیا اور اس حوالے سے پارلیمنٹ ہاؤس ، ایوان صدر اور وزیراعظم ہاؤس اور صوبائی اسمبلیوں سمیت تمام سرکاری،نیم سرکاری اور خود مختار اداروں کی عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں پر قومی پرچم سرنگوں رہا۔ اس کے علاوہ صوبائی سطح پر خیبر پختونخوا، سندھ، بلوچستان اور گلگت بلتستان میں 3 روزہ سوگ منایا جا رہا ہے جب کہ پنجاب میں ایک اور آزاد کشمیر میں 2 روزہ سوگ کا اعلان کیا گیا ہے۔سانحہ چار سدہ پر پنجاب بار کی اپیل پر صوبے بھر میں وکلا برادری نے یوم سوگ منا یا جس کے باعث اہم مقدمات کے علاوہ دیگر تمام کیسز کی سماعت ملتوی کر دی گئی ہے جب کہ کراچی میں بھی وکلا کی جانب سے عدالتی کارروائیوں کا بائیکاٹ کیا گیا ۔ ملک بھر کے تعلیمی اداروں میں سانحہ چارسدہ میں شہید ہونے والوں کی یاد میں دعائیہ تقاریب کا اہتمام بھی کیا گیا ہے۔جبکہ اسلام آباد کے نیشنل پریس کلب سمیت ملک کے مختلف علاقوں اور صحافتی اداروں میں شہداء کی یاد میں شمعیں روشن کی گئیں اور لواحقین کے ساتھ یکجہتی اور ہمدری کا اظہار کیا گیا۔جمعرات کو کراچی سے خیبر تک فضا سوگوار ہے،ہر طرف اداسی چھائی ہے،سانحہ چارسدہ پر ہرآنکھ اشک بار نظر آئی ۔خیبرپختونخوا حکومت کی ہدایت پر چارسدہ سمیت صوبہ بھر میں آج تعلیمی ادارے کھلے رکھے گئے جنکہ صوابی اور مردان میں یونیورسٹیاں غیر معینہ مدت کے لئے بند کر دی گئی ہیں ۔خیبرپختونخوا اسمبلی میں ڈپٹی پارلیمانی لیڈر اور صوبائی وزیر شوکت یوسفزئی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ خیبر پختونخوا میں آج تعلیمی ادارے کھلے رہیں گے۔ شوکت یوسف زئی نے سانحہ چارسدہ کے 3روزہ سوگ کے د وران قومی پرچم سر نگوں رہنے کا اعلان بھی کیا۔ان کا کہنا تھا کہ چارسدہ سمیت صوبہ بھر میں کہیں بھی اسکول یا کالج بند نہیں ہوں گے۔ چارسدہ میں باچا خان یونیورسٹی پر حملے کے بعد پشاور کی جامعات کی سیکیورٹی بڑھا دی گئی ہے،جبکہ صوابی اور مردان کی یونیورسٹیوں کو غیر معینہ مدت کے لیے بند کر دیا گیا۔ چارسدہ کی ضلعی انتظامیہ کے مطابق ضلعے کے تمام تعلیمی ادارے 31 جنوری تک بند رہیں گے۔

چارسدہ (بیورورپورٹ) باچا خان یونیورسٹی کے مشتعل طلباء کا وزیر اعلیٰ کی یونیورسٹی آمد پر مظاہرہ ۔وی آئی پی لوگوں کو یونیورسٹی کے اندر جانے کی اجازت مل رہی ہے جبکہ جن لوگوں نے جانوں کی قربانیاں دی ان کے لواحقین کو یونیورسٹی کے اندر نہیں جانے دیا جارہا ۔ تفصیلات کے مطابق باچا خان یونیورسٹی کے طلباء نے وزیراعلیٰ کی آمدپر یونیورسٹی کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا اور شدید نعرہ بازی کی ۔ مشتعل طلباء کا موقف تھا کہ ان کے ساتھیوں اور رشتہ داروں نے جانوں کی قربانی دی مگر ان کو یونیورسٹی نہیں داخل ہونے دیا جارہا ہے جبکہ وی وی آئی پی کو نمائشی پروٹوکول دیا جارہا ہے جو ہمارے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے ۔ بعد ازاں پولیس کے اعلیٰ حکام کی مداحلت پر مظاہرین کو اندر داخل ہونے کی اجازت دی گئی ۔ دوسری طرف سابق وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے حکومت کا مکمل ساتھ دے رہے ہیں اور پوری قوم پاک فوج کے پیچھے کھڑی ہے ۔ شہداء ہمارے بچے ہیں۔ پوری قوم یکجا ہو کر دہشت گردی کو ملیامیٹ کرنے کیلئے میدان میں نکلیں۔ وہ سانحہ با چاخان یونیورسٹی کے زحمیوں کی عیادت کے بعد چارسدہ ہسپتال میں میڈیا سے بات چیت کر رہے تھے ۔ اس موقع پر پارٹی کے صوبائی صدر حانزادہ خان اور جنرل سیکرٹری انجینئر ہمایون خان بھی موجود تھے ۔ سابق وزیر اعظم نے پولیس اور پاک فوج کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ ان کی بر وقت کاروائی سے دہشت گردوں کو زیادہ نقصان کا موقع نہیں ملا ۔ پیپلز پارٹی حکومت اور پاک فوج کا دہشت گردی کے خاتمے میں بھر پور معاونت کر رہی ہے ۔ تمام سیاسی قائدین کو اپنے اختلافات ختم کرکے دہشت گردی کے خلاف اکٹھا ہو نا ہو گاتاکہ قوم کو مثبت پیغام ملے اور قوم بھی سیاسی قیادت کے نقش قدم پر چل کر دہشت گردوں کے خلاف ایکا کرے۔

مزید :

صفحہ اول -