مفتی محمد حسین اور ڈاکٹر سرفراز احمد نعیمی شہید کی زندگیاں علماء کیلئے مشعل راہ ہیں

مفتی محمد حسین اور ڈاکٹر سرفراز احمد نعیمی شہید کی زندگیاں علماء کیلئے مشعل ...

 لاہور(خبر نگار خصوصی)آپریشن ضرب عضب شروع کرنے کی وجہ سے وزیراعظم میاں نوازشریف وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف دہشت گردوں کی ہٹ لسٹ پرہیں موجودہ حکومت دہشت گردی سمیت تمام مسائل پرقابو پانے کیلئے کوشاں ہے۔ مسلم لیگ (ن) وطن پاکستان کوایک اسلامی اورفلاحی ریاست بناناچاہتی ہے ان خیالات کا اظہارمسلم لیگ( ن )کے صوبائی وزیر قانون میاں مجتبی شجاع الرحمن نے جامعہ نعیمیہ میں مفتی محمد حسین نعیمی کی 17ویں برسی کے موقع پر منعقدہ ’’مفتی اعظم پاکستان سیمینار‘‘ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے مزید کہا کہ دہشت گردوں کے خلاف جاری جنگ کوہرصورت منطقی انجام تک پہنچائیں گے ۔جامعہ نعیمیہ نے ہردورمیں امن اورمحبت کادرس دیااسلام کی سربلندی اور پاکستان کے استحکام کیلئے جامعہ نعیمیہ کی خدمات ناقابل فراموش ہیں۔علماء ومشائح مفتی محمدحسین نعیمی اور ڈاکٹرسرفرازحمدنعیمی کے امن مشن کوقوم تک منتقل کریں تا۔مفتی محمدحسین نعیمی ؒ اور ڈاکٹرسرفرازاحمدنعیمی شہیدؒ کی زندگیاں علماء ومشائخ کے لئے مشعل راہ ہیں ۔ مفتی اعظم سیمینار سے صوبائی وزیراوقاف عطاء محمدمانیکا،رکن قومی اسمبلی پرویزملک ، پیر منورحسین جماعتی،ڈاکٹر مجاہد کامران (وائس چانسلرپنجاب یونیورسٹی)صاحبزادہ محمد ابوالخیر زبیرالوری ، علامہ راغب حسین نعیمی(ناظم اعلیٰ جامعہ نعیمیہ ) پیرسیدمحفوظ شاہ (رکن پنجاب اسمبلی)،سہیل وڑائچ،نجم ولی،مظہربرلاس ،رؤف طاہر،اوریا مقبول جان،خالد حبیب الہی،جسٹس نذیر غازی، عظیم ایم میاں،صاحبزادہ سلطان احمد علی،سردار محمد خان لغاری،و دیگر علماء ،مشائخ ،سیاسی و مذہبی تنظیمات کے نمائندگان نے بھی اظہار خیال کیا۔جبکہ سیمینار میں مفتی گلزار احمد نعیمی،علامہ ابو الاعجاز قادری،علامہ مفتی محمد صدیق ہزاروی،علامہ مفتی عبد الرحمن قمر،ڈاکٹر طاہر رضابخاری،قاری محمد عارف سیالوی،ڈاکٹر زکریا،ڈاکٹر مسعود احمد مجاہد،مفتی انتخاب احمد نوری،مفتی قیصر شہزاد نعیمی ، پروفیسر وارث علی شاہین،پروفیسر لیاقت صدیقی،علامہ قاسم علوی،ڈاکٹر مفتی محمد حسیب قادری(خطیب جامعہ نعیمیہ)ڈاکٹرمفتی محمد کریم خان ،حکیم شرف الدین ،مولانا سمیع اللہ،روزنامہ آفتاب کے چیف ایڈیٹر ممتاز طاہر،سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی نمائندہ شخصیات ،نعیمین ایسوسی ایشن کے مرکزی ،صوبائی ،ضلعی عہدیداران ،کارکنان اور کثیر تعدادمیں عامۃ الناس نے شرکت کی۔صوبائی وزیر اوقاف میاں عطاء مانیکانے کہا کہ اسلاف کی یا د میں صرف دن منانا کافی نہیں بلکہ ان کی عملی تعلیمات کو اپنی زندگیوں میں بھی لانا ضروری ہے تا کہ معاشرے میں مثبت تبدیلی کی بنیاد رکھی جا سکے۔ جامعہ نعیمیہ کے ناظم اعلیٰ ممتاز مذہبی سکالرعلامہ محمد راغب حسین نعیمی نے کہا کہ جامعہ نعیمیہ گزشتہ سات عشروں سے دین متین کی تعلیمات کو عام کرنے میں مصروفِ عمل ہے۔ حالات جیسے بھی ہوں جامعہ نعیمیہ دہشت گردی کے خاتمے اور تعلیم کے فروغ کے لیے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔مفتی محمد حسین نعیمی علیہ الرحمہ اتحاد امت کے نقیب تھے ۔اتحاد امت کے لیے ان کی کوشش اور کاوش کو نتیجہ خیز بنانے کے لیے انہی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے یہ سلسلہ جاری رہے گاشہید پاکستان ڈاکٹر محمد سرفراز نعیمی علیہ الرحمہ نے ہمیشہ قوم کو امن اور محبت کا پیغام دیا۔جامعہ پنجاب کے وائس چانسلر ڈاکٹر مجاہد کامران نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مسلم امہ کا غلبہ فروغ علم سے وابستہ ہے۔ جب تک مسلمان علمی طور پر مضبوط رہے۔ وہ دنیا پر حاکم رہے۔ علمی پستی نے مسلمانوں کو زوال کا شکار کیا۔ ممتاز کالم نگار مظہر برلاس نے کہا کہ پنجاب حکومت کی طرف سے لاؤڈ اسپیکر اذان سے پہلے اور اذان کے بعد درودوسلام پر پابندی لگایا جانا ناروا عمل ہے جس سے اہل محبت کے جذبات مجروح ہوئے ہیں ممتاز کالم نگارسہیل وڑائچ نے کہا کہ میں جس درسگاہ میں کھڑا ہوں یہ طبقہ قیام پاکستان کی تحریک میں ہر اول دستہ کا کردار ادا کرنے والوں کے وارثوں کا ہے ان کے اسلاف پاکستان بنانے والے ہیں پاکستان بچانے کے لیے بھی اسی طبقہ کو میدان عمل میں آنا ہو گا۔ ممتاز کالم نگار اوریا مقبول جان نے کہا کہ بر صغیر میں انگریز کی آمد سے پہلے ایک ہی نظام تعلیم رائج تھا انگریز نے سازش کے ذریعے مسلمانوں کو مختلف تعلیمی طبقات میں تقسیم کر دیا ۔ جس کی وجہ سے آج امت مسلمہ کی اکثریت بنیادی دینی تعلیم سے بھی محروم ہے۔ اور اسی طرح مسلمان علمی اورا خلاقی پستی کا شکار ہیں۔پیر منور حسین شاہ جماعتی نے صدارتی کلمات ادا کرتے ہوئے کہا کہ قیام پاکستان کی تحریک اپنے منطقی انجام کو حصول پاکستان کی صورت میں علماء اور مشائخ کی جہد مسلسل کے نتیجہ میں پہنچی ۔ سیمینار میں منظور کی گئی قردادوں میں حکومت وقت سے مطالبہ کیا گیا کہ دہشت گردی ملوث مدارس کے خلاف کریک ڈاؤن کیا جائے اور آپریشن ضرب عضب کا دائرہ کار پورے ملک تک پھیلایا جائے۔ یوحنا آباد میں دو افراد کا زندہ جلایا جانا بد ترین دہشت گردی ہے۔ حکومت جلائے جانے والے افراد کے ورثاء کو خصوصی مالی مدد فراہم کرے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1