پسند کی شادی کرنیوالی ضلع کچہری کے سامنے اغواء ، پولیس تماشہ دیکھتی رہی

پسند کی شادی کرنیوالی ضلع کچہری کے سامنے اغواء ، پولیس تماشہ دیکھتی رہی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ملتان (خبر نگار خصوصی) پسند کی شادی کرنے والی خاتون کو ضلع کچہری کے سامنے سے اغواء کرلیاگیااورشوہرکو تشددکا نشانہ بنایاگیاجبکہ پولیس خاموش تماشائی بنی رہی تاہم پولیس تھانہ چہلیک کوکارروائی کے لئے درخواست دے دی گئی ہے۔تفصیل کے مطابق(بقیہ نمبر34صفحہ7پر )
سیشن کورٹ ملتان میں بندبوسن ملتان کی بختاور نے درخواست دائر کی تھی کہ اس نے اپنی مرضی سے 4 ستمبر 2016 ء کو اپنی پسند اورمرضی سے محمد عمران سے شادی کرلی جبکہ کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا ہے جبکہ اس کے رشتہ دار اس کی شادی کسی اورجگہ کرناچاہتے تھے اور18 مارچ کو اس کے گھر میں داخل ہو گئے اوراسے خاوندسمیت زدوکوب کرنے کے ساتھ طلاق لینے کی دھمکی دی اور اب پولیس تھانہ الپہ کے ساتھ مل کرہراساں وپریشان کررہے ہیں جس سے روکنے کا حکم دیاجائے جس پر پولیس سے جواب طلب کیاگیا تھاتاہم مذکورہ خاتون گزشتہ روز اپنے شوہر اوررشتہ داروں کے ہمراہ سماعت کے لئے آئی تو کچہری کے باہر اس کے دیگر رشتہ دارموجود تھے جنہوں نے خاتون پرحملہ کردیااوراس کے شوہرکو تشدد کا نشانہ بنایاجبکہ خاتون کو قریب موجود گاڑی میں ڈال لیا اس موقع پر خاتون اوراس کے شوہرنے چیخ وپکارکی جس کی وجہ سے موقع پر خوف وہراس پھیل گیا جبکہ ضلع کچہری کے قریب موجود پولیس اہلکارخاموش تماشائی بنے رہے نیز خاتون کوملزم رش کے باوجود اغواء کرکے لے جانے میں کامیاب ہوگئے بعدازاں خاتون کے شوہر نے عدالت اورپولیس تھانہ چہلیک کو بھی آگاہ کردیاہے۔
اغواء