کاشتکار وں کو بابچی کی کاشت رواں ماہ مکمل کرنے کی ہدایت

کاشتکار وں کو بابچی کی کاشت رواں ماہ مکمل کرنے کی ہدایت

 فیصل آباد (بیورورپورٹ)کاشتکار وں کو بابچی کی کاشت رواں ماہ میں مکمل کرنے کی ہدایت کی گئی ہے اورکہاگیاہے کہ کاشتکار ادویاتی پودوں کی زیادہ سے زیادہ کاشت سے اپنی آمدن میں خاطر خواہ اضافہ کر یں۔محکمہ زراعت فیصل آباد ڈویژن کے ترجمان نے بتایاکہ ادویاتی پودوں کی کاشت پر لاگت کم جبکہ آمدن زیادہ حاصل ہوتی ہے جبکہ ادویاتی پودوں میں بابچی کو ایک خاص اہمیت حاصل ہے۔ انہوں نے بتایاکہ اس کے بیجوں کا پاؤڈر کوڑھ کی بیماری کیلئے بہت مفید ہے جبکہ اس کے بیج سانپ کے کاٹنے ، بچھو کے کاٹنے اور جلدی بیماریوں میں کثرت سے استعمال کئے جاتے ہیں۔ انہوں نے بتایاکہ یہ خون کی صفائی میں مفید ، پیٹ کے کیڑو ں کو مارتی اور بیرونی طورپر برص (چہرے کے سفید داغ ) پر اس کا سفوف مکھن میں ملا کرلیپ کرنے سے بھی خاطر خواہ افاقہ ہوتاہے ۔انہوں نے کہاکہ کاشتکار بابچی کی کاشت کیلئے تین سے چار کلوگرام بیج فی ایکڑاستعمال کریں۔انہوں نے کہاکہ ذرخیز زمین جہاں آبپاشی کے لیے پانی وافر مقدار میں موجود ہو اس کی کاشت کے لیے موزوں ہے تاہم ہلکی ریتلی اور کلراٹھی زمینیں اس کی کاشت کے لیے بالکل موزوں نہیں ہیں ۔انہوں نے کہاکہ کاشتکار زمین کی تیاری کیلئے پانچ سے چھ مرتبہ ہل چلا کر اور سہاگہ پھیر کر مٹی باریک کرلیں اور زمین کو تیار کرتے وقت اس میں فی ایکڑ آٹھ یا دس ٹن گوبر کی گلی سڑی کھاد ایک جیسی مقدار میں سارے کھیت میں بکھیر دیں اور پھر ہل چلا کر اچھی طرح زمین میں ملادیں۔انہوں نے کہاکہ بوائی کے وقت ایک بوری ٹرپل فاسفیٹ ڈال دیں جبکہ اگاؤ مکمل ہونے کے بعد پہلے 60 دنوں کے اندر یوریا کھاد ڈیڑھ بوری فی ایکڑ کے حساب سے ڈالی جائے ۔انہوں نے کہا کہ بابچی کی کاشت کے دوطریقے ہیں۔ایک یہ کہ ڈیڑھ ڈیڑھ فٹ کے فاصلے پرکھیلیاں بنائی جائیں اور ان کے اوپر نوانچ کے فاصلے سے بیج کے چوکے لگائیں جبکہ وتر زمین میں ہموار سطح پر لائنوں میں بھی اس کی بجائی ڈرل کی مدد سے کی جاسکتی ہے۔

مزید : کامرس