لاہور ہائیکورٹ نے قیدیوں کو کورٹ فیس سے مستثنیٰ قرار دے دیا

لاہور ہائیکورٹ نے قیدیوں کو کورٹ فیس سے مستثنیٰ قرار دے دیا
لاہور ہائیکورٹ نے قیدیوں کو کورٹ فیس سے مستثنیٰ قرار دے دیا

  


لاہور(نامہ نگارخصوصی ) لاہور ہائیکورٹ نے قیدیوں کو کورٹ فیس سے مستثنیٰ قرار دیتے ہوئے قیدی کی جانب سے دائر اپیل پر رجسٹرار آفس کا اعتراض ختم کر دیا۔

حیران ہیں حکومت ادارے کیسے چلا رہی ہے ،انشورنس ٹربیونلز کو فعال کرنے کا حکم دیتے ہوئے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کے ریمارکس

جسٹس محمد قاسم خان نے کیس کی سماعت کی۔درخواست گزار قیدی احسان اللہ کے وکیل چودھری عبدالغفار نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گزار قیدی کا کورٹ مارشل ہوااوراسے فوجی عدالت نے4سال قید کی سزا سنائی جس کوآئینی پٹیشن کے ذریعے اس نے ہائیکورٹ میں چیلنج کر رکھا ہے۔انہوں نے بتایا کہ ہائیکورٹ کے رجسٹرار آفس نے قیدی کی آئینی پٹیشن پر کورٹ فیس عائد نہ کرنے کا اعتراض عائد کیا جو کہ غیر قانونی ہے۔انہوں نے عدالت کو بتایا کہ کورٹ فیس ایکٹ کے سیکشن 19کی ذیلی شق 17کے تحت آئینی پٹیشن کے ذریعے عدلیہ سے رجوع کرنے والے قیدیوں کو کورٹ فیس سے استثنیٰ حاصل ہے۔انہوں نے استدعا کی کہ رجسٹرار آفس کا اعتراض ختم کیا جائے جس پرعدالت نے قیدیوں کو کورٹ فیس سے استثنیٰ قرار دیتے ہوئے قیدی کی جانب سے سزا کے خلاف دائر اپیل پر رجسٹرار آفس کا اعتراض ختم کر دیاہے۔ 

مزید : لاہور