حمزہ شہباز کے بوٹ پالش نہیں کر سکتا ، زعیم قادری کا این اے 133سے آزاد حیثیت سے الیکشن لڑنے کا اعلان

حمزہ شہباز کے بوٹ پالش نہیں کر سکتا ، زعیم قادری کا این اے 133سے آزاد حیثیت سے ...

  

لاہور( جنرل رپورٹر) مسلم لیگ( ن) کے سابق صوبائی وزیر زعیم حسین قادری نے این اے 133سے آزاد حیثیت سے الیکشن لڑنے کا اعلان کرتے ہوئے پارٹی کے خلاف علم بغاوت بلند کردیا ہے اور کہا ہے کہ لاہور حمزہ شہباز شریف اور اس کے باپ کی جاگیر نہیں ہے میں سید ہوں حمزہ شہباز کے بوٹ پالش نہیں کر سکتا۔کئی مالش کرنے والے آج نے کے آگے پیچھے گھوم رہے ہیں۔حمزہ شہباز اپنے مالشیوں کا یونٹ لے کر آئیں میں ان کا مقابلہ کرنے کیلئے تیار ہوں،ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے آفس میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے مزید کہا میری تین نسلیں مسلم لیگ کے ساتھ کام کرتی رہی ہیں۔میرے والد نے ایواب خان اور یحیٰ خان کی آمریت کے دور میں بھی مسلم لیگ کو نہیں چھوڑا ،میں نے پانچ سال تک جیل کاٹی اور آٹھ سال میاں نواز شریف کا ترجمان رہا ہوں۔2002کے الیکشن میں کلثوم نواز اور میاں نواز شریف کا کورنگ امیدوار بھی رہا ہوں۔لیکن افسوس ہے کہ جن لوگوں کو انہوں نے وزارتیں دی وہ آج ان کو چھوڑ چکے ہیں۔میں سید ہوں کسی کیخلاف بات نہیں کرو گا اگر کسی نے میرے خلاف بات کی تو اس کا بہت برا جواب دوں گا۔اپنی عزت اور وقار بھی سمجھوتہ نہیں کر سکتا۔انہوں نے مزید کہا مجھے کہا گیا کہ آپ کے پاس الیکشن لڑنے کے پیسے نہیں ہیں آپ کو ٹکٹ نہیں مل سکتا ۔میرے صبر کا پیمانہ اب لبریز ہو چکا تھا ۔میں حمزہ شہباز کی نوکری نہیں سکتا میں اپنے کارکنوں کا نوکر ہوں۔اکیلا سڑک پر چل سکتا اور میرے پیچھے کارواں بن جائے گا۔زعیم قادری کا کہنا تھا کہ 12 اکتوبر 1989 کو مسلم لیگ ن کو جوائن کیا تھا۔ مسلم لیگ میرے خون میں ہے اور رہے گی۔ تحریک نظام مصطفٰی اور تحریک بحالی جمہوریت میں میرے والد نے جیلیں کاٹیں، 5 بار میں نے بھی جیل کاٹی، ادنی کارکن کی حیثیت سے سیاست کا آغاز کیا تھا۔زعیم قادری کا کہنا تھا کہ 8 برس نواز شریف کا ترجمان رہا، شہباز شریف نے مجھے فون کر کے کہا پنجاب کے صدر کو تمہاری شکل پسند نہیں عہدہ چھوڑ دو۔ میں نے برداشت کیا اور ایک لفظ نہیں بولا، میں نے پچھلے 10 برسوں میں بہت کچھ برداشت کیا۔قیادت کے فیصلوں سے ناراض زعیم قادری کا مزید کہنا تھا کہ جنہیں وزیر بنایا گیا انہوں نے پارٹی کا دفاع کرنا پسند نہیں کیا۔ 10 برسوں میں روز 5 گھنٹے تک پارٹی کا میں نے دفاع کیا۔ موجودہ صورتحال میں ہم نے فیصلہ کرنا ہے۔انہوں نے صدر مسلم لیگ ن شہباز شریف کے صاحبزادے حمزہ شہباز کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ میں حمزہ شہباز شریف کے بوٹ پالش نہیں کرسکتا۔ جان دے سکتا ہوں، عزت نہیں دوں گا۔ سنو حمزہ شہباز لاہور تمہاری اور تمہارے باپ کی جاگیر نہیں ہے۔ میں تمہیں لاہور میں سیاست کر کے دکھاؤں گا۔ناراض لیگی رہنما ء نے کہا ہے کہ ان کی اہلیہ عظمی قادری نے بھی مسلم لیگ ن کی مخصوص نشست پر امید وار نہ بننے کا فیصلہ کر لیا ہ ۔لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میری بیگم بھی سید زادی ہیں ، عظمیٰ قادری کا کہنا تھا کہ وہ ذاتی نوکرانیوں کے ساتھ فہرست میں نہیں رہنا چاہتیں ،اس لیے انہوں نے بھی ن لیگ سے راہیں جدا کرلیں ۔زعیم قادری نے کہا کہ سعد رفیق میرے بڑے بھائی ہیں ،انہوں نے مجھے منانے کی کوشش اس لیے کی کہ ہماری ذات منسلک رہے ،ماضی میں ہم اکٹھے ماریں بھی کھاتے رہیں ہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ بیگم کلثوم نواز بہت اچھی خاتون ہیں ،اللہ انہیں صحت عطا کرے ،اس موقع پر اگر وہ صحت مند ہوتیں تو میں یہ مرحلہ نہ آنے دیتا ،میں نے خواجہ سعد رفیق کے ساتھ مل کر بیگم کلثوم نواز کا اس وقت ساتھ دیا جب آمریت کے دور میں کوئی بھی شریف خاندان کا ساتھ دینے کو تیار نہ تھا ۔

مزید :

صفحہ اول -