"صدر بن گیا تو پہلے روز مسلمانوں پرپابندی۔۔۔" امریکی صدارتی امیدوار نے واضح اعلان کردیا

"صدر بن گیا تو پہلے روز مسلمانوں پرپابندی۔۔۔" امریکی صدارتی امیدوار نے واضح ...

  

واشنگٹن(ڈیلی پاکستان آن لائن) امریکی صدارتی امیدوار جوبائیڈن نے اعلان کیا ہے کہ اگر وہ امریکہ کے صدر منتخب ہوگئے تو  پہلے روز ہی مسلمانوں پر عائدپابندیوں کاخاتمہ کریں گے۔

ڈان اخبار کے مطابق جوبائیڈن نے کہا کہ وہ مسلمان ممالک پر عائد کی گئی صدر ٹرمپ کی پابندیوں کا خاتمہ صدربننے کے پہلے روز ہی کردیں گے۔ انہوں نے کہا وہ ان پابندیوں کے باعث مسلمانوں کو ہونے والے نقصان کا ازالہ کریں گے۔

مسلم امیریکن ایکشن اینڈ ایڈووکیسی گروپ سے خطاب کرتے ہوئے جوبائیڈن نے کہا کہ صدر ٹرمپ کے عتاب کا سب سے پہلے مسلمان نشانہ بنے، ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی تقاریر، پالیسیوں  اور تعیناتیوں کے ذریعے اس ملک میں نفرت کو ہوا دی ہے لیکن میں منتخب ہوا تو مسلمانوں پر عائد پابندیوں کو ختم کردوں گا۔

واضح رہے کہ جنوری 2017 میں ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے عہدہ سنبھالنے کے پہلے ماہ کے دوران سات مسلم اکثریتی ممالک کے سفر پر پابندی عائد کی تھی۔

اس پابندی کو عدالتوں میں چیلنج کیا گیا تھا اور اس میں چند غیر مسلم ممالک جیسے شمالی کوریا اور وینزویلا کو بھی فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔

مختلف عدالتوں کے بعد بالآخر امریکی سپریم کورٹ نے اس حکم کو برقرار رکھا تھا۔

امریکی میڈیا نے اس حکم کو 'مسلمانوں پر پابندی' قرار دیا تھا کیونکہ ڈونلڈ ٹرمپ نے پہلے بھی عارضی طور پر مسلمانوں کو امریکا میں داخلے پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

تنظیم کے سامنے اپنی تقریر میں جو بائیڈن نے ڈونلڈ ٹرمپ پر الزامات عائد کیے کہ وہ نفرت کے شعلوں کو جاری رکھے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے اسکولوں میں بچوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے اور نفرت انگیز جرائم میں اضافہ سامنے آیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 'اس ٹرمپ انتظامیہ کے تحت ہم نے اسلامو فوبیا میں غیر معمولی اضافہ دیکھا ہے۔'

جو بائیڈن نے ڈونلڈ ٹرمپ پر یہ بھی الزام لگایا کہ وہ محکمہ دفاع اور امریکی ادارہ برائے بین الاقوامی ترقی (یو ایس ایڈ) میں اہم عہدوں پر اسلاموفوبیا پھیلانے والوں کی تقرری کی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -