زرداری کی فضل الرحمان سے ملاقات ، سیاسی صوتحال پر مشاورت ، حکومت کیخلاف تحریک چلانے پر اتفاق

زرداری کی فضل الرحمان سے ملاقات ، سیاسی صوتحال پر مشاورت ، حکومت کیخلاف ...

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک ،صباح نیوز)جمعیت علمائے اسلام (ف) اور پاکستان پیپلز پارٹی کی قیادت کے درمیان حکومت مخالف تحریک چلانے پر اتفاق ہو گیا ہے دینی جماعتوں کے مطابق ملک بھر سے بیس لاکھ سے پچیس لاکھ لوگوں کو اسلام آباد لانے کی تیاری شروع کر دی گئی ہے ان تیاریوں کے حوالے سے پاکستان پیپلز پارٹی نے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے ساتھ سیاسی یکجہتی کا اظہار کیا ہے جے یو آئی (ف) نے اپوزیشن جماعتوں کے خلاف حکومت کے غیر جمہوری اقدامات پر تشویش کا اظہار کیا ہے تفصیلات کے مطابق گزشتہ شب پاکستان پیپلز پارٹی (پارلیمنٹرینز) کے چیئرمین اور سابق صدر آصف علی زرداری نے اسلام آباد میں متحدہ مجلس عمل کے صدر مولانا فضل الرحمن سے ان کی رہائش گاہ پر طویل ملاقات کی جس میں حکومت مخالف سرگرمیوں اور احتجاج سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ آصف علی زرداری نے گزشتہ روز نیب میں پیشی کے موقع پر پولیس کی طرف سے پارٹی کارکنوں پر تشدد اور گرفتاریوں کے خلاف یکجہتی کے اظہار پر مولانا فضل الرحمن کا شکریہ ادا کیا۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں سربراہ جے یو آئی(ف) نے پیپلز پارٹی کے سربراہ بلاول بھٹو زرداری کے حالیہ سخت حکومت مخالف بیانات پر بلاول کی تعریف کی ہے ۔آصف علی زرداری نے کہا کہ میں (مولانا) آپ سے سیاسی یکجہتی کے اظہار کے لیے آیا ہوں۔انتخابی دھاندلی اور دیگر قومی معاملات پر مشترکہ کاذ کے تحت ملکر تحریک چلائی جا سکتی ہے۔ ذرائع نے دعوی کیا ہے کہ آصف علی زرداری اور مولانا فضل الرحمن نے اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ موجودہ حکومت کو جانا چاہیے اپوزیشن جماعتوں کے خلاف اس کی کارروائیاں بڑھ رہی ہیں۔مولانا فضل الرحمن نے آصف علی زرداری کو حکومت کے خلاف احتجاج کے سلسلے میں ممکنہ طور پر اپریل میں اسلام آباد لاک ڈاؤن کی تیاریوں کے بارے میں آگاہ کیا۔ ذرائع کے مطابق دینی جماعتیں اسلام آباد میں ملک بھر سے بیس سے بچیس لاکھ لوگوں کو اسلام آباد لانے کی تیاری کررہی ہے پاکستان پیپلز پارٹی کی قیادت کو اس بارے میں اعتماد میں لیا گیا ہے 31 مارچ کو سرگودھا کے ملین مارچ کے بعد اسلام آباد دھرنا کی تیاری شروع کر دی جائے گی ۔ذرائع کے مطابق اس حوالے سے بڑی اپوزیشن جماعتوں کے قائدین سے مولانا فضل الرحمن کے اپریل کے آغاز میں رابطوں اورمشاورتی اجلاس کا امکان ہے۔سابق صدر آصف زرداری نے مولانا فضل الرحمان سے ملاقات کی جس میں انہوں نے سیاسی صورتحال، نیشنل ایکشن پلان اور حکومت کے پارلیمانی رہنما ؤ ں کے اجلاس سے متعلق مشاورت کی، جمعرات کو ہو نے والی ملاقات میں دونوں رہنما ؤ ں نے حکومت کی کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہار کیا، فضل الرحمان نے پاکستان پیپلزپارٹی کے کارکنوں پر تشدد اور گرفتاریوں کی مذمت کی اور کہا نیب کی کارروائیاں احتساب نہیں بلکہ سیاسی انتقام ہیں، حکومت نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد میں سنجیدہ نہیں ہے،اس موقع پر سابق صدر آصف زرداری نے کہا کہ حکومت عوام کو ریلیف دینے میں مکمل طور پر ناکام ہوگئی، حکومت عوام کو ریلیف دینے کی بجائے اپوزیشن کیخلاف انتقامی کارروائیوں کر رہی ہے۔ مولانا فضل الرحمان نے آصف علی زرداری کو حکومتی اجلاس کے بائیکاٹ کے فیصلے سے آگاہ کیا۔

ملاقات

مزید : صفحہ اول