امریکی پر اسرار آواز سے پریشان

امریکی پر اسرار آواز سے پریشان
امریکی پر اسرار آواز سے پریشان

  


بوسٹن (نیوز ڈیسک) جیسے جیسے انسان ترقی کرتا جارہا ہے اس کے مسائل بھی پیچیدہ ہوتے جارہے ہیں۔ دنیا کے کئی حصوں میں خصوصاً امریکہ  میں ایک ایسی مدھم آواز کا انکشاف ہوا ہے جو لوگوں کے کانوں میں مسلسل گونجتی رہتی ہے اور ان پر پاگل پن کی کیفیت طاری کررہی ہے۔ سائنسی تحقیق نے یہ بھی ثابت کردیا ہے کہ یہ پراسرار آواز کچھ لوگوں کا وہم نہیں ہے بلکہ یہ واقعی ایک حقیقت ہے اور ایسے لوگ بھی اس کا شکار بن چکے ہیں جو خود سائنسدان ہیں۔ انہی لوگوں میں سے ایک برٹش کولمبیا یونیورسٹی کا لیکچرر گلین میکنوسن ہے۔ گلین کا کہنا ہے کہ اسے 2012ءمیں پہلی دفعہ یہ آواز سنائی دینا شروع کی۔ اس نے اس کے مآخذ کا پتہ چلانے کیلئے ہر طرح کی کوشش کی مثلاً گھر میں سب آلات بند کئے، گھر کی بجلی بند کرکے دیکھی اور آس پاس کے علاقے میں بھی مکمل تحقیق کی لیکن کوئی ایسی چیز نہیں ملی جس سے یہ آواز خارج ہوتی ہو۔ اس کا کہنا ہے کہ یہ مدھم آواز مسلسل آتی رہتی ہے اور اس کا سونا، آرام کرنا اور سوچنا سمجھنا مفلوج کردیتی ہے۔ اس آواز کے شکار ایک اور شخص نے بتایا کہ اس کی زندگی کا سکون تباہ ہوگیا ہے اور وہ دماغ کو پرسکون رکھنے کیلئے ادویات کے استعمال پر مجبور ہوگیا ہے۔ ماہرین نے 40 سل کی تحقیق کے بعد یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ یہ مدھم شور تین سے 30 کلو ہرٹز کی مدھم فریکوئنسی کی ریڈیائی لہروں سے پیدا ہوتا ہے جو کہ عمارتوں میں گزرسکتی ہیں اور ہزاروں کلومیٹر کا سفر طے کرسکتی ہیں لیکن ان کے مآخذ کا پتہ نہیں لگایا جاسکا۔ ان لہروں کے بارے میں ایک پراسرار بات یہ بھی ہے کہ کبھی کبھار یہ کئی ہفتوں یا مہینوں کیلئے غائب بھی ہوجاتی ہیں اور پھر دوبارہ ظاہر ہوجاتی ہیں۔ یہ آوازیں امریکہ کے بیشتر شہروں میں سنی گئی ہیں.

آواز سنیے

مزید : تفریح


loading...