شہید بینظیر نے آمریت کو سیاسی زوال کی قبروں میں دفن کر دیا: بلاول بھٹو زرداری

      شہید بینظیر نے آمریت کو سیاسی زوال کی قبروں میں دفن کر دیا: بلاول بھٹو ...

  

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) ملک بھر میں پہلی خاتون وزیراعظم شہید محترمہ بینظیر بھٹو کی گزشتہ روز 67 ویں سالگرہ سادگی سے منائی گئی۔ اس موقع پرپیپلز پارٹی کے رہنماؤں اور جیالوں نے ان کے مزار پر فاتحہ خوانی کی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔اس موقع پرپیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اپنی والدہ محترمہ شہید بے نظیر بھٹو کی قبر پر حاضری دی اور فاتحہ خوانی بھی کی۔موجودہ حالات کے پیش نظر اور چیئرمین پی پی بلاول بھٹو کی اپیل پر شہید محترمہ کی سالگرہ پر کوئی بڑی تقریب کا انعقاد نہیں کیا گیااور سالگرہ سادگی سے منائی گئی۔بلاول بھٹو زرداری نے اس موقع پر اپنے پیغام میں کہا کہ اپنے دور کے دو ظالم و جابر آمروں کو پرامن سیاسی جدوجہد کے ذریعے انہیں ہمیشہ کے لیے سیاسی زوال کی قبروں میں دفن کیا۔ وہ قوتیں جو کل ا س نہتی لڑکی سے ڈرتے تھے، آج اس کے نام سے لرزتے ہیں، یہی وہ زوال پذیر سوچ ہے جو آئے روز بے نظیر بھٹو کا نام اداروں اور عمارتوں سے ہٹانے میں لگے ہوتے ہیں۔ جمہوریت، آئین و قانون کی حکمرانی، غربت کے خاتمے اور مساوات پر مبنی معاشرے کے قیام کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گے۔ بے نظیر بھٹو نے بطور سیاسی رہنما اور منتخب وزیر اعظم، پاکستان کی سیاست، معیشت اور معاشرے پر مثبت و گہرے نقوش چھوڑے۔ آئین کی اصل شکل میں بحالی، پارلیمان کو اختیارات کی منتقلی، صوبائی خودمختاری اور این ایف سی بے نظیر بھٹو کی جدوجہد کا ثمر ہے۔ خیبرپختونخوا اور گلگت بلتستان کے عوام کو شناخت، خواتین اور اقلیتوں سمیت پسماندہ طبقات کو ہر فورم پر نمائندگی بھی ان ہی کی جدوجہد کا نتیجہ ہے۔ غربت کے خاتمے اور عوام کی ترقی و بہبود کے منصوبے اور دہشت گردی و انتہاپسندی کی بیخ کنی بھی ان ہی کی کاوشوں کے پھل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو کی طرح بے نظیر بھٹو کو بھی 22 کروڑ عوام اور ان کی آئندہ نسلوں کے دلوں سے کبھی مٹا نہ سکیں گے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ غیرمعمولی مشکل حالات اور چیلنجز ہی قیادت کی کسوٹی ہوتے ہیں، کورونا وائرس اور ٹڈی دل سمیت ملک کو درپیش چیلنجز کے دوران آج ہر پاکستانی بے نظیر بھٹو کی مدبرانہ قیادت کی کمی کو شدت سے محسوس کر رہا ہے، پیپلز پارٹی اپنی شہید چیئرپرسن کے مشن پر سختی سے کاربند رہے گی۔واضح رہے کہ1988 میں بے نظیر بھٹو اسلامی دنیا کی پہلی خاتون وزیراعظم منتخب ہوئیں۔1993 میں عوام نے انہیں دوسری بار مسند اقتدار پر بٹھایا۔ 1998 میں بی بی کو جلاوطنی اختیار کرنا پڑی۔ 18 اکتوبر 2007 کو وطن واپس پہنچیں تو کراچی میں ان کے قافلے پر خودکش حملہ ہوگیا جس میں وہ بال بال بچیں تاہم 200 سے زائد افراد جاں بحق ہوگئے۔ پہلے حملے کے ٹھیک 2 ماہ 9 دن بعد 27 دسمبر 2007 کو راولپنڈی کے لیاقت باغ میں ان پر دوسرا حملہ ہوا جس میں بی بی جانبر نہ ہوسکیں۔

بلاول بھٹو

اسلام آباد(این این آئی)بے نظیر بھٹو شہید کی 67 ویں سالگرہ کے موقع پر پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے اپنے پیغامات میں انہیں زبردست خراج تحسین پیش کرتے ہوء کہا ہے کہ بے نظیر بھٹو شہید آج بھی جمہوری پاکستان کی بینظیر پہچان ہیں، پہلی خاتون وزیراعظم شہید بے نظیر بھٹو بے مثال رہنما تھیں۔سیکرٹری جنرل پاکستان پیپلز پارٹی نیر حسین بخاری نے شہید محترمہ بینظیر بھٹو کی 67ویں سالگرہ پر شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاہے کہ شہید بی بی نے جمہوریت کی بحالی اور مضبوطی کیلئے تاریخی جدوجہد کی۔ پیپلز پارٹی شہید بی بی کے وفاق اور صوبوں کے درمیان ہم آہنگی کی فکر پر قائم ہے۔ انہوں نے کہاکہ قومی راہنما نے انسانیت دشمن دہشتگردوں کا مردانہ وار مقابلہ کیا۔ ڈپٹی چیئرمین سینٹ سلیم مانڈوی والانے اپنے بیان میں کہا کہ بے نظیر بھٹو شہید عالمی سطح کی لیڈر تھیں جنہوں نے اپنی قاہدانہ صلاحیتوں سے ملکی وقار بلند کیا،عوام اور جمہوریت کے لیے اپنی جان تک قربان کر دی۔ انہوں نے کہاکہ بی بی شہید نے خواتین کو عملی سیاسی جدوجہد کا نمونہ بن کر دکھایا۔ انہوں نے کہاکہ ملک کے دفاع کو بے نظیر بھٹو شہید نے ناقابل تسخیر بنایا۔ نائب صدر پیپلز پارٹی سینیٹر شیری رحمان نے شہید محترمہ بینظیر بھٹو کی 67ویں سالگرہ پر ان کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ بحران میں بی بی شہید کی قیادت یاد آتی ہے۔ ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ بی بی شہید کے جنم دن پر ان کے خاندان، چاہنے والوں اور کارکنان کو مبارک باد پیش کرتی ہوں۔ بی بی شہید اگر حیات ہوتیں تو سب پہلے عوام کو حوصلہ دیتیں، وہ عوام کو دیانتداری، استقامت اور جرات کا ساتھ ملک کے لئے کھڑے ہونے کا کہتیں۔ وفاق میں حکمران ملک اور عوام کو بانٹ رہے ہیں، ان کے پاس نہ وڑن ہے نہ ملک چلانے کی صلاحیت ہے۔شیری رحمان نے کہاکہ مشکل حالات ہوں یاں اچھے دن ہوں بی بی شہید ہمیشہ یاد رہیں گی۔پیپلز پارٹی کے سینیٹر رحمان ملک نے شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے یوم ولادت پر پارٹی کارکنان کو مبارکباد و زبردست خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہاہے کہ محترمہ بینظیر بھٹو شہید کی شہادت سے پیدا شدہ خلا بلاول بھٹو زرداری ہی پر کر سکتا ہے۔ ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو ایک عظیم رہنما، ماں، بیوی اور اپنے ورکروں کیلئے ایک عظیم بہن تھیں، محترمہ بینظیر بھٹو شہید جیسے نڈر، بہادر اور زیرک رہنما صدیوں میں پیدا ہوتے ہیں۔ محترمہ شہید طاقتور خیالات کی حامل ایک طاقتور خاتون تھیں، محترمہ بینظیر بھٹو شہید اپنے کارکنوں سے پیار کرتی تھی اور وہ مسکراتے ہوئے ہر کارکن سے ملتی تھیں۔پاکستان پیپلزپارٹی کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے ایک بیان میں کہاکہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے دلیری کے ساتھ انتہاپسندی اور آمریت کا ڈٹ کر مقابلا کیا اور ہمیشہ جمہوریت اور قانون کی بالادستی کی جنگ لڑی۔ سمجھوتہ کرنے کی بجائے ملک کی بقا کی جنگ لڑی اور جمہوریت اور ملک کی خاطر اپنی جان تک قربان کردی، دھمکیوں اور حملوں کے باوجود شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے عوام کے ساتھ اپنا رابطہ نہیں توڑا بلک حملوں اور بم دھماکوں کے باوجود عوام کے درمیان رہنے کو ترجیح دی۔

رہنما پیغامات

مزید :

صفحہ اول -