گجرات پولیس کھانے کے ساتھ باوچی کے ساڑھے 6 لاکھ ہضم کرگئی

گجرات پولیس کھانے کے ساتھ باوچی کے ساڑھے 6 لاکھ ہضم کرگئی
گجرات پولیس کھانے کے ساتھ باوچی کے ساڑھے 6 لاکھ ہضم کرگئی

  

گجرات (ویب ڈیسک) گجرات پولیس نے مبینہ طور پر پکوائی سنٹر کے محنت کش کو 6 لاکھ 35ہزار کا چونا لگادیا۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

روزنامہ خبریں کے مطابق محمد اکرم سکنہ ماہنہ چوک نے بتایا کہ گجرات پولیس کے اے ایس آئی سجاد، اکاﺅنٹنٹ چوہدری رضوان نے ڈی پی او گجرات کے حکم پر 6جولائی 2016ءکو عاشورہ کے موقع پر ڈیوٹی پر تعینات پولیس ملازمین کے کھانے کے لئے 12 دیگر چکن، 3 دیگ متنجن، 600 نان، 21جولائی 2016ءکو آزاد کشمیر الیکشن کے موقع پر 30 دیگ بریانی، 10 اکتوبر 2016ءکو 58 دیگ بریانی، دس محرم الحرام کے روز 64 دیگ بریانی آرڈر کی اور 9 محرم الحرام رات 2 بجے کے قریب اس وقت کے ڈی پی او گجرات سہیل ظفر چٹھہ میرے پاس آئے اور کھانے کا معیار چیک کیا او رپولیس اہلکاروں کو ہدایت کی کہ یہاں پر اپنی نگرانی میں کھانے کو ڈبوں میں پیک کیا جائے۔ ٹوٹل رقم میں سے چار لاکھ روپے مجھے ادا کئے گئے بقایا 6لاکھ 35 ہزار روپے تاحال مجھے نہیں مل رہے۔

محمد اکرم نے بتایا کہ میں ڈی پی او آفس کے بار بار چکر لگاکر تھک گیا ہوں۔ میں نے دکانداروں سے ادھار سامان لے کر کھانا تیار کرکے پولیس کو دیا اب دکاندار اپنے پیسوں کا مطالبہ کرتے ہیں ، مَیں غریب آدمی ہوں اتنی بڑی رقم کہاں سے ادا کروں۔ ڈی پی او گجرات جہانزیب نذیر خان اس واقعہ کا نوٹس لیں اور مجھے میری رقم اد اکریں تاکہ میں اپنا قرض اتارسکوں۔ ڈی پی او گجرات آفس رابطہ کرنے پر گلشاد نے واقع سے لاعلمی کا اظہار کرتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ ڈی پی او گجرات آفس نے کسی پکوائی سنٹر سے کوئی ادھار کھانا نہیں لیا۔

رپورٹ کے مطابق  اکاﺅنٹنٹ چوہدری رضوان نے سابق ڈی پی او گجرات رائے ضمیر الحق کے دور میں اپنے ساتھی آغا رمیض کے ساتھ مل کر کروڑوں روپے کی کرپشن کی تھی۔ جو تاحال روپوش ہے اور اس کا ساتھی آغا رمیض جس کو پولیس نے کرپشن کیس میں گرفتار کیا تھا وہ ضمانت پر رہا ہوچکا ہے۔ محمد اکرم نے وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف، آئی جی پنجاب اور آر پی او گوجرانوالہ سے اپیل کی ہے، واقعہ کا نوٹس لیتے ہو ئے انصاف فراہم کیا جائے۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -گجرات -