وزیر صحت سندھ، سیکرٹری، متعلقہ حکام 31مارچ کو سپریم کورٹ طلب

وزیر صحت سندھ، سیکرٹری، متعلقہ حکام 31مارچ کو سپریم کورٹ طلب

  

اسلام آباد(آن لائن) سپریم کورٹ نے تھرمیں بچوں کی ہلاکت سے متعلق کیس میں سندھ کے وزیرصحت،سیکرٹری و متعلقہ حکام کو اکتیس مارچ کو کراچی رجسٹری میں طلب کرلیا ہے،چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دئے ہیں کہ عملے کی معطلی سے کیا ہوتا ہے ۔سرکاری اسپتال میں علاج کیلئے جانے والے اپنے بچوں کی لاشیں لیکرآ گئے،کیا اسپتال کا سربراہ اور اعلیٰ حکام ذمہ دار نہیں ہیں ۔ بدھ کے روز چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے تھر میں بچوں کی ہلاکت سے متعلق کیس کی سماعت کی،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے بتایا کہ سیکرٹری صحت نے ماہرین پرمشتمل کمیٹی تشکیل دے دی ہے،زائدالمیعاد ویکسین لگنے سے مٹھی ہسپتال میں 3 بچے ہلاک ہوئے، اسپتال کے ذمہ دار عملہ کو معطل کر دیا ہے۔چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ معطلی سے کیا ہوتا ہے؟ سرکار کے اسپتال میں علاج کرانے گئے تھے، علاج کیا ہونا تھا بچوں کی لاشیں لے کر آگئے، کسی کے گھر کا چراغ چھین لیا گیا، کیا اسپتال کا سربراہ ذمہ دار نہیں اور بڑے آدمی کا کوئی قصور نہیں ہے۔ اکتیس مارچ کو ہمارا بینچ کراچی رجسٹری میں ہوگا۔ وزیرصحت سندھ، سیکرٹری سمیت تمام ذمہ داران آئندہ سماعت پر ذاتی حیثیت میں پیش ہوں، مقدمے کی مزید سماعت اکتیس مارچ کو کراچی رجسٹری میں ہوگی۔

مزید :

صفحہ آخر -