خس کم جہاں پاک

خس کم جہاں پاک
خس کم جہاں پاک

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

خس کم جہاں پاک ،جی ہاں لوٹ کے بدھو گھر کو آئے ،جی ہاں دوستو! انتہائی افسوس ناک غم ناک اور المناک خبر گرم ہے کہ پاکستانی ٹیم کوارٹر فائنل میں آسٹریلیا سے ہار گئی ۔ جی ہاں نا قص بلے بازی اور ناقص فیلڈنگ پاکستانی ٹیم کے ہار کی بڑی وجہ بنی ، تاہم یہ بات بھی غلط نہیں کہ جو اچھا کھیلتا ہے وہی جیتتا ہے اور آسٹریلیا نے یقیناًاچھا کھیل پیش کیا اس لئے جیت آسٹریلیا کا مقدر بنی ، تاہم بتلاتے چلیں کہ آسٹریلیا چار دفعہ ورلڈ کپ جیت چکا ہے، جبکہ پاکستانی ٹیم محض ایک دفعہ ورلڈکپ فاتح قرار پائی، تاہم اب آسٹریلیا سیمی فائنل میں انڈیا کا مقابلہ کر نے کے لئے تیار ہے ، جبکہ پاکستانی ٹیم ورلڈ کپ کی تمام تر خوبصورتیوں اور رعنائیوں کو الوداع کہہ کر وطن واپسی کے لئے تیار ہے ۔

اگر مجموعی طور پر دیکھا جائے تو پہلے راؤنڈ میں کھیلے جانے والے ابتدائی دو میچ پاکستانی ٹیم نے ہارے ، جبکہ اس کے بعد اپنے تمام میچ جیت کر کوارٹر فائنل تک رسائی حاصل کی ، تاہم کوارٹر فائنل میں پاکستانی ٹیم نے اپنی کارکردگی سے لاکھوں شائقین کر کٹ کو مایوسی سے دو چار کیا ، کوارٹر فائنل میچ میں پاکستانی ٹیم نے آسٹریلیا کے خلاف پہلے کھیلتے ہوئے صرف دو سو تیرہ رنز بنائے ، محض پینتالیسویں اوور میں پاکستانی ٹیم کے تمام کھلاڑی آؤٹ ہو چکے تھے ،تاہم آسٹریلیا نے چار وکٹوں کے نقصان پر مطلوبہ ہدف حاصل کر لیا ،تاہم حسب روایت کوارٹر فائنل میں پاکستانی فیلڈنگ کمزو ر نظر آئی ،، اور دو آسان کیچ ڈراپ کئے اگر وہ کیچ نہ ڈراپ ہوتے تو تو شائد نتیجہ کچھ اور نکلتا ۔

پاکستانی ٹیم کی ہار اور ورلڈ کپ کے حصول کا خواب ایک دفعہ پھر ادھورا رہ گیا ،کوارٹر فائنل میں آسٹریلیا سے ہارنے کے بعد آفریدی نے ون ڈے کر کٹ سے ریٹائر منٹ کا اعلان کردیا، تاہم شاہد آفریدی نے اپنے کیریر میں ون ڈے میچز میں آٹھ ہزار سے زائد رنز سکور کئے ، تاہم خبر تو یہ بھی تھی کہ پاکستانی کپتان مصباح الحق نے بھی و ن ڈے کرکٹ سے ریٹائر منٹ کا اعلا ن کر دیا ،بہرحال اگر دیکھا جائے تو مصباح کی کار کر دگی بھی اچھی رہی ،پاکستانی ٹیم ورلڈ کپ سے باہر ہو گئی ،ورلڈ کپ کے دوران پاکستانی کھلاڑیوں اور ٹیم انتظامیہ کے مابین اختلافات کی خبریں بھی گردش کرتی رہیں، جبکہ پاکستانی چیف سلیکٹر کو کیسینو جا کر جواء کھیلنے کے الزام میں وطن واپس بلانا پڑا ،تاہم یہ بات بھی غلط نہیں پاکستانی ٹیم میں بے شمار نئے کھلاڑی شامل ہیں اور ان میں تجربے کی بھی کمی ہے ، بہر حال تیر کمان سے نکل چکا مطلب پاکستانی ٹیم ورلڈ کپ کی دوڑ سے باہر ہو گئی ،خیر! اب جو ہو گیا سو ہو گیا ، اب پھر آگے کی سوچ سوچنی چاہیے۔

جی ہاں کوئی بات نہیں ہار گئے تو کیا ہوا اب آئندہ ورلڈ کپ کی تیاری کریں اور آئندہ چار سال میں اپنی کوتاہیوں خامیوں پر نظر ڈالیں اورا گلے ورلڈ کپ کی تیاری ابھی سے شروع کر یں تو ہو سکتا ہے کہ شائد آئندہ ورلڈ کپ جیت ہی جائیں ،، تاہم اب ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کی بھی آمد ہے اور یقیناًپاکستانی ٹیم ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ میں ضرور اپنا سکہ جمائے گی اور ٹی ٹونٹی کپ جیت کر قوم کو یقیناًخوشیوں بھرا تحفہ دے گی بہرحال اجازت آپ سے پیارے دوستو! ملتے ہیں جلد آپ سے ایک بریک کے بعد تو چلتے چلتے ،اللہ نگھبان، رب راکھا ۔

مزید : کالم