ایس ایس پی مقد س میرے بیٹے کے قتل میں براہ راست ملوث ہیں:والد انتظا ر احمد کا الزام

ایس ایس پی مقد س میرے بیٹے کے قتل میں براہ راست ملوث ہیں:والد انتظا ر احمد کا ...
ایس ایس پی مقد س میرے بیٹے کے قتل میں براہ راست ملوث ہیں:والد انتظا ر احمد کا الزام

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن)ڈیفنس کراچی میں قتل ہونے والے نوجوان انتظار احمد کے والد نے ایس ایس پی مقدس حیدر کو براہ راست بیٹے کا قاتل قرار دیا،19 سالہ انتظار احمد کے والد اشتیاق احمد نے کہا کہ بیٹے کے ساتھ کار میں موجود لڑکی مدیحہ کیانی اور سلمان بھی قتل میں ملوث ہے، جس طرح تفتیش ہورہی ہے اس سے انصاف کی امید نہیں۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے ڈیفنس میں گزشتہ دنوں پیش آنے والے فائرنگ کے واقعے میں ہلاک ہونے والے نوجوان انتظار احمد کے والد نے مطالبہ کیا ہے کہ واقعے کی سی سی ٹی وی وڈیو منظرعام پر لائی جائے۔انتظار کے والد نے دعویٰ کیا ہے کہ تفتیشی ٹیم واقعے میں ملوث اہلکاروں کو بچانے کی کوشش کررہی ہے، سی سی ٹی وڈیو دکھائی گئی ہے، واقعہ ٹارگٹ کلنگ ہے۔اشتیاق احمد نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ ایس ایس پی مقدس حیدر، مدیحہ کیانی اور سلمان کو سب معلوم ہے،سلمان نے ہی انتظار کو مدیحہ کیانی سے ملوایا تھا جو انتظار کو جائے وقوعہ پر لے کر گئی۔انتظار کے والد نے الزام عائد کیا کہ مقدس حیدر کے گارڈ نے ان کے بیٹے انتظار پر سیدھی فائرنگ کی جبکہ مدیحہ کیانی کی طرف کھڑے اہلکار نے صرف ہوائی فائرنگ کی۔ڈی آئی جی ساوتھ آزاد خان نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اگر اس واقعے میں ایس ایس پی مقدس حیدر کے خلاف شواہد ملے تو ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی اور انہیں شامل تفتیش کیا جائے گا۔ ڈی آئی جی ساوتھ آزاد خان نے یہ بھی کہا کہ مدیحہ کیانی اور اس کے دوست سلمان کا بیان ریکارڈ کر لیا ہے، پولیس افسر کی بیٹی اور بھانجی ہونے کی وجہ سے انہیں کوئی رعایت نہیں دی گئی ۔

دوسری جانب مقتول کے والد کی جانب سے دشمنی کا خدشہ بھی ظاہر کیا جارہا ہے جن کا کہنا ہے کہ ان کے بیٹے کا واقعے سے 2 روز قبل دو لڑکوں فہد اور حیدر سے جھگڑا ہوا تھا، ایک لڑکا پولیس افسر اور دوسرا وکیل کا بیٹا ہے۔

خیال رہے 14 جنوری کو ڈیفنس کے علاقے خیابان اتحاد میں پولیس اہلکاروں کی فائرنگ سے 19 سالہ نوجوان انتظار احمد ہلاک ہوگیا تھا، نوجوان کے والدین نے چیف جسٹس آف پاکستان اور آرمی چیف سے انصاف کی اپیل کی تھی۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -