مواصلات و تعمیرات کی انتظا میہ اور انجینئروں میں قربتیں بڑھنے لگیں ،صوبائی سیکر ٹری پرائیوٹ دعوتیں قبول کرنے لگے

مواصلات و تعمیرات کی انتظا میہ اور انجینئروں میں قربتیں بڑھنے لگیں ،صوبائی ...

لاہور(شہباز اکمل جندران//انویسٹی گیشن سیل) محکمہ مواصلات وتعمیرات کی انتظامیہ اور انجنئیروں کے مابین قربتیں بڑھنے لگیں۔ صوبائی سیکرٹری مواصلات وتعمیرات ،انجنئیروںکی پرائیویٹ دعوتیں قبول کرنے لگے۔ دو چیف انجنئیروں کی دعوت پر مری بھوربن کے فائیوسٹار ہوٹل میں صوبائی سیکرٹری کے ڈنر کو انجنئیروں نے خوش آئند قرار دیا ہے۔معلوم ہواہے کہ صوبائی سیکرٹری مواصلات وتعمیرات پنجاب میاں مشتاق نے چیف انجنئیر ھائی ویز نارتھ پنجاب خالد پرویز اور چیف انجنئیر بلڈنگز نارتھ پنجاب صابر خان سدوزئی کی دعوت پر مری ، بھوربن میں واقع علاقے کے مہنگے ترین فائیو سٹا ر ہوٹل میں ڈنر کیا۔جبکہ غیر ذرائع نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ میاں مشتاق احمد مری میں واقع محکمے کے ریسٹ ھاﺅس(کیمپ آفس ) کی بجائے مذکورہ ہوٹل میں ہی ٹھہرے۔انجنئیر کمیونٹی نے صوبائی سیکرٹری کی طرف سے انجنئیروں کے دعوت نامے کو یوں قبول کرنے پر ان کے مثبت رویے کو سراہا ہے اور اسے خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے انجنئیروں اور انتظامیہ میں قربتیں بڑھیں گی۔ورکنگ ریلیشن شپ بہتر ہوگی۔ اور حکومت کو انجنئیروں کے مسائل کا ادراک ہوگا۔ذرائع کے مطابق صوبائی سیکرٹری مواصلات وتعمیرات مری کی تزئین و آرائش کے حوالے سے مسلم لیگ ن کے رہنما میاں حمزہ شہباز کی سربراہی میں ہونے والے ایک اجلاس میں شرکت کے لیے جمعے کے روز مری گئے تھے۔ جہاں تسلی بخش کام نہ کرنے پر ایکسئین ھائی ویز اعجاز چیمہ کو او ایس ڈی کردیا گیا تھا۔اور اجلاس کے بعد چیف انجنئیر ھائی ویز نارتھ پنجاب خالد پرویز اور چیف انجنئیر بلڈنگز نارتھ پنجاب صابر خان سدوزئی کی دعوت پر مری ، بھوربن میں واقع علاقے کے مہنگے ترین فائیو سٹا ر ہوٹل میں ان کے ہمراہ ڈنر کیا۔ میاں مشتاق احمد محکمے میں اپنی ایمانداری اور دیانتداری کو سب مقدم سمجھتے کے حوالے سے شہرت رکھتے ہیں۔اور انہی اصولوں کی پاسداری بعض اوقات ان کے رویے کو سخت کردیتی تھی۔لیکن وقت کے ساتھ ساتھ انہوںنے اپنے رویے میں نرمی پید اکرتے ہوئے انجنئیروں کے مسائل پر توجہ دینا اور ان کے

 ساتھ دوستی کرنا شروع کردی ہے۔جسے انجنئیر برادری نے خوش آئند قرار دیا ہے۔ لیکن دوسری طرف بعض ایسے انجنئیر بھی ہیں۔ جو ڈنر کے اس واقعے کو تنقیدی نظروں سے دیکھتے ہیں۔ ان کا کہناہے کہ بھوربن میں واقع ہوٹل انتہائی مہنگا ہے۔جہاں ایک وقت کے کھانے پر ہزاروں روپے خرچ ہوئے ہیں۔ اور روپے خرچ کرنے والے یقینی طورپر مختلف معاملات میں صوبائی سیکرٹری سے نرمی کی امید رکھیں گے۔اور میاں مشتاق کو بھی دوسرے انجنئیروں کے مقابلے میں اپنے میزبانوں کے ساتھ نرم رویہ رکھناہوگا۔جو کہ ان کی ساکھ پر سوالیہ نشان ہوگا۔

مزید : صفحہ آخر