آئی ایم ایف کا پیسہ پہلے رائیونڈ محل پرلگا ،اب عوام پر لگے گا، صمصام بخاری

  آئی ایم ایف کا پیسہ پہلے رائیونڈ محل پرلگا ،اب عوام پر لگے گا، صمصام بخاری

  

لاہور ( فلم رپورٹر،آئی این پی ) وزیر اطلاعات پنجاب صمصام بخاری نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف کا پیسہ پہلے رائے ونڈ محل کی تزئین و آرائش پر لگتا تھا اب عوام پر لگے گا، آ ئی ایم ایف کے پاس جاناپہلے بھی وقت کی ضرورت تھی،آج بھی ہے،اگرکسی نے ڈالرگھرمیں رکھے ہوئے ہیں تووہ مارکیٹ میں لے آئے،پارٹی میں مختلف آرا کا ہونا اچنبھے کی بات نہیں،۔منگل کو وزیر اطلاعات پنجاب صمصام بخاری نے میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ جب میںپیپلزپارٹی میں تھا اس وقت پارٹی پالیسیوں سے اختلاف کرتا تھا،جب پیپلزپارٹی کا دور تھا اس وقت بھی آئی ایم ایف کا پاس جانا ضروری تھا،اگرکسی نے ڈالرگھرمیں رکھے ہوئے ہیں تووہ مارکیٹ میں لے آئے،پاکستانی بنواورپاکستانی چیزوں کوخریدو،یہ نعرہ مجھ سمیت سب لگاتے ہیں لیکن کرتاکوئی نہیں۔دریں اثناءصوبائی وزیر اطلاعات و ثقافت نے اپنے ایک بیان میں کہاہے کہ اپوزیشن مخصوص مقاصد کیلئے ملک میں انارکی پھیلانا چاہتی ہے۔ منی لانڈرنگ پکڑے جانے پر بعض شخصیات سیخ پا ہیں۔مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے درمیان چارٹرآف ڈیموکریسی نہیں چارٹر آف کرپشن ہونے جا رہا ہے۔ بھائی بھائی بننے والوں کا انجام نوشتہ دیوار نظر آ رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ وزیراعظم عمران خان نے خود کھانا ہے نہ کسی کو کھانے دینا ہے۔ ماضی کی حکومت نے ڈالر کو بوگس طریقے سے عارضی طور پر سہارا دیاتھا۔اب اصل صورتحال کھلی ہے تو قوم کو قرضوں کا بے پناہ بوجھ برداشت کرنا پڑ گیا ہے۔مزید برآں وزیر اطلاعات نے الحمرا میں تین روزہ ”خطاطی ورکشاپ“ کا افتتاح کیا۔صوبائی وزیر نے تقریب میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ خطاطی اسلامی ورثہ ہے جس کے تحفظ کے لئے اس پلیٹ فارم پر ٹھوس اقدامات کئے جارہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ خطاطی سیکھنے میں دلچسپی رکھنے والوں کی بڑی تعداد ورکشاپ میں حصہ لیتے دیکھ کر بے حد خوشی ہو رہی ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ حکومت فن خطاطی کے فروغ کے لئے ہر ممکن اقدامات کرئے گی اور اس فن سے وابستہ افراد کے حوصلہ افزائی کی جائے گی۔ایگزیکٹو ڈائریکٹر الحمرااطہر علی خان نے ”خطاطی ورکشاپ“کے انعقاد کے حوالے سے کہا کہ اسلامی خطاطی قدیم فن ہے جس کے ذریعے انسان نے قلم اور رنگ کو سہارا بنا کر اپنے جذبات کی عکاسی کی ہے،ورکشاپ میں نامور خطا ط عرفان احمد خان، عمران سلطان اور شوکت منہاس تربیت فراہم کر رہے ہیں۔واضح رہے یہ ”خطاطی ورکشاپ“تین روز تک جاری رہے گی جس سے 70سے زائد خطاط استفادہ کر یں گے۔خطاطی ورکشاپ تین روز تک جاری رہے گی۔خطاطی سیکھنے میں دلچسپی رکھنے والوں کی بڑی تعداد ورکشاپ میں حصہ لے رہی ہے۔

صمصام بخاری

مزید :

صفحہ اول -