جرائم میں اضافہ عوام انصاف نہ ملنے پر سراپا احتجاج

جرائم میں اضافہ عوام انصاف نہ ملنے پر سراپا احتجاج
جرائم میں اضافہ عوام انصاف نہ ملنے پر سراپا احتجاج

  

 لاہور(وقائع نگار)تھانہ باٹا پوراورپولیس چوکی واہگہ کی حدود میں جہاں جرائم کی شرح مسلسل بڑھ رہی ہے وہاں ان دونوں جگہوں پر تعینات ایس ایچ او، انچارج انویسٹی گیشن اور تفتیشی افسران کے ستائے ہوئے سائلین کو ڈی ایس پی مناواں کے دفتر سے بھی انصاف کے لئے کئی کئی ماہ تک دھکے کھانا پڑتے ہیں، جس کے باعث باٹا پور ، جلو ، رام پورہ، واہگہ ٹاؤن اور مناواں کی درجنوں آبادیوں کے رہائشی متعلقہ تھانوں کی پولیس اور مناواں سرکل پولیس کے ڈی ایس پی کی جانب سے انصاف نہ ملنے پر سراپا احتجاج بن گئے ہیں۔ اس حوالے سے ’’ پاکستان‘‘ کی ٹیم نے تھانہ باٹا پور اور چوکی واپگہ میں آنے والے سائلین کی شکایات کے حوالے سے دورہ کیا تو زیادہ تر سائلین کا کہنا تھا کہ مقدمات کے اندراج کے لئے کئی کئی روز تک تھانہ کے ایس ایچ او کے پاس چکر لگانا پڑتے ہیں اور اگر مقدمہ درج کروانے میں کامیابی حاصل کر بھی لی جائے تو انصاف کیلئے تفتیشی افسران کے پاس بھی کئی کئی ماہ چکر لگانے پڑتے ہیں۔ ایک شہری کا کہنا تھا کہ وہ ایک مقدمہ کا مدعی ہے اور ملزمان کو پکڑوانا اس کے لئے درد سر بن گیا ہے پولیس اہلکار ہر ماہ گاڑی میں پٹرول اور خرچہ پانی کے لئے تنگ کرتے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ باٹا پور کے علاقہ میں منشیات فروشی عروج پر ہے منشیات فروشی کا دھندہ کرنے والوں میں تقی پور کا رشید عرف شیدا،اتو کے اعوان کا محمد یوسف عرف لال کڑتی ،جلو پنڈ کا مشتاق مسیح اور وکی مسیح،حسین پنڈ کا فریاد بٹ،تحی پورہ کا ماکھا،چرچ درس بڑے میاں کا عباس مسیح،حافظ جو کارنر کا رانا نامی شخص،کھوجے پارک کا ساجد علی ،واہگہ پنڈ کا سلطان احمد عرف چھنڈا،صدیق پھلروان رینٹ اے کار چھاپہ کا یاسر،سیٹھ نذیر احمد اورناصر،جٹاں والاں محلہ کا صادق عرف سائیں،گراں کلاں کا شاہیا بٹ کھاراں پنڈ کا مانا کھاداں اور واڈا عطا محمد کا ملک خادم شام ہیں۔اس علاقہ میں قمار بازی کرنے والے افراد میں جلو پنڈ کا اسحاق مسیح،موضع جلوپنڈ کا نصیر جٹ اور ظفر جٹ ،بازار جج لطیف کا عرفان عرف چیتا ،گلی سیٹھی والا کا امتیاز عرف شاہ اورمنصور عرف بٹو بٹ شامل ہیں۔اس علاقہ میں قبضہ مافیا سے تعلق رکھنے والے افراد میں بھیسن پند کا شفقت عرف بگا ،ملک منیراورعارف عرف عافی بٹ مشہور ہستیاں ہیں جو کہ غریب عوام کا جینا محال کر رہے ہیں۔جبکہ پولیس اہلکاروں ان کے ساتھ مبینہ ملی بھگت کر چکے ہیں ۔اس حوالے سے تھانہ باٹا پور میں رابطہ کیا گیا تو ان کا کہناتھا کہ الزامات میں کوئی صداقت نہیں ہے ۔علاقہ میں موجود جرائم پیشہ افراد کے قلع قمع کی کوششیں کی جا رہی ہیں اور کئی افراد جو گرفتار بھی کیا گیا ہے اس حوالے سے کریک ڈاؤن جاری ہے ۔

مزید :

علاقائی -