پارلیمنٹ دو طریقوں سے ہی تحلیل ہوسکتی ہے، وزیراعظم شاہد خاقان نے بھری محفل میں راز کی بات بتا دی

پارلیمنٹ دو طریقوں سے ہی تحلیل ہوسکتی ہے، وزیراعظم شاہد خاقان نے بھری محفل ...
پارلیمنٹ دو طریقوں سے ہی تحلیل ہوسکتی ہے، وزیراعظم شاہد خاقان نے بھری محفل میں راز کی بات بتا دی

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ صوبائی اسمبلیاں توڑنے والے اپنا شوق پورا کر لیں، پارلیمنٹ دو طریقوں سے ہی تحلیل ہو سکتی ہے،ایک نوازشریف کے کہنے پر یا پھر وقت پر اسمبلی تحلیل ہو گی،عام انتخابات جولائی میں ہی ہونگے ،پارلیمنٹری رپورٹر ایسوسی ایشن سے گفتگوکرتے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ میں سازشوں پر یقین نہیں رکھتا، میری حکومت کیخلاف کوئی سازش نہیں ہو رہی ، میری حکومت میں 4 ماہ رہ گئے ہیں کسی کو سازش کرکے کیا ملناہے ،ان کا کہناتھا کہ نگران وزیراعظم کا تقرر چوری چھپے نہیں ہوگا،ماضی میں ایک نگراں وزیراعظم کیش رشوت وصول کرتا رہا،وزیراعظم آفس میں گیس کنکشن اور کلاشنکوفوں کے لائسنس بیچے گئے ،اس نگراں وزیراعظم کا 80 سال کا تجربہ تھا۔

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہناتھا کہ نوازشریف نے 5 سال میں جو کام کئے وہ 65 سالوں میں ہوئے، آئندہ الیکشن بھی نواز شریف کی تصویر ہی لڑیں گے،میری یا شہبازشریف کی تصویر لگانے سے ووٹ نہیں ملےں گے،انہوںنے کہا اگر پیپلزپارٹی زرداری کی تصویر پر ووٹ مانگے تو کیا ملے گا؟وزیراعظم نے کہاکہ نہ تو چور ہیں نہ ہی کوئی ڈاکا مارا ہے ، این او چور کرتے ہیں، پیپلزپارٹی سے کوئی این آر او نہیں کرینگے، انہوں نے کہا کہ آج سیاستدانوں کو نیب عدالتوں میں گھیسٹا جا رہا ہے ۔

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ججز کی تعیناتی کے وقت ان کا ریکارڈ چیک ہوناچاہئے ،ججز کی تعیناتی سے پوچھا جائے انہوں نے کتنا ٹیکس دیاان کا کہناتھا کہ امریکا میں چھان بین کے بغیر کبھی جج تعینات نہیں ہوتا۔

امریکا سے تعلقات کے حوالے انہوں نے کہا کہ افغانستان کا مسئلہ جنگ سے حل نہیں ہوگا،دنیا کے سامنے اپنا موقف رکھ دیا ہے اس پر کوئی شرمندگی نہیں،انہوںنے کہاکہ پاکستان کو امریکی حملے کاکوئی خطر ہ نہیں،امریکاافغانستان میں سالانہ 10 سے 12 ارب ڈالر خرچ کر رہا ہے،امریکا افغانستان میں ہمارے دفاعی بجٹ سے زیادہ رقم خرچ کر رہا ہے۔

وزیراعظم شاہد خاقان نے کہا کہ ختم نبوتﷺ قانون کی منظوری کا ن لیگ کو ذمہ دار نہ ٹھہرایا جائے،خادم رضوی کا دھرنا ختم کرانے کا فیصلہ حکومت کا تھا،انہوں نے کہا کہ موجودہ اپوزیشن صحیح کردار ادا نہیں کر رہی ۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -