راؤ انوار گرفتار ، تحقیقات کیلئے جے آئی ٹی قائم

راؤ انوار گرفتار ، تحقیقات کیلئے جے آئی ٹی قائم

  

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر ،مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوز ایجنسیاں ) نقیب اللہ قتل کیس میں نامزد معطل ایس ایس پی راؤ انوار سپریم کورٹ میں پیش ہوگئے جس کے بعد چیف جسٹس کے حکم پر انہیں احاطہ عدالت سے گرفتار کرلیا گیا۔سپریم کورٹ نے نقیب قتل کیس میں نامزد معطل ایس ایس پی راؤ انوار کو کئی بار طلب کیا تھا لیکن اس کے باوجود وہ پیش نہیں ہوئے تھے۔گزشتہ روز چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے تھے کہ اگر راؤ انوار کا کوئی سہولت کار نکلا تو سخت کارروائی ہوگی جب کہ عدالت نے حکم دیا تھا کہ راؤ انوار خود سے پیش ہوجائیں تو بہتر ہے۔سپریم کورٹ میں نقیب اللہ قتل کیس از خود نوٹس کی سماعت کے سلسلے میں راؤ انوار کو بزشتہ روز پھر طلب کیا گیا تھا جس پر وہ عدالت میں پیش ہو گئے۔معطل ایس ایس پی راؤ انوار کو اسلام آباد پولیس کی بھاری نفری میں اچانک سپریم کورٹ لایا گیا جب کہ انہوں نے چہرے پر ماسک لگا رکھا تھا۔راؤ انوار کو سفید رنگ کی گاڑی میں سپریم کورٹ لگایا گیا اور اس موقع پر عدالت کے اطراف سیکیورٹی سخت تھی۔سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں نقیب اللہ قتل کیس از خود نوٹس کی سماعت ہوئی۔سماعت کے آغاز پر راؤ انوار کے وکیل نے عدالت میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے عدالت کے سامنے سرنڈر کردیا ہے۔اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے قانون کے سامنے سرنڈر کرکے ہم پر کوئی احسان نہیں کیا۔چیف جسٹس نے معطل ایس ایس پی سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ جس دلیری سے آپ رہ رہے تھے اور جو خط آپ نے لکھے اس پر حیرت ہے، جو خط لکھے گئے ہیں ان کا تاثر درست نہیں۔جسٹس ثاقب نثار نے راؤ انوار سے استفسار کیا کہ اتنے دن کہاں تھے؟ کیوں نہیں آئے؟ ہم نے موقع فراہم کیا تو کیوں نہیں سرنڈر کیا۔اس پر راؤ انوار عدالت کے سامنے خاموش کھڑے رہے اور کوئی جواب نہیں دیا۔راؤ انوار کے وکیل نے جواب دیا کہ ان کے مؤکل حفاظتی ضمانت چاہتے ہیں جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ ہم کوئی حفاظتی ضمانت نہیں دے رہے اور گرفتاری کے احکامات جاری کررہے ہیں۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ ہم کمیٹی بنارہے ہیں، راؤ انوار کو جوکچھ کہنا ہے وہ اس کے سامنے جاکر کہیں۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سمجھ نہیں آتی کہ آپ اتنے دلیر ہوگئے، عدالت کے سامنے سرنڈر نہیں کیا، مہلت دی پھر بھی نہیں آئے۔عدالت نے آئی جی سندھ سے انکوائری کمیٹی کے ممبران کی تفصیلات بھی طلب کی۔راؤ انوار کے وکیل نے کہا کہ انہیں سندھ پولیس سے اختلاف ہے کیونکہ پولیس ان کے مخالف ہوگئی ہے۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کس طرح آپ کی پولیس آپ کے مخالف ہوگئی، آپ اس پولیس کے ملازم ہیں اور وہی پولیس آپ کے مخالف ہوگئی۔معطل ایس ایس پی کے وکیل نے استدعا کی کہ کمیٹی میں ایجنسیز کو شامل کیا جائے، اس پر چیف جسٹس نے سوال کیا کہ کون سی ایجنسی کو شامل کیا جائے؟راؤ انوار کے وکیل نے کہا کہ آئی ایس آئی اور آئی بی کو کمیٹی میں شامل کیا جائے، اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ یہ کیس سیدھا سیدھا ہے ان کا تفتیش سے کیا تعلق؟ مجھے معلوم ہے آپ یہ کس وجہ سے کہہ رہے ہیں۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالتیں آزاد ہیں اور کسی کا اثر نہیں لیتی۔عدالت نے کیس کی سماعت میں 10 منٹ کا وقفہ کیا اور وقفے کے بعد ایک بار پھر سماعت کا آغاز کرتے ہوئے راؤ انوار کے بینک اکاؤنٹس غیر منجمد کرنے کا حکم دیا۔عدالت نے راؤ انوار کے وکیل کی جانب سے تفتیش کے لیے جے آئی ٹی میں حساس اداروں کے نمائندوں کو شامل کرنے کی استدعا مسترد کردی۔عدالت نے ایڈیشنل آئی جی سندھ آفتاب پٹھان کی سربراہی میں جے آئی ٹی بھی تشکیل دے دی جس میں چار اعلیٰ پولیس افسران ولی اللہ دل، آزاد خان، ذوالفقار لاڑک اور ڈاکٹر رضوان کو شامل کیا گیا ہے۔سپریم کورٹ نے راؤ انوار کے خلاف توہین عدالت کا نوٹس خارج کردیا تاہم ان کا نام ای سی ایل میں برقرار رکھا گیا ہے جب کہ معطل ایس ایس پی کی گرفتاری کے احکامات نقیب اللہ قتل کیس میں جاری کیے گئے۔چیف جسٹس نے کہا کہ راؤ انوار کے کیس کی تحقیقات آزادانہ ہوں گی، کیس کو کراچی ٹرانسفر کردیا جائے گا جب کہ کسی طرح کی عدالتی آبزرویشن اس کیس کو متاثر نہیں کرے گی۔کیس کی سماعت کے موقع پر نقیب اللہ کے بزرگ عدالت میں موجود تھے۔ چیف جسٹس نے ان سے کہا کہ یقین دہانی کرائیں کہ محسود قبیلے کی طرف سے راؤ انوار کی جان کو کوئی نقصان نہ پہنچایا جائے۔عدالت نے نقیب اللہ کے اہل خانہ سے راؤ انوار کو نقصان نہ پہنچانے کے لیے حلف نامہ بھی لیا۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ تحقیقات ہونے تک راؤ انوار کو حفاظت میں رکھا جائے، وہ جب تک سندھ پولیس کی حراست میں ہیں ان کی حفاظت پولیس کی ذمہ داری ہے۔عدالت عظمیٰ کی جانب سے راؤ انوار کی گرفتاری کے احکامات جاری کیے جانے پر ایس ایس پی سیکیورٹی نے انہیں احاطہ عدالت سے گرفتار کیا۔سپریم کورٹ سے گرفتاری کے بعد سندھ پولیس نے راؤ انوار کو اپنی تحویل میں لے لیا اور انہیں سخت سیکیورٹی میں ریڈ زون میں سیکیورٹی ڈویڑن منتقل کردیا گیا جہاں سے انہیں پہلی دستیاب فلائٹ سے کراچی منتقلکر دیا گیا۔راؤ انوار کی گرفتاری کے بعد عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے نقیب اللہ کے والد نے کہا کہ عدالت کا شکریہ ادا کرتے ہیں، عدالت پر بھروسہ ہے کہ انصاف یہیں سے ملے گا۔انہوں نے کہا کہ نقیب پاکستان کا بیٹا تھا، پاکستان کے تمام ادارے ہمارا فخر ہیں، ہم پر امن لوگ ہیں کسی کو نقصان نہیں پہنچائیں گے۔نقیب اللہ کے والد کے وکیل فیصل صدیقی نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ راؤ انوار کے وکیل نے عدالت سے درخواست کی تھی کہ دیگر اداروں کے افسر بھی جے آئی ٹی میں لیے جائیں، ان کے وکیل نے آئی ایس آئی اور ایم آئی کا نام لیا لیکن عدالت نے یہ درخواست مسترد کردی اور سندھ پولیس کے افسران پر مشتمل نئی جے آئی ٹی بنائی ہے۔

راؤ انوار

مزید :

صفحہ اول -