کس قانون کے تحت پٹرول پر اتنا ٹیکس لیا جا رہا ہے ؟سارا حساب دینا ہوگا۔سپریم کورٹ کا دبنگ حکم

کس قانون کے تحت پٹرول پر اتنا ٹیکس لیا جا رہا ہے ؟سارا حساب دینا ہوگا۔سپریم ...
کس قانون کے تحت پٹرول پر اتنا ٹیکس لیا جا رہا ہے ؟سارا حساب دینا ہوگا۔سپریم کورٹ کا دبنگ حکم

  

چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے پیٹرولیم مصنوعات پر اضافی ٹیکسوں سے متعلق کیس میں ریمارکس دیئے ہیں کہ لیوی اور دیگر ٹیکس کن قوانین اور فارمولے کے تحت لگائے جارہے ہیں؟ لوگوں کو ٹیکس لگا لگا کر پاگل کر دیا ہے تمام اداروں کو حساب دینا ہوگا۔سپریم کورٹ کو بتایا گیا  کہ پیٹرول کی اصل قیمت 62.38 روپے فی لیٹر ہے، پیٹرول پر 9.85 روپے فی لیٹر لیوی ٹیکس، 8.83 روپے آئی ایف ای ایم ٹیکس عائد ہے جب کہ 2.55 روپے فی لیٹر آئل مارکیٹنگ کمپنیوں اور 3.35 روپے فی لیٹر ڈیلرز کا کمیشن ہے،مئی میں وفاقی حکومت نے پیٹرول پر 15 فیصد ٹیکس عائد کیا، 12 جون کو پیٹرول پر ٹیکس 12 فیصد کردیا گیا، ٹیکس عائد ہونے کے بعد پیٹرول کی قیمت 91.96 روپے فی لیٹر ہوگئی۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

مزید :

ویڈیو گیلری -