سپریم کورٹ ،سابق ای ٹی او کوئٹہ کی ضمانت منسوخی کی درخواست مسترد

سپریم کورٹ ،سابق ای ٹی او کوئٹہ کی ضمانت منسوخی کی درخواست مسترد
سپریم کورٹ ،سابق ای ٹی او کوئٹہ کی ضمانت منسوخی کی درخواست مسترد

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ آف پاکستان نے سابق ای ٹی او کوئٹہ کی نیب کی جانب سے دائرضمانت منسوخی کی درخواست مستردکردی،عدالت نے ملزم کو 30 ہزار روپے کا جرمانہ ایک ماہ میں اداکرنے کا حکم دیدیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں سابق ای ٹی او کوئٹہ کی ضمانت منسوخی کی درخواست کی سماعت ہوئی ،چیف جسٹس کی سربراہی میں بنچ نے سماعت کی ،الفت نسیم کےخلاف جعلی دستاویزات کے ذریعے نان کسٹم گاڑیوں کی رجسٹریشن کا الزام تھا، ایڈیشنل نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ 258میں سے 5 فائلوں کے جعلی دستاویزات تھے،ملزم نسیم الفت نے 5 گاڑیوں کی بغیرتصدیق کے رجسٹریشن کی،کامران مرتضیٰ وکیل ملزم نے کہا کہ جو گاڑیاں نوازشریف نے دی تھیں وہ بلوچستان تک پہنچ گئی ہیں،ان گاڑیوں کو نوازی گاڑی بھی کہتے ہیں کیونکہ نوازشریف کے دورمیں ملی تھیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ افسران کیلئے احتیاط ضروری ہے، ہم بھی ادھر بیٹھ کر احتیاط کرتے ہیں، رجسٹریشن آفیسر کے بغیر گڑبڑ ہوہی نہیں سکتی، چیف جسٹس نے کہا کہ بلوچستان میں گاڑیوں کا بے انتہا کاروبار ہے،کھلم کھلا گاڑیوں کی منڈیاں لگی ہوئی ہیں، اب شہروں میں تو گاڑیاں رہی ہی نہیں۔عدالت نے ملزم کو 30 ہزار روپے کا جرمانہ ایک ماہ میں اداکرنے کا حکم دیدیا،عدالت نے کہا کہ اگرجرمانہ ادا نہ کیا گیا تو 6 ماہ کی سزادی جائے ۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد