ن لیگ کا’’ خیبربینک سکینڈل ‘‘ ہائی کورٹ لیجانے کا اعلان

ن لیگ کا’’ خیبربینک سکینڈل ‘‘ ہائی کورٹ لیجانے کا اعلان
ن لیگ کا’’ خیبربینک سکینڈل ‘‘ ہائی کورٹ لیجانے کا اعلان

  

پشاور(ویب ڈیسک) پاکستان مسلم لیگ ن نے’’ بینک آف خیبر میگا سکینڈل‘‘ ہائی کورٹ لے جانے کا فیصلہ کرتے ہوئے ریکارڈ جمع کرکے رٹ پٹیشن کی تیاری شروع کردی ہے اور موقف اپنایا ہے کہ معاملہ کی تحقیقات کیلئے صوبائی حکومت کی قائم کردہ کمیٹی ’’ فراڈ‘‘ ہے ، نیب اور احتساب کمیشن نے بھی کرپشن سکینڈل کا نوٹس نہیں لیا ہے، صوبائی حکومت وزیر خزانہ کو بچانے کیلئے معاملہ پر خاموشی اختیار کی ہے مگر ہم خاموش نہیں رہیں گے اور عدالت کے ذریعے تحقیقات کرائیں گے۔

روزنامہ جنگ کے مطابق  خیبر پختونخوا حکومت نے صوبائی اسمبلی کے مطالبہ پر بینک آف خیبر سکینڈل کی دوبارہ انکوائری کیلئے وزیر اعلیٰ پرویز خٹک کی سربراہی میں پارلیمانی کمیٹی قائم کی ہے جس میں اپوزیشن جماعتوں کے پارلیمانی قائدین بھی شامل ہیں جبکہ صوبائی حکومت نے پارلیمانی کمیٹی کے دائرہ کار کا تعین کرتے ہوئے نہ صرف مبینہ کرپشن بلکہ بینک کے ایم ڈی کی تعیناتی، پنجاب کی کمپنیوں کو بھاری قرضوں کے اجرا، بھرتیوں، بینک کا انتظام محکمہ خزانہ کی بجائے سی اینڈ ڈبلیو کے ذریعے چلانے اور تحریک انصاف کے رہنما کو بینک کے بورڈ آف گورنرز میں شامل کرنے کے معاملات کی تحقیقات کا بھی اختیار دیا ہے، پارلیمانی کمیٹی کے قیام کے موقع پر سپیکر نے سکینڈل کے تمام پہلوؤں کی انکوائری کرکے رپورٹ پندرہ دنوں میں پیش کرنے کی ہدایت کی تھی تاہم پندرہ دن کی بجائے 45دن گزرنے کے باوجود ذمہ داروں کا تعین تو دور تحقیقات کا آغاز اور پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس تک طلب نہیں کیا جاسکا ہے، مسلم لیگ ن نے پہلے ہی پارلیمانی کمیٹی پر عدم اعتماد کا اظہار کرتے ہوئےدستبردار ی کا اعلان کیا تھا جبکہ اب معاملہ پشاور ہائی کورٹ میں لے جانے کا فیصلہ کیا ہے۔

 مسلم لیگ ن کے پارلیمانی لیڈر سردار اورنگزیب نلوٹھا نے تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ بینک آف خیبر سکینڈل کا ریکارڈ جمع کیا جارہا ہے جس کے بعد پشاور ہائی کورٹ میں رٹ پٹیشن دائر کی جائیگی کیونکہ صوبائی حکومت کرپشن سکینڈل کی تحقیقات میں سنجیدہ نہیں بلکہ مبینہ کرپشن میں ملوث وزیر خزانہ کو بچا رہی ہے جبکہ نیب اور احتساب کمیشن نے بھی صوبہ کی تاریخ کے بڑے سکینڈل کا تاحال نوٹس لیا ہے اسلئےعدالت کے ذریعے صوبہ کے عوام کو انصاف دلائیں گے، انہوں نے کہاکہ سراج الحق کو شرم آنی چاہیے جو وفاقی وزیر اسحاق ڈار کے بارے میں توکہتے ہیں کہ وزیر خزانہ کو صادق اور امین ہونا چاہیے مگر انہیں اپنے وزیر خزانہ کی کرپشن نظر نہیں آرہی۔

مزید : پشاور