’میرا خاندان مارا گیا، بھاگ رہی تھی کہ ایک وین میں خواتین نے مجھے لفٹ دی، تھوڑی دیر بعد وہ 2 لڑکوں کو میرے پاس لے کر آئیں اور۔۔۔‘ معصوم مسلمان لڑکی کے ساتھ ایسا شرمناک ترین کام کردیا گیا کہ جان کر ہر مسلمان کا دل افسردہ ہوجائے

’میرا خاندان مارا گیا، بھاگ رہی تھی کہ ایک وین میں خواتین نے مجھے لفٹ دی، ...
’میرا خاندان مارا گیا، بھاگ رہی تھی کہ ایک وین میں خواتین نے مجھے لفٹ دی، تھوڑی دیر بعد وہ 2 لڑکوں کو میرے پاس لے کر آئیں اور۔۔۔‘ معصوم مسلمان لڑکی کے ساتھ ایسا شرمناک ترین کام کردیا گیا کہ جان کر ہر مسلمان کا دل افسردہ ہوجائے

  

ڈھاکہ(نیوز ڈیسک) میانمر میں لرزہ خیز مظالم کا نشانہ بننے والے ہزاروں روہنگیا مسلمان سب کچھ لٹانے کے بعد اپنی جان اور عزت بچا کر بنگلادیش کی جانب فرار ہو رہے ہیں لیکن افسوس کہ یہ بدقسمت اس کوشش میں بھی کامیاب نہیں ہو پا رہے۔ ان میں سے اکثر کو راستے میں ہی موت آ لیتی ہے اور جو بنگلا دیش پہنچ جاتے ہیں ان کی کمسن لڑکیوں کی عزت خطرے میں پڑ جاتی ہے۔خواتین اور نوعمر لڑکیوں کی بہت بڑی تعداد تو ایسی ہے جنہیں راستے سے ہی جنسی درندے اچک کر لے جاتے ہیں۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

برطانوی نشریاتی ادارے کی تازہ ترین رپورٹ میں ایک ایسی ہی بدقسمت لڑکی انوارہ کی داستان بیان کی گئی ہے، جس سے بخوبی اندازہ ہو سکتا ہے کہ مظلوم روہنگیا لڑکیاں کس حال میں ہیں۔ اس 14 سالہ لڑکی نے بتایا ”میرے سارے خاندان کو میانمر میں قتل کردیا گیا تھا اور میں بہت سے دیگر افراد کے ساتھ بنگلہ دیش کی جانب بھاگ رہی تھی۔ راستے میں ایک وین میں سوار خواتین نے مجھے اپنے ساتھ بیٹھنے کی پیشکش کی تو میں نے اسے غنیمت جانا، لیکن وہ مجھے پناہ گزین کیمپ کی بجائے بنگلا دیشی شہر کاکسز بازار لے گئیں۔ انہوں نے مجھے ایک کمرے میں بٹھایا اور تھوڑی دیر بعد دو لڑکوں کو میرے پاس لے آئیں۔ وہ لڑکے میری عزت لوٹنے کے لئے میرے اوپر جھپٹے اور جب میں نے مزاحمت کی تو انہوں نے چاقو نکال لیا اور مجھ پر بدترین تشدد کیا۔ا سکے بعد دونوں نے مجھے زیادتی کا نشانہ بنایا۔ یہ میری نئی زندگی کا آغاز تھا۔ اب میں جنسی غلامی کی زندگی گزار رہی ہوں لیکن میرے پاس کوئی اور چارہ بھی نہیں۔ میرا اس دنیا میں کوئی سہارا نہیں اور مجھے معلوم ہے کہ پناہ گزین کیمپوں میں لوگ کسی طرح زندگی گزار رہے ہیں۔ اب یہی زندگی میرا مقدر ہے۔ “

مزید :

ڈیلی بائیٹس -بین الاقوامی -