بینکوں کے سرکاری عازمین حج کو رقوم کی واپسی کیلئے تاخیری حربے

      بینکوں کے سرکاری عازمین حج کو رقوم کی واپسی کیلئے تاخیری حربے

  

لاہور(ڈویلپمنٹ سیل) سرکاری حج سکیم 2020ء کی قرعہ اندازی میں کامیاب ہونیوالوں کو رقوم کی واپسی کا عمل مکمل نہ ہو سکا۔ حج منسوخ ہونے کی وجہ سے حج سے محروم رہ جانیوالے رنجیدہ عازمین کو بنکوں نے فٹ بال بنا دیا ہے کسی کو اکاؤنٹ کھولنے کی شرط پر رقوم واپس کی جارہی ہے کسی کو رقم نہ نکلوانے کی شرط پر اگلے سال بغیر قرعہ اندازی کے حج کرانے کی خوشخبری دے کر رقم واپس نہیں دی جارہی۔ حالانکہ وزارت مذہبی امور تمام بنکوں کو ہر صورت 28جولائی 2020ء تک رقم واپس کرنے کی ڈیڈ لائن دے چکے ہیں۔ وزارت مذہبی امور واضع کر چکی ہے رقم نہ نکلوانے والوں کیلئے کوئی خوشخبر ی نہیں ہے۔ اگلے سال کا فیصلہ اگلی حج پالیسی کے مطابق ہو گا اس لیے حج 2020ء کیلئے درخواستیں جمع کرانیوالے تمام عازمین اپنی اپنی رقوم واپس لے لیں۔ اس سال قرعہ اندازی میں ایک لاکھ 5ہزار عازمین کو کامیاب قرار دیا گیا تھا۔ سرکاری سکیم کے عازمین کے 50ارب سے زائد پیسے مارچ سے بنکوں کے پاس ہیں بنک وزارت مذہبی امور کے واضع احکامات کے بجائے ابھی تک عازمین مختلف بہانہ بازی سے چکر لگوا رہے ہیں۔

تاخیری حربے

مزید :

صفحہ آخر -