دو سال کے دوران بھتہ خوری کے70 سے زائد مقدمات کا اندراج

دو سال کے دوران بھتہ خوری کے70 سے زائد مقدمات کا اندراج

  

لاہور(رپورٹ: محمد یونس باٹھ) صوبائی دارالحکومت میں گزشتہ دو سال کے دوران بھتہ خوری کے 70سے زائد مقدمات کا اندراج کیا گیا ہے جن میں سے صرف 17مقدمات کے ملزمان گرفتار ہوئے ہیں ۔جبکہ 53مقدمات کے نامکمل چالان عدالتوں میں بھجوائے گئے ہیں اور ان کے ملزمان کو لاپتہ قرار دیا گیا ہے ۔ پنجاب میں مجموعی طور پر 300سے زائد بھتہ خوری کے واقعات پیش آئے ہیں خفیہ رپورٹ کے مطابق اغوا برائے تاوان اور ٹارگٹ کلنگ کے ملزمان بھتہ خوری کی وارداتو ں میں ملوث ہیں اورشہر میں 4سے زائد بھتہ خوری کے گروہ سرگرم بیان کیے گئے ہیں جنہیں پولیس گرفتار کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکی ۔پولیس کی خفیہ ٹیم نے شہر میں بھتہ خوری کی بڑھتی ہوئی وارداتوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ان کے ملزمان کو فوری گرفتار کرنے کا لکھ کر بھجوایا ہے ۔ورنہ شہر میں امن و امان کی سورتحال مزید خراب ہونے کا بھی عندیہ دیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق کراچی کے بعد پنجاب میں بھی اچانک بھتہ خوری کی وارداتوں میں اضافہ ہوا ہے ذرائع نے دعوی کیا ہے کہ گزشتہ دو سالوں کے دوران پنجاب میں مجموعی طور پر 300سے زائد بھتہ خوری کے واقعات پیش آئے ہیں جن میں سے 70واقعات لاہور میں پیش آئے ان واقعات میں ملوث ملزمان کے بارے میں دعوی کیا گیا ہے کہ یہ ملزمان کالعدم تنظیموں اور دہشتگردی کی وارداتوں میں بھی ملوث ہیں بھتہ خوری سے حاصل ہونے والی رقم کے متعلق معلوم ہوا ہے کہ اسے کالعدم تنظیموں کے اکاونٹ میں جمع کروا کر اس سے دہشتگردی کی وارداتوں میں استعمال ہونے والا سامان خریدا جاتا ہے اور کالعدم تنظیموں کے دیگر معاملات بھی اس فنڈ سے چلائے جاتے ہیں ۔ایک خفیہ رپورٹ میں بیان کیا گیا ہے کہ آنے والے والے دنوں میں ان واقعات کے بڑھنے کا امکان ہے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ کراچی سے بھاگ کر پنجاب آنے والے خطرناک ملزمان یہ کارروائیاں کر رہے ہیں جبکہ ذرائع نے ان وارداتوں میں تحریک طالبان کے ملوث ہونے کی بھی نشاندہی کی ہے ۔آئی جی پولیس پنجاب کی سربراہی میں ہونے والے اجلاس میں پنجاب کے تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز کو ہدایت کی گئی تھی کہ سپیشل برانچ کی نشاندہی پر ان واردتوں میں ملوث ملزمان کو فوری گرفتار کیا جائے اور ایسے ملزمان کی فہرستیں تیار کر کے سی ٹی ڈی پولیس کو بھی بھجوائی جائیں ۔100سے زائد ملزمان جنہیں انتہائی خطرناک قرار دیا گیا اور ان کے سر کی قیمتیں بھی مقرر کی گئیں لسٹ تیار کر کے سی ٹی ڈی پولیس کو بھجوائی گئی جنہیں تاحال گرفتار نہیں کیا جا سکا ذرائع نے دعوی کیا ہے کہ یہ ملزمان بھتہ خوری کے علاوہ ٹارگٹ کلنگ کی وارداتوں میں بھی ملوث ہیں ۔آئی جی پولیس نے ان ملزمان کے بارے میں موقف اختیار کیا ہے کہ ان کی گرفتاری کا حکم دیا گیا ہے اور انہیں جلد گرفتار کر لیا جائے گا۔

مزید :

علاقائی -