طالبان کے ساتھ مذاکرات میں کامیابی نہیں ہوئی:مہتاب عباسی

طالبان کے ساتھ مذاکرات میں کامیابی نہیں ہوئی:مہتاب عباسی
طالبان کے ساتھ مذاکرات میں کامیابی نہیں ہوئی:مہتاب عباسی

  

پشاور(نیوز ڈیسک)سردار مہتاب نے کہا کہ وزیرستان میں کوئی غیر اعلانیہ کاروائی نہیں ہورہی بلکہ آپریشن کا کوئی اعلان کیا ہی نہیں جاتا۔گورنر خیبر پختونخوا کے سردار مہتاب احمد خان نے اس بات کو تسلیم کیا کہ حکومت کو ابھی تک طالبان کے ساتھ جاری مذاکراتی عمل میں کوئی خاص کامیابی حاصل نہیں ہوئی ہے۔پشاور اور مہمند ایجنسی کے صحافیوں کے ایک گروپ کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے گورنر نے کہا کہ عسکریت پسندوں کے ساتھ بات چیت کا عمل انتہائی پیچیدہ ہے جسے حل کرانا اتنا آسان نہیں۔سردار مہتاب احمد خان کا کہنا تھا حکومت نے بڑے خلوص کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ شروع کیا اور اس کیلیے ماحول بنانا پڑا ہے لیکن میرے خیال میں یہ اتنا آسان کام نہیں ، کچھ حقائق ایسے ہیں جنھیں بتایا نہیں جاسکتا جس کی وجہ سے مشکلات پیش آرہی ہیں۔انھوں نے کہا کہ اب تک حکومت اور طالبان کے درمیان ہونے والی بات چیت میں کوئی خاص پیش رفت نہیں ہوسکی ہے تاہم مایوسی گناہ ہے اس عمل میں وقت لگتا ہے۔شمالی وزیرستان میں جاری حالیہ غیر اعلانیہ آپریشن کے حوالے سے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے سردار مہتاب نے کہا کہ وزیرستان میں کوئی غیر اعلانیہ کاروائی نہیں ہورہی بلکہ آپریشن کا کوئی اعلان کیا ہی نہیں جاتا۔گورنر سردار مہتاب احمد خان کا کہنا تھا وزیرستان میں فوج جو کچھ کررہی ہے وہ بالکل ٹھیک کررہی ہے ، فوج کو اپنے کام کا بخوبی پتہ ہے کہ انھیں کیا کرنا ہے اوراس کے نتائج بھی درست نکلتے ہیں اور حکومت کو بھی فوج پر مکمل اعتماد ہے۔انھوں نے کہا کہ اس تاثر میں کوئی حقیقت نہیں کہ طالبان کے ساتھ مذاکرات کے معاملے پر فوج اور حکومت کا موقف الگ الگ ہے۔ ان کے بقول پالیسی فیصلے حکومتیں کرتی ہیں اور تمام اداروں کو اس پر عمل درامد کرنا پڑتا ہے یہ ہر جگہ حکومتوں میں ہوتا ہے۔سردار مہتاب کے مطابق ہماری فوج ہماری لیے لڑ رہی ہے، پوری قوم کیلیے قربانی دے رہی ہے۔

مزید : پشاور