سیاسی بنیادوں پر بھرتی 18گریڈ کا افسر پورٹ قاسم پر بوجھ بن گیا

  سیاسی بنیادوں پر بھرتی 18گریڈ کا افسر پورٹ قاسم پر بوجھ بن گیا

  

       کراچی(این این آئی)سیاسی بنیادوں پر پورٹ قاسم اتھارٹی میں براہ راست گریڈ 18میں تعینات ہونے والا افسر ادارے پر بوجھ بن گیا۔پیپلزپارٹی کے سابق وفاقی وزیر کے برادر نسبتی محمود ضمیر فاروقی کے منیجر پروکیورمنٹ بننے کے بعد ہر قسم کی خریداری میں کک بیکس اور کمیشن کی وصولیاں عروج پر ہیں جس کی وجہ سے پورٹ قاسم اتھارٹی کو کروڑوں روپے ماہانہ کا نقصان ہورہا ہے۔مذکورہ افسر کی سرگرمیوں کی وجہ سے ادارے میں کام کرنے والے اہل اور ایماندار افسران شدید ذہنی دبا کا شکار ہیں۔ذرائع کے مطابق کراچی کے ایک معمولی اسپتال میں نائٹ شفٹ میں کرنے والے محمود ضمیر فاروقی پیپلزپارٹی کے ایک سابق وفاقی وزیر کے قریبی رشتہ دارہونے کے باعث سابقہ پی پی دور میں وزیراعظم سیکرٹریٹ سے براہ راست گریڈ 18میں پورٹ قاسم جیسے اہم اور حساس ادارے میں بھرتی ہوئے۔محمود ضمیر فاروقی کی تعیناتی میں تمام ضابطوں کو بالائے طاق رکھا گیا۔ذرائع نے بتایا کہ مذکورہ  افسرکی تعلیم اور تجربہ کی اسناد تصدیق کے لیے متعلقہ اداروں کو لکھے جانے والے خطوط کے اب تک جوابات موصول نہیں ہوئے ہیں مگر وہ پورٹ قاسم اتھارٹی میں سونے کے چمچے سے نوالے کھارہے ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ محمود ضمیر فاروقی نے پورٹ قاسم اتھارٹی میں تعینات ہونے کے بعد اپنے اثر و رسوخ کو استعمال کرتے ہوئے انتظامیہ کو دبا میں لاتے ہوئے ادارے سے اپنے والد کی بیماری کے نام پر غیر قانونی طور پر 45لاکھ روپے بھی وصول کیے جس کے وہ اہل نہیں تھے جبکہ وہ پرائیویٹ گاڑیوں پر جعلی سرکاری نمبر پلیٹس لگاکر اپنی طاقت کا مظاہرہ کرتے ہوئے نظرآتے ہیں۔ محمود ضمیر فاروقی کی 3سال کے لیے نیکٹا میں تعیناتی ہوئی تھی لیکن نیکٹا نے ان کو ادارے کے لیے بوجھ قرار دیتے ہوئے واپس پورٹ قاسم اتھارٹی میں واپس بھجوادیا تھا۔ذرائع کے مطابق محمود ضمیر فاروقی کے پورٹ قاسم اتھارٹی کے اسٹور ڈپارٹمنٹ میں منیجر پروکیورمنٹ کی پوسٹ پر فائز ہونے کے بعد ہر قسم کی خریداری پر ککس بیکس اور کمیشن کی وصولیاں عروج پر ہیں اور غیر معیاری خریداری کے نتیجے میں ادارے کو کروڑوں روپے نقصان ہورہا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ محمود ضمیر فاروقی کی سرگرمیوں کی وجہ سے ادارے کے اہل اور ایماندار افسران سخت ذہنی دبا کا شکار ہیں۔ ان افسران کا کہنا ہے کہ منیجر پروکیورمنٹ کی کرپشن اور غیرقانونی تقرری کے حوالے سے وزیراعظم عمران خان اور وفاقی وزیر بحری امور علی حیدر زیدی کو بھی تحریری شکایات ارسال کی گئی ہیں لیکن وہ اپنے اثر و رسوخ کی وجہ سے آج بھی اپنے عہدے پر تعینات ہیں۔ہماری اپیل ہے کہ وفاقی وزارت بحری امور ایک اعلی انکوائری کمیٹی تشکیل دے جو محمود ضمیر فاروقی کے توسط سے جاری ہونے والے اشتہارات،تحریری ٹیسٹ اور انٹرویو سمیت براہ راست تقرری کے طریقہ کار کا آڈٹ کرے اور ان کی تعلیمی اور تجربے کے اسناد کی تصدیق کرانے کے ساتھ محمود ضمیر فاروقی کے اثاثہ جات کی جانچ پڑتال کی جائے 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -