کراچی ، میٹرک بورڈ کی ناقص حکمت عملی ، راتوں رات امتحانی مراکز تبدیل

کراچی ، میٹرک بورڈ کی ناقص حکمت عملی ، راتوں رات امتحانی مراکز تبدیل

  

کراچی (رپورٹ:کامران چوہان)ثانوی تعلیمی بورڈ کے زیر انتظام 28مارچ سے شروع ہونے والے نہم اور دہم جماعت کے امتحانات میں بدانتظامیاں سامنے آنا شروع،راتوں رات امتحانی سینٹرز کی تبدیلی سے طلبہ اور والدین پریشان۔تفصیلات کے مطابق ثانوی تعلیمی بورڈ کے زیر انتظام 28مارچ سے ہونے والے میٹرک کے امتحانات میں 3لاکھ 52ہزار 729طلبہ و طالبات شریک ہوں گے ۔میٹرک بورڈ نے ان امتحانات کے لئے 389سینٹرز قائم کئے گئے اور بچوں کوایڈمٹ کارڈزاورامتحانی سینٹرزکی لسٹیں بھی جاری کردیں مگرہمیشہ کی طرح ایک بارپھرسے سینٹرزکی تبدیلیوں کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے۔ ذرائع کے مطابق گورنمنٹ سیکنڈری اسکول سعید نمبر 3 کا امتحانی سینٹرکو تبدیل کرکے گورنمنٹ سیکنڈری اسکول رشید آباد میں جبکہ دی آگزن ایجوکیشن اکیڈمی سیکٹر 9/A سعید آباد کو تبدیل کرکے الفرقان سیکنڈر ی اسکول سعید آباد 9/A میں منتقل کردیا گیا ہے ۔ دلچسپ بات ہے کہ آگزن ایجوکیشنل اکیڈمی کی عمارت 22کمروں پر مشتمل ہے جبکہ الفرقان کے مجموعی طور پر 11 کمرے ہیں اور عمارت کی حالت بھی آگزن ایجوکیشنل اکیڈمی سے بہترنہیں ہے۔ایڈمٹ کارڈزکے اجراء اورسینٹرزکی لسٹیں جاری ہونے کے بعد امتحانی سینٹرز کی تبدیلی سے سیکڑوں طلبہ کو پریشانی کا سامنا ہوگا ۔ یہاں یہ بات بھی انتہائی قابل ذکرہے کہ امتحانی سینٹرز کی تبدیلی سے اسکولز کی انتظامیہ اور والدین بھی لاعلم ہیں ۔اس بابت روزنامہ پاکستان نے ناظم امتحانات میٹرک بورڈاخلاق احسان سے متعدد بار رابطہ کرنے کی کوشش کی مگر موصوف سے رابطہ نہ ہوپا ۔اس حوالے سے روزنامہ پاکستان سے گفتگوکرتے ہوئے چیئرمین میٹرک بورڈسعیدالدین نے کہا کہ امتحانی سینٹرزکی تبدیلی معمول کی بات ہے۔بورڈانتظامیہ امتحان دینے والے طلباء وطالبات کی ہر ممکن سہولیات کی فراہمی کیلئے حکمت عملی میں تبدیلی لاتی رہتی ہے۔دوران امتحان بجلی،پانی سمیت تمام تر سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے ایسے اقدامات کئے جاتے ہیں۔مذکورہ سینٹرزکی تبدیلی کے حوالے سے چیئرمین میٹرک بورڈکا کہناتھا کہ ابھی امتحانات شروع ہونے میں کچھ روزباقی ہیں اسی لئے طلباء اور والدین کو کسی قسم کی پریشانی درپیش نہیں ہوگی۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -