کورونا حملوں میں خوفناک اضافہ، 24گھنٹوں میں مزید 23افراد جاں بحق 7678نئے کیسز رپورٹ، اسلام آباد کچہری کے 15جج، 58اہلکارو ائرس میں مبتلا

    کورونا حملوں میں خوفناک اضافہ، 24گھنٹوں میں مزید 23افراد جاں بحق 7678نئے ...

  

           اسلام آباد، کراچی،لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) ملک میں کورونا کی نئی لہر میں اچانک خوفناک اضافہ ہو گیا جس سے  اموات  اور مریضو کی تعداد میں بھی اضافہ ہو گیا ۔گزشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران مزید 23 افراد جاں بحق ہو گئے۔این سی او سی کے مطابق پاکستان میں کورونا سے مجموعی اموات کی تعداد 29 ہزار 65 ہو گئی ہے جبکہ ایکٹو کیسز کی تعداد 57 ہزار 935 ہے۔۔اعداد و شمار کے مطابق سات ہزار 678 نئے مریض سامنے آئے، پاکستان میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 12 اعشاریہ نو تین ریکارڈ کی گئی۔دوسرا طرف  اسلام آباد کچہری میں 15 ججز اور 58 اہلکار کرونا وائرس کا شکار ہوگئے جس کے بعد عدالتیں بند کردی گئیں۔ عدالتوں میں اسپرے کروایا جائے گا۔ عدالتی اہلکار جس عدالت میں کام کر رہے تھے وہاں بھی اسپرے ہوگا۔ ضلع کچہری ویسٹ کورٹس میں 10 ججز اور 29 اہلکار کرونا وائرس میں مبتلا ہوچکے ہیں جبکہ ایسٹ کورٹس میں 5 ججز اور 29 اہلکار کرونا وائرس میں مبتلا ہوئے۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس طارق محمود جہانگیری کا کورونا ٹیسٹ پازیٹو آ گیا۔جمعہ کو اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس طارق محمود جہانگیری کا کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر کورٹ میں کیسز کی کاز لسٹ منسوخ کر دی گئیاسلام آباد باد ہائی کورٹ کے ایک عدالتی اہلکار کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ بھی مثبت آ گیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب کی عدالت کے ریڈر کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ بھی مثبت آیا ہے۔ اس صورتِ حال کے بعد چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ کے کورٹ روم میں ڈس انفیکشن اسپرے کرا دیا گیا۔اسلام آباد میں بڑھتے ہوئے کورونا کیسز کے باعت 24 گلیاں سیل کرنے کا فیصلہ کرلیاگیا۔ڈی سی اسلام آبادکے مطابق ضلعی انتظامیہ کی جانب سے کل رات 12 بجے مختلف سیکٹرز کی 24 گلیوں کو سیل کر دیا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ سیکٹر جی 6 فور کی گلی نمبر 52,56,59,79 اور 80،سیکٹر ایف ٹین فور کی 50،52 اور 53 ،سیکٹر ایف الیون ٹو کی گلی نمبر 21 23 اور 28 ،سیکٹر جی الیون ٹو کی گلی نمبر  15،21 اور 46 کو سیل کیا جائے گا۔ڈی سی کے مطابق سیکٹر ایف ایٹ ون کی گلی نمبر  31،35،37،38،42،44 ،سیکٹر ایف ایٹ تھری کی گلی نمبر 5،6،10،11 اور 17 کو سیل کیا جائے گا۔ضلعی انتظامیہ کے مطابق گلیوں کو سیل کرنے کا فیصلہ بڑھتے ہوئے کرونا کیسز کی روک تھام کے لیے کیا گیا۔کراچی میں بھی کورونا کیسزمیں اضافے کا سلسلہ مسلسل جاری ہے اور مثبت کیسز کی شرح بڑھ کر 50 فیصد کے قریب پہنچ گئی ہے۔محکمہ صحت کے مطابق گزشتہ روز شہر میں 6 ہزار 760 افراد کے کورونا کے ٹیسٹ کیے گئے جس میں سے 3 ہزار 149 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی۔حکام محکمہ صحت کا بتانا ہے کہ کراچی میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مثبت کیسز کی شرح 47.56 فیصد ریکارڈ کی گئی۔حیدرآباد میں بھی کورونا کے مثبت کیسز کی شرح 17.27 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔یاد رہے کہ گزشتہ روز بھی کراچی میں کورونا کے مثبت کیسز کی شرح 41 فیصد ریکارڈ کی گئی تھی۔دریں اثنانیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹرنے کورونا وائرس کے کیسز میں اضافے کے پیش نظر مساجد اور عبادت گاہوں سے متعلق نیا حکم نامہ جاری کردیا جس کے تحت مکمل ویکسینیشن لازمی قرار دے دی گئی ہے۔ اس ضمن میں جاری اعلامیہ میں کہا گیا کہ مساجد و دیگر عبادت گاہوں میں ماسک پہننا لازمی قرار دیا گیا ہے جبکہ مساجد سے کارپٹ ہٹادیے جائیں۔ این سی او سی کے مطابق صفوں اور نمازیوں کے درمیان 6 فٹ کا فاصلہ لازمی ہوگا جبکہ بزرگ اپنے گھروں میں عبادت اور نماز کو ترجیح دیں گے۔اعلامیہ کے مطابق مساجد میں دروازے اور کھڑکیاں کھلی رکھی جائیں گی اور وینٹی لیشن کا مناسب انتظام کیا جائے۔ این سی او سی نے زور دیا کہ نماز جمعہ کی ادائیگی بھی مختصر دورانیے میں کی جائے این سی او سی نے کرونا وائرس کی زیادہ شرح والے تعلیمی اداروں کو ایک ہفتے کے لیے بند کرنے کا فیصلہ کر لیا ۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر نے فیصلہ کیا ہے کہ وبا کے اثرات جاننے کے لیے اومیکرون سے متاثرہ شہروں کے تعلیمی اداروں میں کرونا ٹیسٹ کیے جائیں گے۔این سی او سی کے مطابق ڈیٹا سے ویکسینیشن لیولز اور انفیکشن ریٹ کا تعلق سامنے آیا ہے، ٹیسٹ نتائج پر تعلیمی اداروں میں اگلے 2 ہفتوں کے لیے ٹیسٹنگ شروع کی جائے گی۔صوبائی حکومتیں محکمہ صحت و تعلیم کے حکام کے ساتھ مشاورت سے تعلیمی اداروں کی بندش کا فیصلہ کریں گی، اور تمام تعلیمی اداروں میں ویکسینیشن کے لیے خصوصی مہم چلائی جائے گی۔

کورونا لہر

مزید :

صفحہ اول -