مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی بحالی کی خبریں، اہم پیش رفت سامنے آگئی 

مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی بحالی کی خبریں، اہم پیش رفت سامنے آگئی 
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی بحالی کی خبریں، اہم پیش رفت سامنے آگئی 

  

سرینگر(ڈیلی پاکستان آن لائن )مقبوضہ کشمیر کے سابق وزرائے اعلیٰ فاروق عبداللّٰہ اور محبوبہ مفتی نے بھارتی وزیراعظم مودی کی آل پارٹی میٹنگ (اے پی سی) میں شرکت کی دعوت قبول کرلی۔

واضح رہے کہ چند روز قبل بھارتی میڈیا نے خبر دی تھی کہ بھارتی حکومت مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کی بحالی کے حوالے سےغور وفکر کررہی ہے اور اس حوالے سے اے پی سی جلد بلائی جائے گی۔تاہم اب باقاعدہ طور پر مودی حکومت کی جانب سے کشمیری رہنماؤں کو اے پی سی میں شرکت کی دعوت دیدی گئی ہے۔مودی حکومت کی جانب سے دعوت ملنے کے بعد مقبوضہ کشمیر کی سیاسی جماعتوں کے اتحاد گپکار کا سری نگر میں فاروق عبداللہ کی رہائش گاہ پر اہم اجلاس ہوا۔ جس میں فاروق عبداللّٰہ کا کہنا تھا کہ گپکار ڈیکلیریشن کا موقف واضح ہے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں ہے۔محبوبہ مفتی کا کہنا ہے کہ بھارتی حکومت دوحا میں طالبان سے بات چیت کررہی ہے، انہیں مقبوضہ کشمیر میں بھی ڈائیلاگ کرنا چاہیے، انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے بھارت کو پاکستان سے بھی مذاکرات کرنے چاہیے۔کشمیری رہنما مظفر شاہ نے کہا کہ آرٹیکل 370 اور 35 اے پر کسی بھی صورتحال میں سمجھوتہ نہیں ہوسکتا۔

خیال  رہے کہ مودی حکومت کی جانب سے اہم کشمیری سیاسی جماعتوں کی قیادت کو 24 جون کو دہلی میں آل پارٹی میٹنگ کی دعوت دی گئی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -