اینٹوں کے بھٹوں پر بچوں سے مشقت ظلم اور زیادتی ہے ہر صورت بند کراؤں گا:شہباز شریف

اینٹوں کے بھٹوں پر بچوں سے مشقت ظلم اور زیادتی ہے ہر صورت بند کراؤں گا:شہباز ...

  

لاہور(جنرل رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ اینٹوں کے بھٹوں پر بچوں سے مزدور ی کرانا ظلم اور زیادتی ہے اور میں بھٹوں پر بچوں سے مشقت کرانے کے ظلم کو ہر صورت بند کراؤں گا اور ان بچوں کو تعلیم کے زیور سے آراستہ کیا جائے گا۔ بھٹوں سے چائلڈ لیبر کے خا تمے کیلئے کوئی غفلت یا کوتاہی برداشت نہیں کروں گا۔ جہاں کوتاہی یا غفلت کی شکایت سامنے آئی تو سخت ایکشن لیا جائے گا۔ چائلڈلیبر کے خاتمے کے قانون پر عملدرآمد کے حوالے سے کوئی عذر یا بہانہ نہیں چلے گا۔سٹیرنگ کمیٹی اینٹوں کے بھٹوں سے چائلڈلیبر کے خاتمے کے حوالے سے کئے جانے والے اقدامات کا باقاعدگی سے جائزہ لے اور اینٹوں کے بھٹوں سے چائلڈ لیبر کے خاتمے کے قانون پر سختی سے عملدرآمد کرایا جائے۔وزیراعلیٰ نے انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب کو ہدایت کی کہ جن بھٹہ مالکان کے خلاف چائلڈ لیبر کے خاتمے کے قانون کی خلاف ورزی پر مقدمات درج ہو چکے ہیں انہیں 48 گھنٹوں میں گرفتار کیا جائے۔ وہ ویڈیو لنک کے ذریعے سول سیکرٹریٹ میں اینٹوں کے بھٹوں سے چائلڈ لیبر کے خاتمے کیلئے قائم سٹیرنگ کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ صوبائی وزراء رانا ثناء اللہ، راجہ اشفاق سرور، چیف سیکرٹری خضر حیات گوندل، ایڈیشنل چیف سیکرٹری، انسپکٹر جنرل پولیس، متعلقہ سیکرٹریز پنجاب سول سیکرٹریٹ جبکہ ڈویژنل کمشنرز اور ڈی سی اوز و ڈی پی اوز اپنے متعلقہ دفاتر سے ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے۔اجلاس کے دوران باچا خان یونیورسٹی، چارسدہ میں شہید ہونے والوں کے ایصال ثواب کیلئے فاتحہ خوانی کی گئی۔ سیکرٹری محنت نے چائلڈ لیبر کے خاتمے کیلئے اٹھائے جانے والے اقدامات پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ صوبہ بھر میں اینٹوں کے بھٹوں کی 760 انسپکشنز کی گئی ہیں اور چائلڈ لیبر کے خاتمے کے قانون کی خلاف ورزی پر 128 مقدمات درج کرکے 103 بھٹہ مالکان اور مینجرز کو گرفتار کیا گیا ہے۔ وزیراعلیٰ نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ [بھٹوں سے چائلڈ لیبر کا ہر صورت خاتمہ کیا جائے گا اور بچوں کو سکولوں میں داخل کرایا جائے گا اور اسی نیک مقصد کو مدنظر رکھتے ہوئے پنجاب حکومت نے بھٹوں پر کام کرنے والے بچوں کو مفت تعلیم دینے کیلئے انقلابی پیکیج دیا ہے جس کے تحت سکول جانے والے ہر بچے کو ماہانہ ایک ہزار روپے وظیفہ دینے کے ساتھ کتابیں، سٹیشنری، یونیفارم اور جوتے مفت دیئے جائیں گے۔ بچوں کے والدین کو 2 ہزار روپے وظیفہ بھی ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ کمسن بچوں سے بھٹوں پر مزدوری کرانا کسی طرح برداشت نہیں کیا جائے گا اور میں ذاتی طور پر چائلڈلیبر کے خاتمے کیلئے اٹھائے جانے والے اقدامات کی نگرانی کر رہا ہوں ۔ وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ چائلڈ لیبرکے خاتمے کیلئے موثر انداز میں مہم جاری رکھی جائے اور جس بھٹے پر چائلڈلیبر کی شکایت ملے، اسے سیل کرکے مالک کو گرفتار کیا جائے اور تمام متعلقہ محکمے باہمی کوآرڈینیشن کے تحت کام کریں۔انہو ں نے کہا کہ چائلڈ لیبر کے خاتمے کیلئے اچھا کام کرنے والے اضلاع کے افسران کی حوصلہ افزائی کی جائے گی جبکہ ناقص کارکردگی پر بازپرس ہوگی۔ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی زیرصدارت یہاں اعلیٰ سطح کا اجلاس منعقد ہوا،جس میں صوبے میں امن عامہ کی مجموعی صورتحال کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ باچا خان یونیورسٹی چارسدہ میں دہشت گردی کے واقعہ کی شدید مذمت کی گئی اورباچا خان یونیورسٹی میں دہشت گردی کے واقعہ میں شہید ہونے والوں کے ایصال ثواب کیلئے فاتحہ خوانی بھی کی گئی۔اجلاس کے شرکاء نے زخمی ہونے والے افراد کی جلد صحت یابی کیلئے دعا بھی کی۔وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت اور صوبے کے عوام کی دلی ہمدردیاں شہداء کے غمزدہ خاندانوں کے ساتھ ہیں۔انہوں نے کہاکہ ہم دکھ کی اس گھڑی میں خیبرپختونخواہ کی حکومت اور عوام کے شانہ بشانہ ہیں۔وزیراعلیٰ نے صوبے میں عوام کے جان ومال کے تحفظ کیلئے سکیورٹی انتظامات مزید سخت کرنے کی ہدایت کی۔امن عامہ کی فضاء کو مزید بہتر بنانے کیلئے ہر ممکن اقدام اٹھایا جائے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ تعلیمی اداروں کیلئے وضع کردہ سکیورٹی پلان پر سختی سے عملدر آمد کیا جائے ۔قانون نافذ کرنے والے ادارے پوری طرح چوکس رہیں ۔انہوں نے کہا کہ دشمن کے ناپاک عزائم ناکام بنانے کیلئے متعلقہ اداروں کو جانفشانی سے فرائض سرانجام دینا ہے ۔وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ مساجد،امام بارگاہوں اوردیگر عبادت گاہوں کی سکیورٹی مزید سخت کی جائے۔صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ، ایم پی اے جہانگیر خان زادہ، معاون خصوصی رانا مقبول احمد، انسپکٹر جنرل پولیس، سیکرٹری داخلہ اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اعلیٰ حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔ وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف سے صدرپاک چائنہ فرینڈشپ ایسوسی ایشن شا ؤ ژوکینگ کی سربراہی میں وفد نے ملاقات کی، جس میں باہمی دلچسپی کے امور، پاکستان اور چین کے درمیان تعلقات کے فروغ اور سرمایہ کاری بڑھانے کے حوالے سے تعاون پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ چینی وفد نے باچا خان یونیورسٹی، چارسدہ میں دہشت گردی کے واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا۔ وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ باچا خان یونیورسٹی پر حملے کی جتنی بھی مذمت کی جائے، کم ہے۔ درسگاہ پر حملہ پاکستان پر حملے کے مترادف ہے۔ انہو ں نے کہا کہ دہشت گرد پوری انسانیت کے دشمن ہیں جن کا کوئی مذہب نہیں۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں لازوال قربانیاں دی ہیں اور دہشت گردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کیلئے پوری قوم پرعزم ہے۔پاکستان اور چین کے مابین بڑھتے ہوئے تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ چین کے ساتھ پاکستان کے تعلقات نئی بلندیوں کو چھو رہے ہیں۔ چائنہ پاکستان اکنامک کوریڈور (سی پیک) کے تحت46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری چین کی اپنے بااعتماد دوست ملک پاکستان اور اس کے عوام کو مشکلات سے نکالنے کے عزم کی عکاس ہے۔ سی پیک کے تحت منصوبوں کی تکمیل سے نہ صرف پاکستان بلکہ پورے خطے کو فائدہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک کے تحت منصوبوں پر تیز رفتاری سے عملدرآمد ہو رہا ہے اورسی پیک پاکستان کیلئے ایک گیم چینجر کی حیثیت رکھتا ہے۔ چین کی جانب سے پاکستان میں 46 ارب ڈالر کی تاریخ ساز سرمایہ کاری وزیراعظم محمد نواز شریف کی قیادت میں وفاقی حکومت پر بھرپور اعتماد اور پاکستان کے عوام کے ساتھ والہانہ محبت کا اظہار ہے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال اپریل میں چین کے صدر پاکستان آئے اور دونوں ممالک کی قیادت نے سی پیک کے تحت معاہدوں پر دستخط کئے اور سال 2015 میں ان معاہدوں پر عملدرآمد شروع ہو چکا ہے۔ چینی وفد کے سربراہ نے پاکستان خصوصاً پنجاب میں سرمایہ کاری کے فروغ کے حوالے سے ہرممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی۔

مزید :

صفحہ اول -