چین سال 2020 میں کیا پالیسیاں اپنائے گا

چین سال 2020 میں کیا پالیسیاں اپنائے گا
چین سال 2020 میں کیا پالیسیاں اپنائے گا

  

چین کے اہم ترین سیاسی سرگرمیاں ان دنوں دارالحکومت بیجنگ میں جاری ہیں۔  عام الفاظ میں انہیں چین کے دو اجلاس کہا جاتا ہے۔ چینی سیاسی مشاورتی کانفرنس کا اجلاس اکیس مئی کو منعقد ہوا جبکہ چین کی قومی عوامی کانگریس کا سالانہ اجلاس آج بیجنگ میں شروع ہوا۔ شی جن پھنگ سمیت چینی کمیونسٹ پارٹی اور ریاستی رہنماؤں نے اجلاس میں شرکت کی۔

اجلاس کے دوران چین کے وزیر اعظم لی کھہ چھیانگ نے چینی حکومت کی گزشتہ سال کی ورکنگ رپورٹ پیش کی ،جس کی اجلاس میں نظر ثانی کی جائے گی ۔اس رپورٹ کے اہم نکات کچھ یوں ہیں۔

2020 کے اہم اہداف

چین اس سال ہر لحاظ سے غربت کے خلاف جنگ جیتنے اور اعتدال پسند خوشحال معاشرے کی تعمیر کو مکمل کرنے کے ترقیاتی اہداف کے حصول کو یقینی بنانے کے لئے کام کرے گا ، اگرچہ 2020 کے لئے کوئی خاص معاشی نمو کا ہدف مقرر نہیں کیا گیا ہے۔

چین اس سال روزگار کو مستحکم کرتے ہوئے   لوگوں کو بنیادی ضروریات زندگی کی فراہمی کو یقینی بنائے گا ، اس مقصد 90 لاکھ سے زیادہ نئی شہری ملازمتوں کے مواقع  پیدا  کئے جائیں گے۔

 چین نے 2020 کے سال کے لئے اپنے صارفین کے افراط زر کا ہدف تقریبا ً 3.5 فیصد مقرر کیا ہے۔

 چین موجودہ سال غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والے تمام دیہی باشندوں میں غربت کے خاتمے کو یقینی بنائے گا۔

اس سال چین کے  جی ڈی پی کے خسارے کا تناسب  3.6 فیصد سے زیادہ رہنے کا امکان ہے۔ یہ تناسب گزشتہ سال کے مقابلے میں 0.8 پرسنٹیج  پوائنٹ زیادہ ہوگا۔ خسارے میں اضافے کا تخمینہ گزشتہ سال  سے  ایک ٹریلین یوآن (تقریبا$ 141.6 بلین ڈالر)  زیادہ لگایا گیا ہے۔

چین زیادہ لچکدار اور موزوں طریقے سے قابل حصول  مالیاتی پالیسی اختیار کرے گا۔

میکرو پالیسیاں

چین اندرون ملک باشندوں کی کھپت کی صلاحیتوں کو بہتر بنانے اور صارفین کی خدمات کے شعبوں کی بحالی اور ترقی میں مدد فراہم کرے گا۔

 چین کا مقصد سال بھر میں کارپوریٹ بوجھ کو 2.5 ٹریلین یوآن (تقریبا$ 353 ارب ڈالر) کم کرنا ہے۔

 چین نجی شعبے کی ترقی کے لئے فعال ماحول کو فروغ دینا جاری رکھے گا اور اس بات کو یقینی بنائے گا کہ نجی کاروباروں کو پیداواری عوامل اور پالیسی تعاون میں یکساں رسائی حاصل ہو۔

نجی اور چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباروں کو واجب الادا ادائیگی کرنے کے لئے سرکاری اداروں کے لئے آخری تاریخ طے کی جائے گی۔

 چین کاروباری کارروائیوں کو مستحکم رکھنے کے لئے مالی اعانت میں اضافہ کرے گا۔ بڑے تجارتی بینکوں کو مائیکرو اور چھوٹے کاروباروں کو شامل مالیاتی قرضوں میں 40 فیصد سے زیادہ اضافہ کرنا چاہئے۔

 چین پورے ملک میں  میں انٹرنیٹ پلس کے اقدامات کو مکمل  اور یکساں طور پر آگے بڑھے گا اور ڈیجیٹل معیشت میں نئی مسابقتی طاقت پیدا کرے گا۔

چین کا کھلا پن

 چین غیر ملکی سرمایہ کاری کے لئے اپنی منفی فہرست کو نمایاں طور پر مختصر کرے گا۔

 چین نے چین- امریکہ تجارتی معاہدے کے پہلے مرحلے کے دوران حاصل کردہ اتفاق رائے پر عمل درآمد کو یقینی بنانے پر زور دیا ہے ۔

 چین بیلٹ اینڈ روڈ کی اعلی معیار کی مشترکہ تعمیر پر توجہ دے گا ، اور باہمی فائدہ مند تعاون کرے گا۔

چین کثیرالجہتی تجارتی نظام کی مضبوطی سے حفاظت کرے گا اور عالمی تجارتی تنظیم کی اصلاحات میں فعال طور پر حصہ لے گا۔

 چین غیر ملکی تجارت کو مزید مستحکم کرے گا اور غیر ملکی سرمائے کے کردار کو فعال طور پر مستحکم کرے گا۔

 چین ملک کے وسطی اور مغربی علاقوں میں نئے پائلٹ فری ٹریڈ زونز (ایف ٹی زیڈز) اور مربوط تجارتی علاقوں کو قائم کرے گا۔

شہریوں کو روزمرہ سہولیات

چین ریٹائرمنٹ اختیار کرنے والوں کی  بنیادی پنشن اور دیہی اور شہری  علاقوں کے غیر نوکری یافتہ بزرگ شہریوں کے لئے کم سے کم بنیادی اولڈ ایج بینیفٹ میں اضافہ کرے گا۔ چین 300 ملین افراد کو  پینشن فنڈ کی ادائیگی کو بروقت یقینی بنائے گا۔

چین "رہائش رہائش کے لئے ہے ، قیاس آرائیوں کے لئے نہیں" کے اس اصول پر قائم رہے گا۔ رئیل اسٹیٹ مارکیٹ کی مستحکم اور صحت مند ترقی کو فروغ دینے کے لئے ہر شہر سے متعلق پالیسیاں نافذ کرے گا۔

چین زرعی  پیداوار کو مستحکم  کرنے کی کوششوں کو تیز کر دے گا۔

 چین جنگلی جانوروں کے غیر قانونی شکار اور تجارت کرنے والوں کو سخت سزا دے گا۔

چین قانون پر مبنی ، سائنسی اور ہدف بنا کر آلودگی کی روک تھام کو ترجیح دے گا ، اور کلیدی علاقوں میں فضائی آلودگی سے لڑنے کی کوششوں کو تیز کرے گا۔

 چین یہ صلاحیت رکھتا ہے وہ ملک کے 1.4 بلین چینی باشندوں کو خوراک کی فراہمی کو یقینی بنائے۔ زرعی پیداوار کو تقویت دینے کے لئے ، ملک اپنے اعلی معیاری قابل کاشت رقبے میں 80 ملین ایم او (5.33 ملین ہیکٹر) کا اضافہ کرے گا۔

تائیوان ، ہانگ کانگ  اور مکاؤ

 چین "تائیوان کی آزادی" کے  نام پر ہر طرح کی  علیحدگی پسندانہ  سرگرمیوں کی پوری مخالفت اور روک تھام کرے گا۔ چین ادارہ جاتی انتظامات ، پالیسیوں اور آبنائے تائیوان کے دونوں کناروں کے تمام مکاتب فکر اورحلقوں کے درمیان  باہمی تعاون کی حوصلہ افزائی کرے گااور آبنائے تائیوان کے دونوں کناروں کی  کےمربوط ترقی کو مزید گہرا کرے گا اور تائیوان  کےہم وطنوں کی فلاح و بہبود کا تحفظ کرے گا۔- چین کی  مرکزی حکومت معیشتوں کی ترقی اور معیار زندگی کو بہتر بنانے میں ملک کے ہانگ کانگ اور مکاؤ خصوصی انتظامی علاقوں کی مدد کرے گی۔

COVID-19 روک تھام پر ، کنٹرول کریں

 چین وبائی مرض سے متعلق بین الاقوامی تعاون کو مستحکم کرنے کے لئے دوسرے ممالک کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لئے تیار ہے۔

 چین کوویڈ 19 کے کنٹرول کے لئے 1 ٹریلین یوآن (تقریبا$ 141 ارب ڈالر) کے سرکاری بانڈ جاری کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

 چین وبائی امراض سے متاثرہ صوبہ ہوبی کی ترقی کے لئے پالیسیوں کا ایک پیکیج نافذ کرے گا۔ یہ پالیسیاں روزگار ، عوام کی فلاح و بہبود اور معمول کے کاموں کو یقینی بنانے میں اور حبیبی میں معاشی اور معاشرتی سرگرمیوں کی مکمل بحالی میں مدد فراہم کریں گی۔

چین کی معیشت نے اس سال کی پہلی سہ ماہی میں منفی نمو کی ، لیکن COVID-19 پر قابو پانے کے لئے یہ "قیمت ادا کرنے کی کوئی حیثیت نہیں" تھی کیونکہ زندگی انمول ہے۔

 چین COVID-19 کی باقاعدگی سے روک تھام اور اس کے کنٹرول میں کوئی کسر نہیں چھوڑے گا ، اور نہ ہی وہ اپنے معاشی اور معاشرتی ترقی کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں کوئی موقع ضائع کرے گا۔

چین COVID-19 کے نتیجے میں ہونے والے نقصانات کو کم کرنے اور اس سال معاشی اور معاشرتی ترقی کے اہداف اور کاموں کی تکمیل کے لئے اپنی کوششوں کو دوگنا کرے گا۔

۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں ۔

۔

اگرآپ بھی ڈیلی پاکستان کیساتھ بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو اپنی تحاریر ای میل ایڈریس ’zubair@dailypakistan.com.pk‘ یا واٹس ایپ "03009194327" پر بھیج دیں۔

مزید :

بلاگ -