سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اس ادارے کے باقی رہنے کا کوئی جواز نہیں ، فورا بند کیاجائے، بلاول پھٹ پڑے

سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اس ادارے کے باقی رہنے کا کوئی جواز نہیں ، فورا بند ...
سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اس ادارے کے باقی رہنے کا کوئی جواز نہیں ، فورا بند کیاجائے، بلاول پھٹ پڑے

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا ہے کہ  سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعدسیاسی انجینرنگ کے لیے استعمال ہونے والے ادارے نیب کے باقی رہنے کا کوئی جواز نہیں ، فورا بند کیاجائے۔

لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول نے کہا کہ سپریم کورٹ کےفیصلے کےبعدنیب کےرہنےکا کوئی جوازنہیں ہے۔عدالتی فیصلےمیں واضح ہےنیب سیاسی انجینئرنگ کیلئےاستعمال ہوتاہے۔ نیب کوصرف اپوزیشن کیلئےاستعمال کیاجارہاہے،نیب کو تالالگائیں اورغیرآئینی ادارےکوبند کریں۔پہلےصرف ہم کہتے تھےاب عدلیہ نےبھی کہہ دیا۔

بلاول بھٹوزرداری نےچیئرمین نیب سےاستعفےکا بھی مطالبہ کردیا، انہوں نے کہا چیئرمین نیب میں شرم و حیا ہے تو استعفیٰ دے کر گھر جائیں۔

بلاول نے کہاٹرانسپرنسی انٹرنیشنل نےکہا یہ کرپٹ ترین حکومت ہے،ہم توکہتےرہےہیں پنجاب میں کرپشن اورجادوہورہا ہے، عمران خان کاکچن چلانےکیلئے کرپشن کی جارہی ہے، حکومت کی میگااسکیمزپرنیب ایکشن نہیں لےرہا.

انہوں نے کہا،فیس نہیں کیس دیکھنےوالامذاق بندکریں، نیب کوختم کرنےکیلئےتمام اسٹیک ہولڈرزکواکٹھاہوناچاہیے۔

انہوں نے کہا کہ کیا ہمارا موقف آج درست ثابت نہیں ہوگیا، ہم اس معاملے کو یہاں نہیں چھوڑ سکتے، پارلیمان اور جمہوری جماعتوں کو اس پر فوری ایکشن لینا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ جب ایسے شخص سے کام لیا جائے گا جو پوچھتا تھا کہ کورونا کیسے کاٹتا ہے تو یہی حال ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب کے پاس وسائل موجود تھے کہ وہ دوسروں صوبوں کے مقابلے وبا سے بہتر طور پر نمٹ سکتا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ پنجاب کی ٹیم نالائق، نااہل ہے, انہوں نے کہا سندھ فرنٹ لائن ورکرز کو رسک الاؤنس دے سکتا ہے تو باقی صوبے کیوں نہیں کرسکتے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے ہر پاکستانی کی زندگی، صحت اور معاشی حالات کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ جو لوگ انہیں پاکستان کو صاف اور شفاف بنانے کے لیے لائے تھے تو کیا پاکستان صاف و شفاف ہوگیا۔

چیئرمین پی پی پی نے کہا پنجاب میں بدعنوانی ہورہی ہے اور بی آرٹی، مالم جبہ میں ہونے والی کرپشن کا بھی جواب دینے کے لیے تیار نہیں۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -