ملتان، کرونا کیس بڑھنے پر 6علاقوں میں سمارٹ لاک ڈاؤن

ملتان، کرونا کیس بڑھنے پر 6علاقوں میں سمارٹ لاک ڈاؤن

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر)کیبنٹ کمیٹی برائے کورونا کی سفارشات کے مطابق کورونا کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر ملتان کے06 علاقوں میں سمارٹ لاک ڈان نافذ، لگادیا سیکرٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر سارہ اسلم نے سمارٹ لاک ڈان نوٹیفیکیشن جاری کر دیا،نوٹیفیکیشن 21 مئی سے3 جون تک نافذالعمل رہے گا،نوٹیفیکیشن کے مطابق زیادہ کورونا ٹیسٹ مثبت آنے والوں علاقوں میں سمارٹ لاک ڈان لگایا جا رہا ہے۔ملتان کے علاقے  بلال کالونی گلی نمبر  2  پرانی شجاع آباد روڈ,  خانقاہ  عنایت چوک شہیداں HBL  والی گلی،بابر روڈقصب پورہ، نیو نا ظم آباد،  بوسن روڈ  چونگی نمر 6، ایجوکیشن سٹریٹ,  اورالجنت ہومز گلگشت کالونی سلطان آباد روڈ میں سمارٹ لاک ڈان لگا دیا گیا ہے،لاک ڈان والے علاقوں میں تمام شاپنگ مالز، ریسٹورنٹ، دفاتر (نجی اور سرکاری) بند رہیں گے،علاقہ مکینوں کی نقل و حمل محدود ہو گی،انتہائی ضرورت کے پیش نظر ایک فرد ایک سواری استعمال کر سکے گا،ہر قسم کے اجتماعات(مذہبی، سماجی یا ثقافتی) پر مکمل پابندی ہو گی،تمام میڈیکل سروسز، فارمیسیز، طبی مراکز، ویکسینیشن سینٹر، پیٹرول پمپ،   بیکریاں, کریانہ اور گروسری  سٹور, گوشت اور سبزی کی دوکانیں،تندور،  آٹا چکی، ڈیری شاپس، فوڈڈلیوری اینڈ ای کامرس سروسز، کورئیر اینڈ پوسٹل سروسز،، آٹو ورکشاپس, تیل کے ڈپو,  اور تمام قسم کی منڈیوں  (سبزی، پھل،اناج اور مویشی) کو   ہفتہ کے 7 دن 24 گھنٹے کھلے رکھنے کی اجازت ہو گی،بڑے شاپنگ مالز کے فارمیسی،گروسری اور کریانہ سٹور کھلے رہنے کی اجازت ہو گی،کال سینٹر 50  سٹاف کے ساتھ کام کر سکیں گے،ضروری مذہبی رسومات اور جنازہ میں ایس او پیز کے مطابق شمولیت کی اجازت ہو گی،یوٹیلیٹی کمپنیز،  بجلی گیس کی خدمات, جج, وکیل اور عدالتی عملہ, قانون نافذ کرنے والے ادارے, ضروری خدمات فراہم کرنے والے افراد,  بینکس، میڈیا اور بنیادی سہولیات پہنچانے والے سماجی اور فلاحی ادارے, انٹر نیٹ اور سیلولر کمپنیوں کو کام کرنے کی اجازت ہو گی،سمارٹ لاک ڈان کا مقصد کورونا سے زیادہ متاثر ہونے والے علاقوں سے لوگوں کی آمدورفت کو محدود کرنا ہے،،سیکرٹری صحت پنجاب سارہ اسلم کے مطابق متاثر ہ علاقوں میں سمارٹ لاک ڈان سے ہی کورونا سے زیادہ لوگوں کو متاثر ہونے کے خطرے سے بچا یا جا سکتا ہے، سمارٹ لاک ڈان کا نفاذ اعدادو شمار کے تجزئے  اور ڈپٹی کمشنرز کی مشاورت سے کیا جاتا ہے۔

لاک ڈاؤن

مزید :

صفحہ اول -