متروکہ وقف املاک میں بد عنوانیوں کیخلاف ایف آئی اے میں کھاتے کھل گئے: عتیق میر

      متروکہ وقف املاک میں بد عنوانیوں کیخلاف ایف آئی اے میں کھاتے کھل گئے: ...

  

      کراچی (این این آئی) متروکہ وقف املاک میں سنگین بدعنوانیوں کے خلاف ایف آئی اے میں کھاتے کھل گئے، وقف میں بے ضابطگیوں کی بڑے پیمانے پر شکایات کے بعد اکاؤنٹنٹ جنرل آف پاکستان نے ایف آئی اے کو ٹاسک دے دیا،زمینوں اور جائدادوں کے معاملات میں بدعنوانیاں ثابت ہونے پر افسران اور عملے کے خلاف کارروائی ہوگی، روزانہ کی بنیاد پرکھاتوں کی جانچ پڑتال اور عملے کی حاضریوں کا سلسلہ جاری ہے یہ بات آل کراچی تاجر اتحاد کے چیئرمین اور انجمن کرائے داران متروکہ وقف املاک پاکستان کے صدر عتیق میر نے ایک وفد کے ہمراہ ڈائریکٹر ایف آئی اے عامر فاروقی سے ملاقات کے بعد پریس و میڈیا پر 

جاری کیئے گئے ایک بیان میں کہی، انھوں نے اعلان کیا کہ کرائے داران متروکہ وقف املاک کے عملے اور افسران کی ذیادتیوں اور ناانصافیوں کے خلاف آرام باغ فرنیچر مارکیٹ میں ایک شکایتی سیل قائم کیا گیا ہے جہاں وقف کے کرائے داران اپنے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں اور ذیادتیوں کی شکایات ثبوت کے ساتھ جمع کرواسکتے ہیں، انھوں نے کہا کہ رشوت خوری، غیرقانونی طور پر منتقل اور تعمیر کی گئیں جائدادوں اور غلط دستاویزات کی تفصیلات بھی جمع کی جائینگی، یہ شکایات ایف آئی اے کے دفتر میں جمع کروائی جائینگی، انھوں نے کہا کہ ملک بھر کے کرائے داران متروکہ وقف املاک ایک پلیٹ فارم پر جمع ہوچکے ہیں اورکسی بھی غیرمنصفانہ اور من مانے قانون کے خلاف بھرپور طاقت کے مظاہرے کیلئے تیار ہیں، انھوں نے کہا کہ ظلم اور ذیادتی پر مبنی ہر کالے قانون کے خلاف کرائے فاران کے جائز حقوق کا دفاع کیا جائیگا، ڈائریکٹر ایف آئی اے عامر فاروقی نے وفد میں شامل عتیق میر، انجم موسانی اور فرحان سعید کو بتایا کہ متروکہ وقف املاک کی جائدادوں کے واجبات کی عدم وصولی، فنڈز میں خورد برد اور زمینوں اور جائدادوں کی منتقلی کے تحت گھپلوں کے تحت ملک بھر میں تحقیقات شروع کردی گئی ہیں، روزانہ کی بنیاد پر عملے و افسران سے تفتیش اور کھاتوں کی جانچ پڑتال کی جارہی ہے، انھوں نے کہا کہ کرائے داران سے واجبات کی وصولی اور فنڈز کے معاملات کے علاوہ ایف آئی اے کا وقف کے کسی بھی ضابطے اور قانون سے کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی کسی قانون کے اطلاق کیلئے ایف آئی کا عملہ وقف پر دباؤ ڈالے گا، انھوں نے کہا کہ سخت اور شفاف تحقیقات کے نتیجے میں بدعنوانیوں کے سنگین معاملات سامنے آنے کی توقع ہے جس کیلئے کرائے داران کی جانب سے پیش کردہ دستاویزی ثبوت اور شہادتیں ایف آئی اے کی تفتیشی ٹیم کیلئے معاون و مددگار ثابت ہوسکتی ہیں۔    

مزید :

پشاورصفحہ آخر -