ضیا مصطفی کے ماورائے عدالت قتل پر ڈوز یئر جاری 

ضیا مصطفی کے ماورائے عدالت قتل پر ڈوز یئر جاری 

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) مقبوضہ کشمیرمیں جنگی جرائم کی تحقیقات کے حوالے سے اسلام آباد میں گول میز کانفرنس منعقد ہوئی جس میں لیگل فورم کشمیر کے مرکزی رہنماؤں نے بریفنگ دی۔گول میزکانفرنس میں ضیاء مصطفی پر ڈوزئیر کا اجراء کیا گیا۔ مقبوضہ کشمیر کے وکیل ناصر قادری ایڈوکیٹ نے بریفنگ میں بتایا کہ ضیاء مصطفی کو ماورائے عدالت قتل کیا گیا، ڈوزئیر میں 111 فرضی پولیس مقابلوں کا ذکر ہے جوسنہ 2000 سے 2021تک کیے گئے۔بریفنگ میں بتایا گیا کہ ضیاء   مصطفے غلطی سے راولا کوٹ سے مقبوضہ کشمیر میں داخل ہوا تھا، اس کی عمر صرف پندرہ سال تھی جب اسے پکڑا گیا تھا، اٹھارہ سال سے کم عمر بچے کو قانونی طور پر جیل میں قید نہیں کیا جاسکتا۔کیس ٹرائل کورٹ شپیاں میں چلا جس میں 38گواہوں کو پیش کیا گیا۔ پولیس ضیا کے خلاف کوئی بھی ثبوت پیش کرنے میں ناکام رہی، ہائی کورٹ نے بھی اپیل خارج کرکے ضیا کو معصوم قراردیا،بعد ازاں سپریم کورٹ میں تاخیر سے اپیل دائر کی گئی، اکتوبر میں سری نگر میں ضیا کو جعلی پولیس مقابلے میں شہید کردیا گیا۔

 گول میز کانفرنس

مزید :

صفحہ آخر -