جنگلات اور جنگلی حیات کی بہتری کیلئے سول سوسائٹی کو شامل کئے بغیر مطلوبہ نتائج حاصل نہیں ہوسکتے

جنگلات اور جنگلی حیات کی بہتری کیلئے سول سوسائٹی کو شامل کئے بغیر مطلوبہ ...

لاہور( پ ر)صوبائی سیکرٹری جنگلات، جنگلی حیات و ماہی پروری کیپٹن (ر) جہانزیب خان نے کہا ہے کہ ورلڈ فاریسٹ ڈے ماحولیاتی آلودگی کے خاتمے اور آئندہ نسلوں کو صاف ستھری فضا دینے کے عہد کی تجدید کا دن ہے۔انہوں نے کہا کہ درختوں کی غیرقانونی کٹائی کے حوالے سے محکمہ جنگلات زیروٹالرنس پالیسی اختیار کئے ہوئے ہے۔ دریائے راوی کنارے 600 ایکڑ رقبہ پر نیا جنگل لگانے کے منصوبے پر تیزی سے کام جاری ہے ۔انہوں نے یہ بات جلو پارک میں ’’ورلڈ فاریسٹ ڈے‘‘ کے موقع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔اس موقع پر چیف کنزرویٹر آف فاریسٹ رانا شبیر احمد ، ڈائریکٹر جنرل فشریزڈاکٹر محمد ایوب، کنزرویٹرآف فاریسٹ مہر محمد یوسف ، لاہور کالج فار ویمن یونیورسٹی کی پروفیسر حنا یعقوب اور دیگر اعلی افسران کے علاوہ یونیورسٹیوں ، کالجوں اور سکولوں کے طلبا و طالبات ، سول سوسائٹی ، غیرسرکاری تنظیموں اور دیگر شعبوں سے وابستہ افراد بھی موجود تھے۔صوبائی سیکرٹری نے کہا کہ محکمہ جنگلات فاریسٹری کے فروغ میں عوام کی شرکت کے بغیر کامیابی حاصل نہیں کرسکتا اس لئے اس نیک کام میں تمام شعبہ ہائے زندگی سے متعلق لوگوں کو آگے آنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اگر ہر شخص اپنے گھر کے اندر یا باہر 2پودے لگانے کا تہیہ کرلے تو کوئی وجہ نہیں کہ آئندہ 10 سالوں میں ماحولیاتی آلودگی پر قابو اور لکڑی کی روزبروز بڑھتی ہوئی ضروریات پوری نہ کی جا سکیں۔کیپٹن (ر) جہانزیب خان نے کہا کہ راوی کنارے جنگل کے قیام سے لوگوں کو نہ صرف صاف ستھرا ماحول میسر آئے گا۔ بلکہ سستی اور معیاری تفریح کے مواقع بھی ملیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ورلڈ فاریسٹ ڈے کے انعقاد کا بنیادی مقصد لوگوں میں درختوں کی اہمیت و افادیت اور اس کے زندگی پر پڑنے والے مثبت اثرات بارے آگاہی فراہم کرنا اور اس مقصد کے لئے صوبہ بھر کی تمام تحصیلوں ، اضلاع اور ڈویژن کی سطح پر تقاریب منعقد کی جارہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ سال میں2مرتبہ شروع کی جانے والی شجرکاری مہم کے دوران صرف درخت لگانا ہی کافی نہیں بلکہ ان لگائے گئے درختوں کو بچانا اور ان کی حفاظت کرنا بھی اتنا ہی اہم ہے۔انہوں نے کہا کہ جنگلات اور جنگلی حیات کی بہتری کے لئے کاروباری طبقہ، عوام اور سول سوسائٹی کو اس نیک کام میں شامل کئے بغیر مطلوبہ نتائج حاصل نہیں کئے جاسکتے اس لئے ہم سب کو مل کر ہرممکن تعاون فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔چیف کنزرویٹرآف فاریسٹ رانا شبیر احمد نے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ درخت نہ صرف ہمیں آکسیجن فراہم کرتے ہیں بلکہ ملکی معیشت میں بھی اہم کردار کے حامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ محکمہ جنگلات درختوں کی کٹائی کی بجائے درخت لگانے اور اسے محفوظ بنانے کی پالیسی پر دن رات کوشاں ہے۔انہوں نے کہا کہ محکمہ جنگلات کے زیرانتظام صوبہ کے تمام پارکس کی تنظیم نو کے لئے مربوط حکمت عملی پرعمل کیا جارہا ہے اور ایسے منصوبے بنائے جارہے ہیں کہ پارک سے حاصل ہونے والی آمدنی اسی پارک پر خرچ کی جائے تا کہ مرحلہ وار سہولیات میں اضافہ کیا جاتا رہے۔مزید برآں ڈائریکٹر جنرل فشریز ڈاکٹر محمد ایوب اور لاہور کالج فار ویمن یونیورسٹی کی پروفیسر حنا یعقوب نے بھی سیمینار سے خطاب کیا اور انسانی زندگی میں درختوں کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔بعدازاں صوبائی سیکرٹری نے ورلڈ فاریسٹ ڈے کے حوالے سے منعقدہ واک کی قیادت کی جس میں محکمہ جنگلات کے اعلی افسران، یونیورسٹی کی طالبات ، سکولوں کے بچوں ، سول سوسائٹی اور زندگی کے مختلف شعبوں سے وابستہ افراد نے شرکت کی ۔ صوبائی سیکرٹری ، محکمہ جنگلات کے افسران ، یونیورسٹی کی طالبات اور سکول کے بچوں نے جلو پارک میں پودے بھی لگائے۔

مزید : کامرس